Chitral Times

Jan 30, 2023

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

8ہزارسکولوں،187بی ایچ یوز،4ہزارمساجدشمسی نظام پرمنتقلی کیا جارہاہے..پیڈواجلاس

Posted on
شیئر کریں:

توانائی منصوبوں کے لئے ٹھیکہ داروکنسلٹنٹ کی تقرریوں کے طریقہ کار کومزید شفاف بنانے کی منظوری،پیڈوبورڈ آف ڈائریکٹرزکے اجلاس میں فیصلے
.
پشاور(چترال ٹائمزرپورٹ ) خیبرپختونخواحکومت رواں سال Access to clean energyپروگرام کے تحت شمسی توانائی کے متعدد منصوبے شروع کررہی ہے جن کی تکمیل سے سستی بجلی کی پیداوارکے ساتھ ساتھ لوڈشیڈنگ جیسی لعنت سے چھٹکارہ ملے گابلکہ توانائی کی بچت سے صوبے کومالی فائدہ بھی ہوگا۔توانائی منصوبوں کے لئے ٹھیکہ داراورکنسلٹنٹ کی تقرری کے عمل کومزیدشفاف بنانے کے حوالے سے قائم متعددکمیٹیوں کوضم کرکے تجاویزکوپیڈوبورڈآف ڈائریکٹرزکی حتمی منظوری سے مشروط کردیا گیا۔اس سلسلے میں پیڈوبورڈ آف ڈائریکٹرزکا42واں اجلاس زیرصدارت چیئرمین بورڈنثارمحمدخان منعقدہوا۔

اجلاس میں سیکرٹری توانائی وبرقیات محمدزبیرخان،ایڈیشنل سیکرٹری خزانہ اخترسعید ترک،ایڈیشنل سیکرٹری داخلہ نصراللہ،چیف ایگزیکٹو پیڈو سیکرٹری بورڈانجینئرنعیم خان،صدرسرحدچیمبرآف کامرس مقصودانورپرویز،ڈاکٹرحسن ناصر،مصورشاہ،عبدالصدیق اورارباب خدادادکے علاوہ جنرل منیجرہائیڈل زاہد اخترصابری اورجنرل منیجرسولرتاج محمدنے شرکت کی۔

اجلاس میں پراجیکٹ ڈائریکٹرسولرخرم درانی نے صوبے میں جاری شمسی توانائی کے مختلف منصوبوں پر ہونے والی پیش رفت کے بارے میں آگاہ کیا۔اس موقع پر چیف ایگزیکٹوپیڈوانجینئرنعیم خان نے بورڈ کوبتایا کہ Access to Clean Energyپروگرام کے تحت ایشیائی ترقیاتی بینک کے مالی تعاون سے صوبے کے 25اضلاع میں 4347ملین کی لاگت سے 8ہزارسکولوں اور187بنیادی مراکزصحت BHUsکوشمسی توانائی کے نظام پر منتقل کرنے کامنصوبہ شروع کیا جارہا ہے،اسی طرح صوبے بھر میں 4ہزارمساجد کوبھی شمسی توانائی کے نظام پربھی منتقل کیا جائے گا۔اجلاس میں بتایا گیاکہ موجودہ صوبائی حکومت نے توانائی بچت کے تحت سولرائزیشن ان سول سیکرٹریٹ اورسولرائزیشن ان چیف منسٹرسیکرٹریٹ اینڈسی ایم ہاؤس کوشمسی نظام کے ساتھ منسلک کرنے کے لئے منصوبے شروع کئے جوکہ تکمیل کے آخری مراحل سے گزررہے ہیں۔ ان منصوبوں کی تکمیل سے ایک طرف سرکاری دفاترکوبلاتعطل سستی بجلی میسرآئے گی بلکہ دوسری طرف ان منصوبوں سے پیداہونے والی اضافی بجلی کونیشنل گرڈ میں شامل کرکے پیسکوکوفروخت بھی کیا جائے گی جس سے صوبے کوفائدہ ہونے کے ساتھ ساتھ آمدن میں بھی اضافہ ہوگا۔ اجلاس میں بورڈ ممبران نے منصوبوں کے لئے کنسلٹنٹ اورٹھیکہ دارکی تقرری کے عمل کومزیدشفاف بنانے کے لئے ای بڈنگ وای ٹینڈرنگ کے نظام پرزوردیا اورکمیٹیوں کی تجاویز کو براہ راست بورڈ کی منظوری سے مشروط کرنے کی منظوری دی گئی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


شیئر کریں: