Chitral Times

Jun 14, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

عدالتی اصلاحات کی اہمیت اور ضرورت – قادر خان یوسف زئی

Posted on
شیئر کریں:

عدالتی اصلاحات کی اہمیت اور ضرورت – قادر خان یوسف زئی کے قلم سے

عدلیہ کسی بھی جمہوری معاشرے کا ایک اہم ستون ہے، اور اس کا کردار اس بات کو یقینی بنانے کے لئے ضروری ہے کہ انصاف سستا فوری اور غیر جانبدارانہ منصفانہ طور پر فراہم کیا جائے۔ ایسے حالات میں اس امر پر غور کرنا چاہیے کہ عدلیہ کی سا لمیت اور قانون و آئین کی حکمرانی کو برقرار رکھنے کے لئے انصاف کے تقاضے کیا ہونے چاہئیں۔ انصاف کے اہم تقاضوں میں سے ایک غیر جانبداری ہے اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ عدلیہ کو غیر جانبدار ہونا چاہئے اور اس بات کو یقینی بناناہوگا کہ وہ اپنے سامنے پیش کردہ حقائق اور ثبوتوں کی بنیاد پر فیصلے کریں۔ انہیں کسی بھی بیرونی دباؤ سے آزاد ہونا چاہئے، چاہے وہ حکومت کی طرف سے ہو، سیاسی جماعتوں کی طرف سے، یا کسی اور مفاد پرست کی طرف سے۔ اس سے اس امر کو یقینی بنایا جا سکتا ہے کہ ان کے فیصلے منصفانہ ہوں اور تقسیم کا تاثر پیدا نہ ہو۔

انصاف کا ایک اور تقاضا احتساب ہے۔ ریاست کے ایک اہم ستون کی حیثیت سے عدلیہ کو آئین نے اہم اختیارات تفویض کیے ہیں، تاہم ریاست کے دیگر اداروں کی طرح عدلیہ کو بھی لا محدود اختیارات حاصل نہیں، اس لئے آئین کے مطابق انہیں اپنے کاموں کے لئے جوابدہ رہنا چاہئے۔عوام کے لئے اس امر کو یقینی بنانا شامل ہے کہ وہ کسی بھی بدعنوان عمل یا بد انتظامی میں ملوث نہیں، اور یہ کہ وہ قانون اور آئین کے مطابق کام کرتے ہیں۔ شفافیت بھی انصاف کا لازمی تقاضا ہے۔ اس امر کو یقینی بنانا چاہئے کہ فیصلے شفاف ہوں، اور وہ اپنے فیصلوں کے لئے واضح اور قابل فہم استدلال فراہم کریں۔ اس سے فیصلوں کے پیچھے کی منطق کو سمجھنے کا موقع ملتا ہے، اور اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ عدالتی فیصلوں پر اعتماد کیا جا سکے۔ تاریخ میں ایسی کئی مثالیں موجود ہیں جہاں عدلیہ اور حکومت کے فیصلے متنازع ہوئے، جس کی وجہ سے ان کی اپنی ذمہ داریوں کو مؤثر طریقے سے نبھانے کی اہلیت کے بارے میں سوالات اٹھتے رہتے ہیں۔ اس کی کئی مثالیں ہیں، تاریخ نے ثابت بھی کیا کہ نظریہ ضرورت نے آئین کی روح کو جہاں متاثر کیا وہیں آئین کی خود ساختہ تشریحات نے بحرانوں کو بھی جنم دیا۔ متعدد فیصلوں کو بڑے پیمانے پر تنقید کا نشانہ بنایا گیا اور اسے سیاسی محرک قرار دیا گیا۔ عدلیہ کی سا لمیت کو یقینی بنانے اور قانون کی حکمرانی کو برقرار رکھنے کے لئے انصاف کے تقاضے پورے کرنا ضروری ہیں۔ غیر جانبداری، احتساب اور شفافیت وہ تمام اہم پہلو ہیں جنہیں نظام عدل کی شفافیت کے لئے برقرار رکھنا چاہیے۔ تنازعات کے کسی بھی واقعہ کی مکمل تحقیقات اور عدلیہ کی سا لمیت کو برقرار رکھنے کے لئے مناسب اصلاحات کی جانی چاہئے۔ پاکستان میں عدالتی سرگرمی کی بھرپور تاریخ رہی ہے اور انصاف کی منصفانہ اور غیر جانبدارانہ فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے تنازعات سے دوری برقرار رکھنا اہمیت کا حامل ہے۔

پاکستان کی عدلیہ میں صوابدیدی ججوں کے سامنے مقدمات دائر کرنے کی روایت نوآبادیاتی دور سے ملتی ہے جب پاکستان برطانوی ہندوستان کا حصہ تھا۔ برطانوی حکمرانی کے دوران، ہندوستان میں عدالتی نظام نوآبادیاتی طاقت کے مفادات کو پورا کرنے کے لئے ڈیزائن کیا گیا تھا، اور ججوں کے پاس وسیع صوابدیدی اختیارات تھے ججوں کے صوابدیدی اختیارات کو 1898 میں ضابطہ فو جداری متعارف کرانے سے مزید تقویت ملی، جس نے ججوں کو ضمانت دینے اور شواہد کی قبولیت پر فیصلہ کرنے میں اپنی صوابدید کا استعمال کرنے کی اجازت دی۔ یہ صوابدیدی اختیارات سول اور ریونیو عدالتوں میں بھی واضح تھے، جہاں ججوں کو جائیداد کے تنازعات سے لے کر ٹیکس کے معاملات پر فیصلہ کرنے کا اختیار حاصل تھا۔1947 میں قیام پاکستان کے بعد ملک کو برطانوی قانونی نظام ورثے میں ملا جس میں ججوں کے صوابدیدی اختیارات بھی شامل تھے۔ تاہم، عدلیہ میں صوابدیدی اختیارات کے استعمال کو قانونی نظام میں بدعنوانی اور سیاسی اثر و رسوخ کو فروغ دینے کی باعث تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔ عدلیہ میں اصلاحات اور صوابدیدی اختیارات کے استعمال کو کم کرنے کی کوششوں کے باوجود، ملکی قانونی نظام میں صوابدیدی ججوں کے سامنے مقدمات دائر کرنے کی روایت جاری ہے۔ اس کی وجہ سے قانون کے اطلاق میں مستقل مزاجی اور شفافیت کا فقدان ہے اور تعصب کا تاثر پیدا ہوا ہے۔ قانون کی حکمرانی اور آئین کی پاسداری میں عدلیہ اہم کردار ادا کرتی ہے۔

عدالتی نظام کی تاثیر اور کارکردگی کو بہتر بنانے کے لئے بہت سے شعبے ہیں جہاں عدالتی اصلاحات کی ضرورت ہے۔ درپیش سب سے اہم مسائل میں سے ایک مقدمات کا بیک لاگ ہے۔ پاکستان میں عدالتی نظام اپنی سست رفتار کی وجہ سے بد اعتمادی کا شکار ہے، مقدمات کو حل ہونے میں سالوں یا دہائیوں کا وقت لگتا ہے۔ یہ تاخیر عدلیہ کی تاثیر کو کمزور کرتی ہے، کیونکہ اس سے نظام پر عوام کا اعتماد ختم ہو جاتا ہے اور وہ سائلین فوری اور شفاف انصاف سے محروم ہو جاتے ہیں جنہیں اس کی سب سے زیادہ ضرورت ہے۔ مقدمات کے بیک لاگ کو حل کرنے کے لئے کیس مینجمنٹ، کورٹ ایڈمنسٹریشن اور وسائل کی تقسیم کے شعبوں میں اصلاحات کی ضرورت ہے۔ عدالت کے بنیادی ڈھانچے اور ٹیکنالوجی کے شعبے میں بھی اصلاحات کی ضرورت ہے۔ بہت سی عدالتوں میں بیٹھنے، روشنی اور وینٹی لیشن جیسی بنیادی سہولیات کا فقدان ہے۔ مناسب بنیادی ڈھانچے کی کمی ججوں اور وکلاء کے لئے اپنے فرائض کو مؤثر طریقے سے انجام دینا مشکل بنا تی ہے عدالتی نظام میں ٹیکنالوجی کا استعمال محدود ہے، جو نظام کی کارکردگی میں رکاوٹ ہے۔ای فائلنگ اور ویڈیو کانفرنسنگ جیسی جدید ٹیکنالوجی کو نافذ کرنے سے عدالتی عمل کو ہموار بنانے اور کارکردگی کو بہتر بنانے میں مدد مل سکتی ہے۔ قانونی تعلیم اور تربیت کے شعبے میں اصلاحات کی ضرورت ہے۔ تربیت یافتہ عملے اور وکلاء کی کمی ہے اور اس پیشے میں داخل ہونے والے بہت سے لوگوں کے پاس اپنے فرائض کو مؤثر طریقے سے انجام دینے کے لئے ضروری مہارت اور علم کی کمی ہے۔

قانونی تعلیم اور تربیت میں اصلاحات سے اس بات کو یقینی بنانے میں مدد مل سکتی ہے کہ جج اور وکیل اپنے سامنے آنے والے پیچیدہ اور چیلنجنگ مقدمات سے نمٹنے کے لئے بہتر طور پر تیار ہوں۔ عدلیہ ریاست کا ایک اہم ستون ہے دیگر اداروں کی طرح عدالتی نظام کی تاثیر اور استعداد کار کو بہتر بنانے کے لیے یہاں بھی اہم اصلاحات کی ضرورت ہے۔ مقدمات کے بیک لاگ کو حل کرنا، تقرری کے عمل میں اصلاحات، عدالت کے بنیادی ڈھانچے اور ٹیکنالوجی کو بہتر بنانا، اور قانونی تعلیم اور تربیت میں اصلاحات وہ تمام اہم اقدامات ہیں جو عدلیہ کو مضبوط بنانے میں مدد کر سکتے اور اس بات کو یقینی بنا سکتے ہیں کہ عدلیہ ایک آزاد اور موثر ادارہ رہے۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
72028