Chitral Times

May 21, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

وزیراعلیِ کا زراعت میں جدید فارمنگ ٹیکنالوجی متعارف کروانے اور تحقیق کے شعبے کو جدید عصری تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے کی ہدایت 

Posted on
شیئر کریں:

وزیراعلیِ کا زراعت میں جدید فارمنگ ٹیکنالوجی متعارف کروانے اور تحقیق کے شعبے کو جدید عصری تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے کی ہدایت

پشاور ( چترال ٹائمز رپورٹ ) وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا سردار علی امین خان گنڈاپور کی زیر صدارت محکمہ زراعت کا اہم اجلاس منعقد ہوا جس میں زراعت کے شعبے کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے لئے اہم پالیسی فیصلے کیے گئے۔ وزیر اعلیٰ نے متعلقہ حکام کو کم سے کم پیداواری لاگت میں زیادہ سے زیادہ پیداوار حاصل کرنے کے لئے اقدامات اٹھانے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ اس مقصد کے لئے جدید فارمنگ ٹیکنالوجی متعارف کروائی جائے اور زراعت میں تحقیق کے شعبے کو جدید عصری تقاضوں سے ہم آہنگ کیا جائے۔ وزیر اعلیٰ نے صوبہ بھر میں زرعی زمینوں سے متعلق تفصیلی اعداد و شمار اکھٹا کرنے اور آئندہ سیزن میں محکمہ زراعت کی تمام موزوں سرکاری زمینوں پر زعفران کاشت کرنے کی ہدایت کی ہے اور کہا ہے کہ زعفران کی بہتر پیداوار کے لئے پڑوسی ممالک میں کاشت کی جانے والی زعفران کی فصلوں کا جائزہ لیا جائے۔ انہوں نے مزید ہدایت کی کہ آمدن میں اضافے کے لئے محکمہ زراعت کی زمینوں کا بہتر استعمال یقینی بنایا جائے، ان زرعی زمینوں کو ٹھیکوں پر دینے کی بجائے محکمہ خود کاشت کرے اور موزوں علاقوں میں کسانوں کو زعفران کاشت کرنے کی طرف راغب کیا جائے۔ وزیر اعلیٰ نے ضم اضلاع میں جنگلی زیتون کی گرافٹنگ کا پروگرام شروع کرنے کی بھی ہدایت کی ہے۔

 

وزیر اعلیٰ کا کہنا تھا کہ جن اضلاع میں پانی کی قلت ہے وہاں پر سبزیاں کاشت کرنے کے لئے چھوٹے مصنوعی ڈیمز تعمیر کئے جائیں، ایسے علاقوں میں ڈرپ ایریگیشن سسٹم متعارف کیا جائے اور صوبے کے مختلف ریجنز کے مخصوص موسمی حالات اور استعداد کے مطابق زرعی پیداوار کی کاشت کے لئے الگ الگ پلانز ترتیب دئیے جائیں۔ علاوہ ازیں صوبے میں زرعی اراضی میں اضافے کے لئے قابل عمل منصوبے تیارکئے جائیں۔ وزیر اعلیٰ کا کہنا تھا کہ مہنگائی پر قابو پانے کے لئے زرعی اجناس میں خود کفالت ناگزیر ہے، اس مقصد کے لئے قلیل المدتی اور طویل المدتی پلانز ترتیب دے کر ان پر عملدرآمد کیا جائے۔ علی امین گنڈاپور نے صوبے میں باغبانی کے فروغ پر خصوصی توجہ دینے جبکہ ہر ضلع میں موزوں پھل دار درخت اگانے کے لئے سروے کی ہدایت کی ہے۔ مزید برآں انہوں نے محکمہ زراعت میں ڈونرز کے تعاون سے چلنے والے منصوبوں میں مکمل شفافیت یقینی بنانے،محکمہ زراعت اور دیگر متعلقہ محکموں کے درمیان کوآرڈینیشن کا ایک موثر نظام وضع کرنے اور محکمہ زراعت کے تحت مختلف ونگز قائم کرکے ان کی ذمہ داریوں کا واضح تعین کرنے کی ہدایت کی ہے اور واضح کیا ہے کہ زرعی پیداوار اور آمدن میں اضافے کے لئے منصوبوں پر عملدرآمد کے لیے حکومت درکار فنڈز ترجیحی بنیادوں پر فراہم کرے گی۔ علی امین گنڈاپور نے واضح کیا کہ فوڈ سکیورٹی موجودہ صوبائی حکومت کا ترجیحی شعبہ ہے، اس کے لئے سی آر بی سی سمیت دیگر بڑے منصوبوں پر عملدرآمد کے لیے ٹھوس اقدامات اٹھائے جائیں۔ صوبائی وزیر زراعت محمد سجاد، وزیر اعلی کے پرنسپل سیکرٹری امجد علی خان، سیکرٹری زراعت جاوید مروت اور محکمے کی دیگر اعلی حکام نے اجلاس میں شرکت کی۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, جنرل خبریں
87286