Chitral Times

Sep 23, 2019

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

  • کاغلشٹ کے اسٹیٹ لینڈ کو گلگت بلتستان کے قابضیں‌سے فوراََ واگزارکرایا جائے..عمائدین اپرچترال

    May 27, 2019 at 6:49 pm

    چترال (نمائندہ چترال ٹائمز) اپر چترال ضلع کے عمائیدین نے کا غ لشٹ میں اسٹیٹ لینڈ پر گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والا ایک خاندان کی غیر قانونی قبضے سے واگزار کرانے اور قابضین کے خلاف سخت کاروائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اپر چترال کے عوام میں اس وجہ سے شدید غصہ اور انتشار پھیل رہا ہے جس سے علاقے میں امن وامان شدید خطرہ لاحق ہوسکتا ہے۔ پیر کے روز چترال پریس کلب میں ایک پر ہجوم پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پی ٹی آئی اپر چترال کے صدر آفتاب ایم طاہرنے ویلج ناظم منہاج الدین، ممبر ضلع کونسل غلام مصطفیٰ ایڈوکیٹ، الطاف گوہر ایڈوکیٹ، نابیک شراکت ایڈوکیٹ، جمشید احمد، کریم پناہ اور دوسروں کی معیت میں ایک پرہجوم پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ضلعی انتظامیہ کی لاپروائی اور لینڈ سیٹلمنٹ کے عملے کے ساتھ ملی بھگت سے گلگت بلتستان کے ایک خاندان سے تعلق رکھنے والے دو افراد کاغ لشٹ کے ایک بڑے حصے پر جعلی دستاویز ات کے ذریعے قبضہ جمانے کے بعد باہمی ساز باز سے اس قبضے کو دائمی بنانے اور قانون کا لبادہ پہنانے کے لئے ایک دوسرے کے خلاف سول مقدمہ بھی دائر کردیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والے یہ غیر قانونی قابضین اس نسبت سے ایک جعلی دستاویز تیار کرکے جوڈیشل کونسل چترال میں محفوظ دستاویز ات میں شامل کرنے کی ایک بھونڈی کوشش کرائی جوکہ ناکام ثابت ہوئی اور آرکائیوز لائبریری پشاور سے منسوب ایک دستاویز بھی پیش کی ہے جوکہ جعلی ثابت ہوئی کیونکہ لائبریری انتظامیہ نے متعلقہ ریکارڈ میں کا غ لشٹ میں زمین سے متعلق اس دستاویز کی عدم دستیابی کے بارے میں لیٹر جاری کردی ہے۔ انہوں نے کہاکہ قابضین نے اس زمین پر غیر قانونی تعمیرات کرنے کے ساتھ ساتھ سادہ لوح اور غریب عوام کو ہاؤسنگ اسکیم کے نام پر یہ غیر قانونی زمین فروخت کرنے میں بھی مصروف ہیں۔ اپر چترال کے عمائیدین نے ضلعی انتظامیہ کی خاموشی پرانتہائی تشویش اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ ضلعی ہیڈکوارٹرز بونی سے چند کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہونے کے باوجود ضلعی انتظامیہ کے افسران کا لاتعلق رہنا مغنی خیز بات ہے جنہیں زمین کو واگزار کرنے کے ساتھ ساتھ جعل سازوں کے خلاف متعلقہ دفعات کے تحت قانونی کاروائی بھی کرنا چاہئے تھا لیکن وہ اب بھی خاموش تماشائی ہیں۔ انہوں نے وزیر اعظم عمران خان، وزیر اعلیٰ محمود خان، ریونیو منسٹر شکیل خان، چیف سیکرٹری اور کمانڈنٹ چترال سکاوٹس سے مطالبہ کیا ہے کہ امن وامان کے بہتر مفاد کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے سرکاری اراضی کے تحفظ، عوام کے حقوق کو بچانے کے لئے جعل ساز قابضین کے خلاف سخت کاروائی کی جائے اور نہ صرف زمین واگزار کیا جائے بلکہ ان کے خلاف جعل سازی کامقدمہ بھی دائر کیاجائے اور لینڈ سیٹلمنٹ میں ان کا ساتھ دینے والے افسران اور اہلکاروں کے خلاف کاروائی کی جائے بصورت دیگر اپر چترال کے عوام اس سلسلے میں آخری حد تک جائیں گے جس کی تمام تر ذمہ داری حکام بالا پر عائدہوگی۔


     

  • error: Content is protected !!