Chitral Times

Apr 17, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

نیپرا کا بجلی ٹیرف میں اضافی سرچارج عائد کرنے پر تحفظات کا اظہار

Posted on
شیئر کریں:

نیپرا کا بجلی ٹیرف میں اضافی سرچارج عائد کرنے پر تحفظات کا اظہار

اسلام آباد(چترال ٹائمز رپورٹ )نیپرا نے بجلی ٹیرف میں فی یونٹ 3.82 اضافی سرچارج عائد کرنے پر تحفظات ظاہر کردئیے۔نیپرا میں وفاقی حکومت کی جانب سے بجلی کے ٹیرف میں فی یونٹ 3.82 روپے اضافی سرچارج عائد کرنے کی درخواست کی سماعت ہوئی۔پاورڈویڑن کے حکام نے موقف اختیار کیا کہ پاور ہولڈنگ کمپنی کا قرض 800ارب روپے ہے۔ پہلے سے عائد فی یونٹ 0.43فی یونٹ سرچارج سے بڑی رقم ریکور نہیں ہو رہی اس لیے 3.39یونٹ اضافی سرچارج عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سر چارج کی وصولی مارچ سے جون 2023تک کی جائے گی۔چئیرمین نیپرا نے استفسار کیا کہ حکومت خود سرچارج عائد کر سکتی ہے تو نیپرا کے پاس کیوں آئی ہے۔ جن لوگوں نے بل دیا ہے ان پر 3.39پیسے سر چارج لگ رہا ہے اورجنہوں نے بل نہیں دیا وہ آج بھی مسکرا رہے ہیں۔چئیرمین نیپرا نے مزید کہا کہ نیپرا کو سرچارج پر سنجیدہ تحفظات ہیں۔ڈسکوز نے نہ چوری روکی نہ لاسز صارفین پر ہی بوجھ ڈال رہے ہیں۔کیا نیپرا کے پاس اختیار ہے کہ وہ اس کو مسترد کر دے۔ڈی جی ٹیرف نے کہا کہ نیپرا سے ٹیرف کی منظوری ضروری ہے۔چئیرمین نیپرا کا کہنا تھا کہ اگر اس طرح سے سرچارجز کی اجازت دی تو پاور سیکٹر میں بہتری نہیں آئے گی۔ پھر آسان حل ہے ہر کوئی سرچارج لے آئے گا اور عائد کروا دے گا۔ پہلے سر چارج حکومت نے خود عائد کیا ہے۔ نیپرا آج اس سرچارج کی منظوری نہیں دے رہا۔ پہلے طے ہوگا کیا ہمارے پاس مسترد یا منظوری کا اختیار ہے۔نیپرا نے پاور ہولڈنگ کے سرچارج کی منظوری قانونی رائے سے مشروط کرتے ہوئے کہا کہ پاور ڈویڑن پہلے اس پر قانونی رائے دے پھر منظوری کا فیصلہ ہوگا۔

 

پاکستان کے ڈیفالٹ ہونے سے متعلق افواہیں سراسرغلط ہیں، سٹیٹ بینک کے زرمبادلہ کے ذخائر بڑھ رہے ہیں، وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کا ٹویٹ

اسلام آباد(سی ایم لنکس)وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ پاکستان کے ڈیفالٹ ہونیسیمتعلق افواہیں سراسرغلط ہیں۔ سٹیٹ بینک کے زرمبادلہ کے ذخائر بڑھ رہے ہیں۔جمعرات کو اپنے ٹویٹ میں وزیرخزانہ اسحاق ڈار نے کہا کہ پاکستان مخالف لوگ ملک کے ڈیفالٹ ہونے سے متعلق افواہیں پھیلا رہے ہیں۔وزیرخزانہ نے کہا کہ سٹیٹ بینک کے زرمبادلہ کے ذخائر بڑھ رہے ہیں اور زرمبادلہ کے ذخائر 4 ہفتے پہلے کے مقابلے میں ایک بلین ڈالر زیادہ ہیں، جب کہ غیرملکی کمرشل بینکوں نے سہولیات فراہم کرنا شروع کر دی ہیں۔اسحاق ڈار نے مزید کہا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ ہمارے مذاکرات مکمل ہونے والے ہیں، امید ہے اگلے ہفتے تک آئی ایم ایف کے ساتھ اسٹاف لیول معاہدے پر دستخط ہو جائیں گے، تمام اقتصادی اشاریے آہستہ آہستہ درست سمت میں بڑھ رہے ہیں۔

 


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, جنرل خبریںTagged
72101