Chitral Times

Jun 14, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

قانون کی حکمرانی، عملدرآمد پر یقین، 18 مارچ کو عدالت پیش ہوں گا، عمران خان

شیئر کریں:

قانون کی حکمرانی، عملدرآمد پر یقین، 18 مارچ کو عدالت پیش ہوں گا، عمران خان

لاہور(چترال ٹایمز رپورٹ) پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ میں قانون کی حکمرانی اور عملدرآمد پر یقین رکھتا ہوں، 18 مارچ کو عدالت میں پیش ہوں گا۔سابق وزیر اعظم نے سینئر اینکرز سے ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ الیکشن کسی صورت 90 دن سے آگے نہیں جانے دیں گے، انتخاب ملتوی کر کے 90 روز سے آگے جانا آئین کی خلاف ورزی ہو گا، انتخابات 90 روز سے آگے گئے تو پھر آئینی تحریک چلائیں گے۔عمران خان نے کہا کہ سپریم کورٹ کا انتخاب بارے فیصلہ نہ ماننا ٹیک اوور کو دعوت دینا ہو گا، میری حکمت عملی اس بات پر ہے کہ یہ سپریم کورٹ کے فیصلے کو مانتے ہیں یا نہیں۔چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ مارچ 2021ء میں اہم شخصیت نے بتایا کہ جنرل باجوہ آپ کو نکالنے کا فیصلہ کر چکے ہیں۔عمران خان نے کہا کہ میری گرفتاری عدالت میں پیش ہونے کیلئے نہیں مجھے مارنے کیلئے ہے، عدالت میں پیش ہونے سے کبھی انکار نہیں کیا، یہ مجھے اس جگہ بلا رہے ہیں جس کے بارے میں مجھے سکیورٹی خدشات ہیں۔انہوں نے کہا کہ پولیس، رینجرز اہلکار میری گرفتاری کے لئے دو بار میرے قریب پہنچے، کوئی شک نہیں کہ گرفتاری کے بعد مجھ پر حراستی تشدد ہو گا۔ملاقات کے دوران سینئر صحافی نے سوال کیا کہ چودھری پرویزالٰہی کدھر ہیں؟ جس پر عمران خان نے انکشاف کیا کہ چودھری پرویز الٰہی کو کرونا ہو گیا ہے۔

کسی سے بھی بات کرنے کیلئے تیار ہوں، عمران خان

لاہور(سی ایم لنکس)پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ میری جماعت قانون کی حکمرانی کے اصول پر قائم کی گئی اور ہم اپنے اس عزم و عہد پر پوری استقامت سے کاربند رہیں گے۔اپنے ٹویٹس میں عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان کی ترقی، مفادات اور جمہوریت کیلئے میں کسی قربانی سے گریز نہیں کروں گا، اس ضمن میں، میں کسی سے بھی بات کرنے کیلئے تیار ہوں اور اس جانب میں ہر قدم اٹھانے کیلئے تیار ہوں۔انہوں نے کہا کہ حقیقی آزادی کے حوالے سے ہمارے نوجوانوں میں موجود تڑپ ہی تو ہے جس کے لیے میں نے ہمیشہ رب العزت سے دعا کی کہ ایک روز میری قوم کو اس سے آشنا کردے، وہ قومیں جن کے نوجوان آزادی کو اپنی زندگیوں سے بالا شمار کرتے ہیں، واقعتاً کارنامے سرانجام دیتی ہیں۔عمران خان نے کہا کہ جب قانون کی حکمرانی ان کے بنیادی حقوق کے تحفظ کا وسیلہ بنتی ہے اور وہ خود کواحساسِ کمتری سے پاک کرلیتے ہیں تو عمومی انسانوں سے کہیں اوپر اٹھ جاتے ہیں جس کی جھلک ہمیں جنابِ اقبال کے تصوّرِ شاہین میں ملتی ہے۔عمران خان کا کہنا تھا کہ ملک میں آئین کی بالادستی اور قانون کی حکمرانی کے حوالے سے نہایت ٹھوس مؤقف اپنانے پر میں سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کا شکرگزار ہوں، ہم آپ کی جانب سے زمان پارک میں حکام کے ہاتھوں طاقت کے بے تحاشا استعمال کی مذمّت کو بھی قدر و تحسین کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔انہوں ں ے مزید کہا کہ آئین اور 90 روز میں انتخابات کے انعقاد کی حمایت اور محاصرے کے ساتھ زمان پارک میں (ریاستی) قوت کے بے جا استعمال کی مذمت میں ایک متفقہ قرارداد منظور کرنے پر میں لاہور ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کا شکر گزار ہوں، ہم سے یکجہتی کے اظہار کے لیے زمان پارک تک پیدل مارچ کرنے والے وکلاء کا بھی میں نہایت مشکور ہوں۔

 

توشہ خانہ کیس،عمران خان کے وارنٹ گرفتاری معطل کرنے کی درخواست مسترد

اسلام آباد(چترال ٹایمز رپورٹ سیشن کورٹ نے توشہ خانہ کیس میں چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کے وارنٹ گرفتاری معطل کرنے کی درخواست مسترد کردی۔تفصیلات کے مطابق:ایڈیشنل سیشن جج ظفر اقبال نے توشہ خانہ کیس میں پی ٹی آئی عمران خان کے وارنٹ گرفتاری معطل کرنے کی درخواست پر محفوظ فیصلہ سنا دیا۔عدالت نے مران خان کے وارنٹ گرفتاری معطل کرنیکی درخواست مسترد کرتے ہویے ناقابل ضمانت وارنٹ برقرار رکھے۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, جنرل خبریںTagged
72618