Chitral Times

Jun 12, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

دنیا کے فوجی اخراجات اور عالمی قوتوں کے جنگی جنون میں مسلسل اضافہ – قادر خان یوسف زئی

Posted on
شیئر کریں:

دنیا کے فوجی اخراجات اور عالمی قوتوں کے جنگی جنون میں مسلسل اضافہ – قادر خان یوسف زئی

دنیا میں مسلسل نویں سال عالمی دفاعی اخراجات میں اضافہ ہوا ہے جو 2023 میں مجموعی طور پر 24.43 کھرب ڈالرز تک جا پہنچا۔ 2023 میں عالمی دفاعی اخراجات 6.8 فیصد بڑھے جو کہ 2009 کے بعد سے سال بہ سال اضافے کی مد میں سب سے بڑا اضافہ ہے۔ جو اسٹاک ہوم انٹرنیشنل پیس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ (SIPRI) کی جانب سے ریکارڈ کی گئی اب تک کی بلند ترین سطح ہے۔ یہ اضافہ بنیادی طور پر جاری تنازعات جیسے یوکرین میں جنگ اور مختلف خطوں میں بڑھتی ہوئی کشیدگی کی وجہ سے ہوا، جس کی وجہ سے تمام جغرافیائی علاقوں میں فوجی اخراجات میں اضافہ ہوا، خاص طور پر یورپ، ایشیا، اوشیانا اور مشرق وسطیٰ کے تنازعات جنگی اخراجات میں مسلسل اضافے کا باعث بن رہے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق بھارت 2023 میں دنیا کا چوتھا سب سے بڑا دفاعی خرچ کرنے والا ملک بن کر ابھرا ہے، حیرت انگیز طور پرجس کے کل فوجی اخراجات 83.6 بلین ڈالر تھے، جو 2022 کے مقابلے میں 4.2 فیصد اضافے کی عکاسی کرتا ہے۔ بھارت کا جنگی جنون حیران کن طور خطے میں ہتھیاروں کی دوڑ میں بلا سبب اضافے کا موجب بھی بن رہا ہے جبکہ چین یا پاکستان کی جانب سے کسی جنگی ایڈونچر کا اظہار نہیں کیا گیا تاہم بھارت مسلسل دفاع کے نا م پر روس، امریکہ سمیت اسلحے فروخت کرنے والے ممالک سے مخصوص مفادات کے لئے مہلک ہتھیاروں کا حصول خطے میں تناؤ میں اضافے کا سبب بن رہا ہے۔

 

امریکہ نے، عالمی سطح پر سب سے زیادہ فوجی خرچ کرنے والے ملک کے طور پر، 2023 میں دفاع کے لیے 916 بلین ڈالر مختص کیے، جو کہ نیٹو کے کل فوجی اخراجات کا 68 فیصد ہے۔ امریکی فوجی اخراجات میں 2.3 فیصد اضافے نے عالمی فوجی اخراجات میں مجموعی طور پر اضافے میں اہم کردار ادا کیا۔ یورپی نیٹو کے ارکان نے بھی ایک اہم کردار ادا کیا، ان کے مجموعی اخراجات $1.341 بلین ہیں، جو کہ دنیا کے فوجی اخراجات کا 55% بنتا ہے۔ دفاعی اخراجات کے حوالے سے دنیا کی سمت سے، فوجی اخراجات مسلسل نویں سال بڑھ رہے ہیں۔ یہ رجحان ابھرتے ہوئے جغرافیائی سیاسی منظر نامے اور عالمی سطح پر اقوام کی طرف سے فوجی طاقت کی ترجیحات کی نشاندہی کرتا ہے۔ دفاع میں اہم سرمایہ کاری امن اور سلامتی کے ارد گرد بڑھتے ہوئے خدشات کو اجاگر کرتی ہے، جو ممالک کے اسٹریٹجک نقطہ نظر اور دفاع کے لیے وسائل مختص کرتی ہے۔2023 میں عالمی فوجی اخراجات میں اضافے کو کئی اہم عوامل سے منسوب کیا جا سکتا ہے۔

فوجی اخراجات میں بے مثال اضافہ عالمی سطح پر امن و سلامتی کی بگڑتی ہوئی صورتحال کا براہ راست ردعمل تھا۔ روس اور یوکرین کے درمیان جنگ جیسے جاری تنازعات نے دنیا بھر میں فوجی اخراجات کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کیا۔ روس اور یوکرین کے درمیان تنازع فوجی اخراجات میں اضافے کا ایک اہم عنصر رہا ہے۔ دونوں ممالک نے اپنے فوجی اخراجات میں نمایاں اضافہ کیا، یوکرین کے اخراجات تقریباً 64.8 بلین ڈالر تک پہنچ گئے، جو اس کی جی ڈی پی کے کافی حصے کی نمائندگی کرتا ہے۔ یہ تنازع نہ صرف خطے میں بلکہ عالمی سطح پر دیگر ممالک میں بھی زیادہ فوجی اخراجات کا باعث بنا۔ مشرقی ایشیا اور مشرق وسطیٰ سمیت مختلف خطوں میں تناؤ نے بھی عالمی فوجی اخراجات میں مجموعی طور پر اضافے میں اہم کردار ادا کیا۔ اسرائیل جیسے ممالک نے خطے میں تنازعات اور بڑھتے ہوئے سیکورٹی خدشات کی وجہ سے فوجی اخراجات میں نمایاں اضافہ کیا۔ عالمی سطح پر خطرے کے ادراک میں تبدیلی نے جی ڈی پی کا بڑھتا ہوا حصہ فوجی اخراجات کی طرف موڑ دیا ہے۔ دفاعی اخراجات کے لیے نیٹو کے 2% کے ہدف کو حد کے بجائے ایک بنیادی لائن کے طور پر دیکھا جا رہا ہے، جس سے بہت سے ممالک کو سیکورٹی کے بدلتے ہوئے مناظر کے جواب میں اپنی فوجی صلاحیتوں کو بڑھانے پر آمادہ کیا جا رہا ہے۔

 

سیاسی بیانات اور اقدامات، جیسے کہ نیٹو کے رکن ممالک کے مالیاتی وعدوں پر سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے تبصروں نے بھی فوجی اخراجات کے فیصلوں کو متاثر کیا ہے۔ یہ بیانات سیاسی ہنگامہ آرائی پیدا کر سکتے ہیں اور دفاعی بجٹ کو متاثر کر سکتے ہیں، جیسا کہ پولینڈ، جرمنی اور برطانیہ کے معاملے میں دیکھا گیا، جس نے 2023 میں اپنے فوجی اخراجات میں اضافہ کیا مجموعی طور پر، بڑھتے ہوئے تنازعات، خطرے کے ادراک میں تبدیلی، اور جغرافیائی سیاسی تناؤ کے امتزاج نے دنیا بھر کی قوموں کو فوجی طاقت کو ترجیح دینے پر مجبور کیا ہے، جس کے نتیجے میں 2023 میں عالمی فوجی اخراجات میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔

سال 2023 میں روس کے فوجی اخراجات میں 24 فی صد اضافہ ہو کر اندازاً 109 ارب ڈالر ہو گیا، جو کہ 2014 کے بعد سے 57 فی صد اضافہ ہے، جس سال روس نے کریمیا کا الحاق کیا تھا۔ چین دنیا کا دوسرا سب سے بڑا فوجی خرچ کرنے والا ملک ہے۔ رپورٹ کے مطابق بیجنگ نے 2023 میں فوج کے لیے اندازاً 296 ارب ڈالر مختص کیے، جو 2022 کے مقابلے میں 6.0 فیصد زیادہ ہے۔ یہ چین کے فوجی اخراجات میں سال بہ سال لگاتار 29 واں اضافہ تھا۔ سال 2023 میں مشرق وسطیٰ میں متوقع فوجی اخراجات 9.0 فی صد بڑھ کر 200 ارب ڈالر ہو گئے۔ یہ گزشتہ دہائی میں اس خطے میں سب سے زیادہ سالانہ شرح تھی۔ اسرائیل سعودی عرب کے بعد خطے میں فوجی اخراجات کرنے والا دوسرا سب سے بڑا ملک ہے جس نے 2023 میں اپنے اخراجات 24 فی صد بڑھ کر 27.5 ارب ڈالر تک پہنچ دیا۔

فوجی اخراجات میں اضافہ عالمی معیشت کو مثبت اور منفی دونوں طرح سے متاثر کرتا ہے۔ مثبت پہلو پر، فوجی اخراجات ملازمتیں پیدا کرکے اور نجی شعبے سے سامان اور خدمات کی مانگ کو بڑھا کر معاشی نمو میں حصہ ڈال سکتے ہیں۔ مثال کے طور پر، فوجی اخراجات فعال ڈیوٹی پر مامور اہلکاروں کی مدد کے لیے کافی بنیادی ڈھانچہ تشکیل دیتے ہیں اور دفاع سے متعلق نجی کاروباروں جیسے ہتھیار بنانے والے اور فوجی اڈوں کے قریب کاروبار کی ترقی کا باعث بنتے ہیں مزید برآں، فوجی تحقیق اور ترقی تکنیکی اختراعات کا باعث بن سکتی ہے جن میں سویلین ایپلی کیشنز ہیں، جیسا کہ مائیکرو ویو، انٹرنیٹ اور GPS کی تخلیق میں دیکھا گیا ہے۔ فوجی اخراجات اسٹریٹجک صنعتوں کی ترقی اور تکنیکی ترقی کو بھی فروغ دے سکتے ہیں، جس کے وسیع تر معیشت پر مثبت اثرات مرتب ہو سکتے ہیں منفی پہلو پر، فوجی اخراجات دیگر عوامی خدمات، جیسے تعلیم، صحت کی دیکھ بھال، اور بنیادی ڈھانچے سے وسائل کو ہٹا سکتے ہیں، جو طویل مدتی اقتصادی ترقی پر منفی اثر ڈال سکتے ہیں۔

فوجی اخراجات کی موقع کی قیمت یہ ہے کہ یہ وسائل چھین لیتی ہے جو معیشت کے دوسرے شعبوں میں سرمایہ کاری کی جا سکتی تھی، جو ممکنہ طور پر نجی شعبے سے ملازمتوں کی منتقلی کا باعث بنتی ہے۔مزید برآں، فوجی اخراجات ملک کے قومی قرض میں حصہ ڈال سکتے ہیں، خاص طور پر جب یہ محصولات سے زیادہ ہو، جس سے خسارہ اور سود کے اخراجات میں اضافہ ہوتا ہے۔ اس سے معاشی نمو پر منفی اثر پڑ سکتا ہے اور طویل مدت میں ٹیکس زیادہ ہو سکتا ہے۔ امریکہ اور دیگر دفاعی اتحادیوں جیسے ممالک کے ساتھ بھارت کی اسٹریٹجک شراکت داری نے اس کے دفاعی اخراجات کے انداز کو متاثر کیا ہے۔ ایک بڑھتی ہوئی علاقائی طاقت کے طور پر، بھارت کے فوجی اخراجات علاقائی اور عالمی معاملات میں زیادہ نمایاں کردار خطے میں ہتھیاروں کی دوڑ میں بلا جواز جنونیت اس کی خواہشات کی عکاسی کرتے ہیں۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
88364