Chitral Times

فلسفہِ حق و شر – آفتاب علی خان موسی

Posted on

فلسفہِ حق و شر
آفتاب علی خان موسی

مزاجِ سچ میں پنھاں ہے
وہ بات کچھ فرق کا یوں بھی
کہ یکسر کڑوی ہو پھر بھی
یہ شریں جانی جاتی ہے

 

سبھی ہم مان لیں کیا یہ
تضاد پوشیدہ ہے سچ میں
جو جیتے وہ تو ہاروں میں
جو میں ہاروں وہ جیتے ہے

 

غلط پھر جھوٹ ہو کیونکر
یہ ہے تو سچ بھی ممکن ہے
یہ بات تم مان لو ناصیح
یہ سب واسواسِ مطلب ہے

اُٹھانا سیکھ جائے شر
جو بوجھِ مصلیحت کا کھیل
سوال پھر میں یہ پوچھونگا
کہ سچ کو کون پوچھے ہے؟

کیا سچ کی یہ حقیقت ہے
کہ بس پروانہ مرتا ہے؟
یہ بات گر پوچھ لوں تم سے
کیا بتلا پاؤ گے مجھ کو؟

کیوں رقصِ شمع کی خاطر
پھر شب بھر موم جلتا ہے؟

شعور اك نقطہ کب سے ہے
یہ تو وہ بحرِ ازبر ہے؟
وہی جو ڈوبے ہے اس میں
!اُسی کو حق وہ مانے ہے

یہ سچ بھی ہے بہت معصوم
!یہ اپنا کس کو جانے ہے۔۔

Posted in شعر و شاعریTagged
80910

  سُکوتِ لازوال – آفتاب علی خان موسی

Posted on

  سُکوتِ لازوال – آفتاب علی خان موسی

جس نگر بھٹکے ہوئے راہنما بن جائیں
وہاں پے بارِ بدن لینا غنیمت سمجھو

 

دست و پا دو بھی قدم چل پاؤ
سر جھکانے کو ہی نعمت سمجھو

 

جب کبھی پوچھ کے بولو دو لفظ
اُس گھڑی کو بھی فضیلت سمجھو

 

دیکھ لو جب بھی لٹیروں کا ہجوم
پس اُسی جا کو عدالت سمجھو

 

ہوگا اُٹھنے سے کمر میں تکلیف
نوشِ عیرت کو ہی قسمت سمجھو

 

!کہو ہژبرؔ کو دیوانہ! باغی
میرے رونے کو جہالت سمجھو

 

تم نہ سمجھو گے کبھی بات میری
مرگ سقراط کو بھی ایک حماقت سمجھو

 

سوچیں تو اپنی یہ کاوش بے سود
ماں لو یا پھر کیفیت سمجھو

 

وقت کا پییا کب سے نرم ہوا؟
اب اسے میری ملامت سمجھو

 

ہم نے دیکھا ہے یوں بھی ہوتے ہوئے
جیسے پل میں ہی صدی چھپ کے تماشا دیکھے

 

آفتاب علی خان موسی

Posted in شعر و شاعریTagged
80624

عرض شیر ۔ جی۔ کے۔ رضوان 

Posted on

عرض شیر
جی۔ کے۔ رضوان

ہردی متین گویان ران کیہ خبر چنگیر ہسے
انگیتی مہ ہوستہ تاریئے وناگہ توکھیر ہسے

کوڑوسم نیشست بیکو نو بوختوئ کیچہ بوم
نگہ تہ شونین دیتی متین تہ شوریر ہسے

وحشتو گانو موڑار اوانو تے سوری کوم
پھوک روشتی مہ ݰخچہ شیر وناگہ بوغیر ہسے

تہ غیچی اشرو انگوئ اوا تن ہوستین ماژیم
رقیب نگہ درو غیری تہ غیچھان کرݯیر ہسے

اوا دوردانہ پڑاسیم ہس رے تیاری کومان
پیݯی ترازوئ نگہ تن سورو نیمئیر ہسے

تماشہ نو بیکہ پت تن سورو لوڑیلیک گل
پلیکیو بقا کورا شیر ہوساوا کیڑئر ہسے

Posted in شعر و شاعریTagged ,
78051

دنیا اور زندگی – تحریر: اقبا ل حیات اف برغذی

Posted on

دنیا اور زندگی- تحریر: اقبا ل حیات اف برغذی

گندم کی کٹائی کے آیام کی وجہ سے مضمون لکھنے کو فرصت نہ ملی ۔ اس لئے بچپن نادانی اور جوانی مستانی کی کیفیت میں گزرنے کے بعد بڑھاپے کے حدود میں قدم رکھتے ہی زندگی اور دنیا کے بارے میں جو احساسات دل میں پیدا ہوتے ہیں وہ اشعار کے رنگ میں پیش کرتا ہوں۔

 آتے ہوئے آذان تو جاتے ہوئے نماز اس مختصر سے وقت میں آئے چلے گئے
 حشر تک زیر زمین د و روز بالائے زمین جز لحد دنیا میں کچھ تعمیر کی حاجت نہیں
 زندگی ہے علامت مرگ کی ائے غافلو اور کچھ اس خواب کو تعبیر کی حاجت نہیں
 حقیقت حال دنیا کی اگر معلوم ہوجاتی طبیعت محفل عشرت میں بھی مغموم ہوجاتی
 پیام مرگ سے آئے دل تیر اکیوں دم نکلتا ہے مسافر روز جاتے ہیں یہ راستہ خوب چلتا ہے
 عبث اس زندگی پر غافلوں کا فخرکرنا ہے یہ جینا کوئی جینا ہے کہ جس کے ساتھ مرنا ہے
 ایک مرض بن کر مسلط ہے بلائے زندگانی درد ہی سے ہوتی رہتی ہے دوائے زندگانی
 دنیا عجیب مرحلہء بے ثبات ہے ہر ایک ذی حیات کو آخر ممات ہے
 دن ہے تو دن کے بعد بلا شبہ رات ہے جس کو فنا نہیں ہے وہی ایک ذات ہے
 بیٹھی ہے موت تاگ لگائے کمین میں لے جائے گی کھینچ کے آخر زمین میں
 قوی شدیم چہ شد نا توان شدیم چہ شد چینن شدیم چہ شد چنان شدیم چہ شد
 بہ ھیچ گونہ درین گلستان قرار ے نیست تو بہار شدی چہ شد ماخزان شدیم چہ شد
 فانی ہر ایک چیز ہے فانی جہان ہے مقصود اس فنا سے مگر امتحان ہے

Posted in شعر و شاعریTagged
75710

غزل – ثنا اللہ 

Posted on

غزل – ثنا اللہ 

آرمان  دی  کوری  خوشپہ  تو  پوشین  نوباک   بیرائے

تو   یادہ  کیڑی     اشرووان    مژین    نوباک    بیرائے

یقین   کورور.   مہ   نور   اے   رویان  یہ  لو  حقیقت

تن  خوش انسانو کیاوت دی روخچھین نوباک بیرائے

نورعیچھی    دونیان   قہرو   باڑا   تہ  مریکو    تاب

رقیبو    بزمہ   ای   دفعہ    دی   بین   نوباک   بیرائے

کردار    دی  تہ جم ۔۔۔عمل  دی   صالح  کی     اوشونی

منزلو ۔۔۔تے۔۔  مشکل ۔۔   راہا    بہچین    نوباک   بیرائے

آریر   شرستو   کا   کی   ہنون   شیرین   نانو    غون

پھوکئے  یہ  دنیا   کوس موختو لوڑین نو باک بیرائے

دونے   اے   انسان  سخت  زمانو وخت تہ سورا شیر

بوس نفسا نفسی کوست و کیاغ کورین نوباک بیرائے

بے  غم  اسیکہ   غم   متے   ہش    پرائے   ہیہ    دنیا

بے  درد   یہ   دنیو   اچتو   و  تورین  نوباک  بیرائے

عشقو   شرابو    ساقیو ۔۔۔۔۔۔ ہوستار۔۔۔۔ پیکار    اچی

و   جام   ہلہل   کوس   ہوستاری پین  نو  باک بیرائے

نون    کیہ   امید   کی  گنی   تو    منزلوت     بیسان

چکئے   قف   دوغور   تیرا   دی تورین  نوباک  بیرائے

کینو۔۔۔۔۔۔۔ یہ ۔۔۔۔ثنو ۔۔۔۔۔۔۔ہالبیکو  . .ارمان نیکی دنیا

بس۔۔۔۔۔۔۔ تہ ۔۔۔۔افسہ ۔۔۔۔یہ دنیو سر بین نوباک بیرائے۔

Posted in شعر و شاعری, کھوارسیکشن‎Tagged
71874 66058

طرحی کلام – ثناءاللہ ثناٸی تریچ زوندرانگرام

ارزو   ارمان   دی  ہونی   سف  مہ راٸگان  تہ دیہا

کوری   اسیتام    اوا   کوس و  کیہ زیان تہ    دیہا

ای    فقیر ستو   اوا   تان  سورو  کی  لش لڑیمان

متین   وا  کا     کورویان  تہ   ہتے  مہران تہ دیہا

بر     ناحق    مسورا     دی   ظلمو  انتہا     ارینی 

انگار     خیشی    الیتام   اوا   تے  لووان  تہ دیہا

تہ   بچین  ہانی بیتاب چھوچھی یی نیسک برابر

بلینجی  پھار   نزیران یور دی تن شخران تہ دیہا

نسو   دریاہن    شھیلی     موژا  ای   جنتو  منظر

نیسین   واحشتو   عالم  متین   سریران تہ   دیہا

تہ اچہ پھیشنگ بیتی   ایتو  دیاٶ  ژیرعیکو  اواز

کورینین     کارا    دویان  اواز بوٸکران   تہ  دیہا

تو  اہٸی روپھیکو واختہ توتیرو چوڑی بہچونیان

کوڑو  دی تپول کونیان دیتی تان ورازنان تہ دیہا

و  تتے   کیچہ   سریر   پھیک  بتی انگار تو لوڑے 

دیتی    اشپیرا     ثنو    ارینی   دفن  تہ      دیہا

Posted in شعر و شاعری
56462 56162 55907

یہ میرے جوان ۔۔۔۔ ہما حیات

کردار سے گفتار سے سب صاف جھلکتے ہیں
ہمت سے، عظمت سے، یہ میدان بھی لرزتے ہیں

یہ میرے جوان ہیں،انھیں کمزور نہ سمجھو
اہٹ سے ان قدموں کے، ابلیس بھی تڑپتے ہیں

سینہ ہے یہ فولاد کا، انکھیں ہے عقابی
دیتے ہیں رخ اندھی کو، طوفان پلٹتے ہیں

نہ روک سکا ان کو، سردی کی برفباری
گرمائش لہو سے، لوہے بھی پگھلتے ہیں

یہ ان کی بدولت ہے، ہر سو یہ بہاریں ہیں
یہ خودتو بہاروں سے،کچھ دورہی رہتے ہیں

ہمت نہیں ہاریں گے، نہ پیٹھ یہ پھیریں گے
یہ جام شہادت بھی غیرت سے اٹھاتے ہیں

دشمن کو خدا ان کے یورش سے بچاۓ
بازو میں ہے وہ طاقت جھنجھوڑکے رکھتے ہیں

یہ نعرہ تکبیر پڑھتے ہیں جو مل کر تو
واللہ یہ سچ ہے کہ دشمن بڑے ڈرتے ہیں

محفوظ ہے ہماؔ بھی ان شیروں کے ساۓ میں
دیواریں ہیں اس ملک کی، یہ اپ بھی کہتے ہیں

Posted in تازہ ترین, شعر و شاعریTagged
52118

ایک جھلک زندگی کی

کل ایک جھلک زندگی کو دیکھا

وہ راہوں پر کھڑی، گُنگنا رہی تھی

پھر ڈھونڈا اُسے اِدھر اُدھر 

وہ آنکھیں جھپکائے، مُسکرا رہی تھی

اِک عرصے بعد آیا مُجھے قرار

وہ سہلا کر مُجھے، سُلا رہی تھی

ہم دونوں خفا ہیں ایک دوسرے سے 

میں اُسے اور وہ مُجھے، سمجھا رہی تھی

میں نے پوچھ لیا کیوں اتنا درد دیا تُو نے

وہ ہنسی اور بولی، میں زندگی ہوں پگلے!

تُجھے جینا سکھا رہی تھی۔

ڈاکٹر شاکرہ نندنی

Posted in شعر و شاعریTagged , ,
50063

کاش زندگی کوئی کتاب ہوتی


کاش زندگی کوئی کتاب ہوتی

پڑھ  سکتی مستقبل اپنا

 بُن سکتی میٹھا سپنا

کب خوشی ملے گی

کب دل روئے گا

زندگی کا کھیل سمجھ پاتی

کاش زندگی کوئی کتاب ہوتی

پھاڑ سکتی میں ان لمحوں کو

جس نے مجھے رلایا

شامل کرتی وہ صفحے

جنہوں نے مجھے ہنسایا

کتنا کھویا، کتنا پایا

محاسبہ کر پاتی

کاش زندگی کوئی کتاب ہوتی

وقت سے آنکھیں چُرا کر 

پیچھے چلی جاتی

ٹوٹے ہوئے خوابوں کو

آرزوؤں سے دوبارہ سجاتی

ایک لمحے کے لئے

میں پھر سے مسکراتی

کاش زندگی کوئی کتاب ہوتی

ڈاکٹر شاکرہ نندنی

Posted in شعر و شاعریTagged
49886

اُس نے کہا تم ۔۔۔ڈاکٹر شاکرہ نندینی

اُس نے کہا تم ہیرا بن جاؤ

میری خواہش ہے کہ

جب کوئی تمہیں دیکھے

تو تم سے پھوٹتی روشنی دِکھے

جہاں بھی تم کو دیکھوں

ہر طرف رنگ اور روشنی ملے

میں نے اُس کی خواہش کی تکمیل کی

میں ہیرا بن گئی

لیکن وہ بھول گیا

مجھے ہیرے کی چاہ میں
پتھر بنا گیا
Posted in شعر و شاعریTagged ,
49720

نعت ِ رسول اللہ……گل بخشالوی

فلک سے خوشبو بکھر رہی ہے ،زمیں کا چہرہ چمک رہا ہے
سحر نمودار ہورہی ہے ،نقاب رُخ سے سِرک رہا ہے

گلِ ولادت سے ریگ ِصحرا کا ذرہ ذرہ دمک رہا ہے
قلم قصیدہ سُنا رہا ہے ،سُخن کا طائر چہک رہا ہے

بصارتوں کو ملی بصیرت ،نبی کی صورت تمام رحمت
احد کے شفاف آئینے میں،وہ نور احمد دمک رہا ہے

کلی کلی مسکرا رہی ہے ،عرب کا صحرا چمن چمن ہے
وفور ِاُلفت میں نور ِیزداں ،زمیں کی جانب لپک رہا ہے

نفس نفس میں ہے اُس کا نغمہ ،نظر نظر میں ہے اُس کا جلوہ
ہماری آنکھوں کی پُتلیوں میں ،وہ نور بن کر دمک رہا ہے

وہ جان ِہستی اگر نہ ہوتے ،نہ باغ ہوتے،نہ پھول کھلتے
اُسی کی خاطر جہاں بنا ہے ،وہ گل جہاں میں مہک رہا ہے ۔

گل بخشالوی کھاریاں (پاکستان)

Posted in شعر و شاعریTagged
47497

حمد رب جلیل ….. میری بس ایک آرزو چمکے

میری بس ایک آرزو چمکے
تیرا محبو ب روبروچمکے

حمد تیری میں جب گلو چمکے
تیری رحمت بھی چار سُو چمکے

کوئی مشکل نہیں تجھے پانا
آرزو میں جو جستجو چمکے

جب تصور میں تو مہکتا ہے
ذہن میں جیسے گل شبو چمکے

جو تصور میں ہے نبی میرے
جب بھی چمکے وہ ہو بہو چمکے

ہو کر م تیرا تیری مدحت ہو
جان میری مرا لہو چمکے

دل میں ایمان کی حرارت ہو
کیوں نہ پھرمیری آبرو چمکے

تیر ی خوشبو ملے جو کعبے میں
حشر میں گل بھی سُر خرو چمکے

گل بخشالوی
کھاریاں (پاکستان)

Posted in شعر و شاعریTagged
47495

نظم( جنت چھترار) فدامحمد فدا

مہ جنت چھترار تو کیچہ شیلی
نو بونی الیکو تہ سار اویری
سف بوسون بیتی شیر پھار ہیری


عقل دی حیران ہنون بیتی شیر
باغ بہاران ہنون بیتی شیر
مست کورونیان دی گمبوریان ووری


گلستانہ بیکو بو قسمہ دی شینی
نامے نو بویان ہر نامہ دی شینی
کورا گل مرگست کورا چنبیلی


مہ جنت چھترار دی شیکا پرائی
پوشی تے حسنو ارمان چھیکا پرائی
تہ با غا کوسی بونی گدیری


ٹونگ اسپروکہ ہوئے بوئی بوسون ہنون
ہر کارا گدیری وا مجمون ہنون
ارمان کورونی کا ہونی بیری


دُنیو ای جنت بیرائی آیون ہنون
چوڑیکو ہیہ گویان مایون ہنون
مایونو حواز دی برائی سریلی


گونی تہ لوڑیکوتے افار ہنون
کیچہ جام بویان ہیتان سفر ہنون
ارزوان دنیا دی ہیہ بہچیلی


فدائے تہ خوش بیرائی چھترار ہنون
ہر گولو جاری چھیروغوچھار ہنون
خالق دی کورار ہمیشہ مو جاری

Posted in شعر و شاعری, کھوارسیکشن‎Tagged
46945

غزل۔۔۔۔۔ثناءاللہ ثنائی تریچ زوندرانگرام

☜دل رنجورو کا ہُش نو ارینی
زخم ناسورو کا ہُش نو ارینی

☜اوا مستانہ بیکو میخانہ بی
عیچھان سورورو کا ہُش نو ارینی

☜بیکو تہ بچین ای وسوس یہ دنیا
مہ غون مجبورو کا ہُش نو ارینی

☜بوۓ تہ مثال برابر کھیو سم دیکو
جنتو حورو کا ہُش نو ارینی

☜تن نازا ہو تو دی نازان یہ دنیا
تہ ہے غرورو کا ہُش نو ارینی

☜جام ہلہل دی نون کیہ نو سریتاۓ
پیاؤ شور شورو کا ہُش نو ارینی

☜دردوت درمان دی کوس ہوستار نو لیتم
قالپ تھنورو کا ہُش نو ارینی

☜کیہ خطا نو اوشونی ثنائیو
ای بے قصورو کا ہُش نو ارینی

Posted in شعر و شاعری, کھوارسیکشن‎Tagged
45655

کھوارزبانوفی البدیہہ شاعرخوش نادر خان خوشان…تحریر:ثناء اللہ ثنائی تریچ

کھوار    زبانو   فی البدیہہ    شاعر   خوش نادر خان خوشان صاحب  تن مزاحیہ شاعریو واجہین دیتی سفو ہردیہ ای الگ مقام لاکھویان۔۔خوشان صاحب سرزمین تریچو شھیلی دیہہ ڈوک واہچہ 1957ء پیدا بیتی اسور۔خوشان صاحبو پروشٹاری کھوار شاعریو سم تعلق بہچی گیتی شیر۔ تریچو انجمنو بنیادار اچی خوشان صاحب انجمنو  ای فعال ممبر طورا تمام مشاعرہ شرکت کوری کلام رے اسور۔۔

کیاوت کی   انجمن   ترقی کھوار   حلقہ   تریچو    شاعرانان مجموعہ   کلام   ” شنجور اسپرو ” چھاپ باوشتاۓ۔ ہے سلسلہ استاد طارق   صاحبو    حکمو سورا خوشان   صاحبو سم ملاؤ ہوتم۔۔۔۔۔ ۔۔تھ بو امبوخ کلام  خوشان  صاحبو  سار روخچونو دی بیرو   بیرانی    ہورو وجہ   ہیہ کی     خوشان صاحب بعاۓ ای کما سالان اندرینی فالجو بیماریہ       مبتلا اسور۔لیکن کھوارو سم محبت ہانی ذیاد عیچھی گویان   کی بو  امبوخ کلام ودی تحریری    شکلہ    نوبیکو  سم   جوستہ خوشان صاحبوت یاد شینی۔۔خوشان  صاحب  کھوار شاعریو فی البدہہہ  شاعر حیثیتہ    کھوار   بشانو  ،صوفیانہ  کلام، مزاحیہ  نظمہ طبع ازمائی کوری اسور۔

خوشان صاحب انتہائی  درویش صفت   انسان،  تن  شھیلی مزاجو    ،شگفتہ  انداز بیانو و مزاحیہ طرز   گفتگو واجہین دیتی  سفو ہردیہ    ژاغہ    کوری اسور   ۔ ہو ثبوت  ہیہ کی خوشان صاحب تریچو پیچھی جغورا آباد اسور  لیکن ہتو یاد    چیق سلوٹو ہردیہ تریچہ زندہ  شینی۔۔۔

خوشان صاحبو    شاعریہ    نانتاتان    بارا نظم،   نوجوانانتے نصیحت ،   رمضان المبارکو فضیلت ، و ہیغار علاوہ   خوردیشھیلی   موضوعہ   بو امبوخ    کلام شینی۔۔خوشان صاحب انتہائی    قابل    فخر شخصیت ،  اللہ پاک خوشان صاحبوت صحت کاملہ عطا کورار۔و عمرہ برکت پیچھار۔۔۔امین۔۔۔۔ خوشان   صاحبو   کلامن   موژار   ای کما پیسہ خدمتہ پیش شینی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نانتتان   قدرو   کورور  نان تت بو  حقدار   ہنون

نان تتان قدرو نوکوسیان بوکگینیان دامدار ہنون

فالتو   پوزیشن   کی  ارو  بوس الٹا وامدار ہنون

نان   تتان   قدرو   کی  ارو   جنتو   حقدار  ہنون

نان   تتان  قدرو  نو کوری اسپہ خار کوسار ہنون

کوستے   شوروئی   سریران  و  کوستے بہار ہنون

انوسی   مہ   روئتو  دونیان ہمیت مہ دیہار ہنون

ای خور کلامہ شرین نانو صفاتان کوری خوشان صاحب ران کی۔۔۔۔

شیرین نان اورارو پالے ہیس تہ پرورش اریر

نہ تہ چملتوخی پراے نہ کی موخو دش اریر
ہیہ ژاو جوان و کیہ ہوے دنیوتے گردش اریر

تھمامو رویان ہیہ ژاو ایعو سم مخ دش اریر

چیقیا بردۓ تہ اسور جو سال تہ ہو وے اسور

تو ہنون عورتو لو وا عورت تہ شورئے    اسور

تان ای خور نظمہ رمضان المبارک مسو فضیلتان ہموش شھیلی بیان کویان

ہر   ای    مسجد   تلاوتین   وور     بیتی     شیر

کالو   بچین   ختمہ  روپھیک     زور بیتی   شیر
نشہ  کوری  واہلوچھی   کی    کا      پوریتاۓ

پھاۓ    اذان   بوۓ نہ  جماعتہ ہیس توریتاۓ

اللہ     پاکو     دیرو     ہیہ       ژان         اسپہ

مت     پرہیز     کوروسی    رمضان         اسپہ
مایون      باو     چوڑینیان      حافظان   اسپہ

ہردیہ       لاکھوسی      پاک     قرآن       اسپہ
کیہ    دوروت    کی    بیسیان   ہیے مکان اسپہ

ہورو         شھیلیکو     بو     ارمان         اسپہ

Posted in تازہ ترین, شعر و شاعری, کھوارسیکشن‎Tagged
42981

نعت شریف بحضورِ سرورِ کونینﷺ…..سردارعلی

احمد ؑہے محمد ؑبھی  وہی میرا   آقا ہے

افلاک و انجم سے بھی وہ سب سے اعلیٰ ہے۔

محشر میں نہیں کوئی مشکل کوئی گٹھائیں

دل میں اگر ہے  نورِ محمدؑ کا  ضیا ہے۔

جس دل میں محبت ہو  اگر پاک نبیؐ سے

اُس پہ ہمیشہ سائیہ فگن  ربّ کی عطا ہے۔

اظہار مجھ سے کیا ہو میرے دل کی چاہت کی

ہردم میرے آقا میرے دل میں بسا ہے۔

سورج بھی اُس کے حسن و جمال سے ہے مزئین

واللہ کہ دوعالم میں وہی شمس الضحیٰ ہے۔

لولاک کی منزل سے پرے اُس کا ہے مقام

جبریلؑ  اُس کے در میں فقیراور گدا ہے۔

دنیا میں نہیں کوئی  بشر مثلِ محمدؑ

رحمت ہے دو عالم میں وہی نورِ خدا ہے۔

سردارؔ بھی آیا ہے تیرے در میں اِک غلام

مولا تیرا کرم ہے کہ وہ تیرا فدا ہے۔

Posted in تازہ ترین, شعر و شاعریTagged
41853 40705

“آزاد نظم” …… (محمد ثناءاللہ شکیب پرپش اویر)

شب ہجرانہ غمان کوشکی دیتی

پھاتوکتو دار دیتی روپھی چھوچی ہوئی

لوریتم شاخچہ مہ انگار چوکیشیر

نسیم تو سیق دی پراژگیاو انگویان

مشکیکو نہ اوغو غولوٹ غیچی ہائی 

نہ ای بندائی ذات کا بیری نیسائی

انوازو گان وا دی شاریکا تان پرائی

انگارو سیق دی مت شوریکا تان پرائی

ہانیہ فضا ہوئی ووریار مغطر

مایون بلبل گیتی چولیکا پرانی

گمبوری سازا ایتو دیکا پرانی

ہانیہ قاصد ای چت ویریغی نسائی

اوا ریتام کیا تماشا لہ ہیا

قاصد ریتائی تو پیٹک اف دیرو بوئی

ہاتو گوڑو وؤری وا کھوٹ کورویان

Posted in شعر و شاعری, کھوارسیکشن‎Tagged
38165

نعت شریف بحضورِ سرورِ کونینﷺ۔۔۔سردار علی سردار

احمد ؑہے محمد ؑبھی  وہی میرا   آقا ہے

افلاک و انجم سے بھی وہ سب سے اعلیٰ ہے۔

محشر میں نہیں کوئی مشکل کوئی گٹھائیں

دل میں اگر ہے  نورِ محمدؑ کا  ضیا ہے۔

جس دل میں محبت ہو  اگر پاک نبیؐ سے

اُس پہ ہمیشہ سائیہ فگن  ربّ کی عطا ہے۔

اظہار مجھ سے کیا ہو میرے دل کی چاہت کی

ہردم میرے آقا میرے دل میں بسا ہے۔

سورج بھی اُس کے حسن و جمال سے ہے مزئین

واللہ کہ دوعالم میں وہی شمس الضحیٰ ہے۔

لولاک کی منزل سے پرے اُس کا ہے مقام

جبریلؑ  اُس کے در میں فقیراور گدا ہے۔

دنیا میں نہیں کوئی  بشر مثلِ محمدؑ

رحمت ہے دو عالم میں وہی نورِ خدا ہے۔

سردارؔ بھی آیا ہے تیرے در میں اِک غلام

مولا تیرا کرم ہے کہ وہ تیرا فدا ہے۔

21 جون  2020

Posted in شعر و شاعریTagged
36867 36784

گمنام شاعروں کے معروف اشعار …..محمدپرویزبونیری

ادب زندگی کاحسن ہے۔ادب کاکے ذریعے انسان اپنے خیالات، جذبات اوراحساسات کااظہارکرتاہے۔ یہ اظہار نثرمیں بھی ہوسکتاہے اورشعرمیں بھی، مگرخیالات، جذبات اوراحساسات کے لئے اکثراوقات ایک شعر وہ کام کردیتاہے جوکئی صفحات کی نثری عبارت یا طویل تقریرسے ممکن نہیں ہوتا۔ غزل کا شعروحدت خیال کی بناپر دل کی دھڑکن کاساتھ دیتاہے کیونکہ غزل سوزِ دروں کی آنچ میں تل کر تیرنیم کش بنتاہے۔بقول شاعر
غزل سوزِدروں کی آنچ سے لفظوں میں ڈھلتی ہے
فقط رنگینئی حسن بیاں سے کچھ نہیں ہوتا


ایسے اشعار جس میں حسن بیان، تغزل اورالفاظ کی رنگینی بدرجہ اتم موجودہواورجو موقع محل کی مناسب سے اظہارجذبات کے ساتھ ساتھ سامعین کے لئے باعث تاثیرہوں، ادب کی زبان میں ضرب المثل اشعارکہلاتے ہیں۔اکثراوقات پورے شعرکے مقابلہ میں ایک مصرع بھی محفل میں وہ اثرچھوڑدیتاہے کہ سننے والوں کے دل کو کیف اورروح کو سرورعطاہوتاہے۔


مجھے چونکہ اردوادب سے شروع سے شغف رہاہے۔اللہ تعالیٰ کے بے شماراحسانات جوہمیں ودیعت کئے گئے ہیں،میں ایک ادب دوستی ہے اوراس پر مستزاداردوادب کااستادہونے کاشرف بھی ہے۔ اسی وجہ سے اردوادب سے متعلق بہت سے سوالات کے جوابات ڈھونڈنے کے لئے تحقیق کی روش کبھی ترک نہیں کرتے۔آ ج میں کچھ ایسے اشعار کاکھوج لگانے کی کوشش کرتے ہیں جوزبان زردخاص وعام ہیں اورلوگ دوران گفتگو اسکابے دھڑک استعمال کرتے ہیں، مگربہت کم لوگوں کواسکاماخذمعلوم ہوتاہے اوراکثراوقات اردوادب کے طلبا اوراساتذہ ایسے اشعارکے بارے میں نہیں جانتے اورغلط حوالے دیتے ہیں۔آئیں کچھ ایسے اشعارکاسراغ لگالیتے ہیں۔


غافل تجھے کرتاہے یہ گھڑیال منادی
گردوں نے گھڑی عمرکی اک اورگھٹادی


سکول اورکالجوں میں خطابت کے دوران اکثراس شعرکوعلامہ محمداقبال کے ساتھ منسوب کیاجاتاہے اوراسکاپہلامصرع اس طر ح پڑھتے ہیں، جوکہ غلط ہے۔ ” غافل تجھے گھڑیال یہ دیتاہے منادی”۔یہ شعرمحمدقدرت اللہ شوق کاہے، جن کاتعلق رامپور(اترپردیش) سے ہے اورانکاسب سے بڑاکارنامہ تذکرہ شعراالمعرو ف بہ طبقات الشعراء ہے۔مذکورہ بالا شعروقت کی قدروقیمت کے حوالے سے ہے، اس لئے اسکااستعمال بہت زیادہ ہے۔
فانوس بن کے جس کی حفاظت ہواکرے
وہ شمع کیا بجھے جسے روشن خداکرے


یہ شعرشہیرمچھلی شہری کاہے، جس کے متعلق بہت کم لوگوں کوعلم ہوگاکیونکہ شہیرمچھلی شہری کانام کچھ زیادہ معرو ف نہ ہے جبکہ انکا مذکورہ شعرکافی مشہورہواہے۔ بعض لوگ اپنی کم فہمی کی وجہ سے یہ لوگ یہ شعربھی مفت میں اقبال کی جھولی میں ڈال دیتے ہیں۔شہیرمچھلی شہری کااصل نام سیدمحمدنوح ہے،جوکہ 1852ء میں اترپردیش کے مچھلی شہرمیں پیداہوئے تھے۔
چل ساتھ کہ حسرت دل مرحوم سے نکلے
عاشق کاجنازہ ہے ذرادھوم سے نکلے


مذکورہ شعربھی ضرب المثل کی حیثیت اختیارکرچکاہے۔خاص طورپر اس شعرکادوسرامصرع توکافی مشہورہواہے، مگراسکے شاعر کانام شاید کسی کو معلوم ہوابلکہ اکثراوقات ادب کے اساتذہ اورطلباء بھی انکے نام سے مانوس نہیں ہوتے۔یہ شعرفدوی عظیم آبادی کاہے۔
ایک اورشعر ہے،جس کاصرف ایک مصرع ضرب المثل کی حیثیت حاصل کرچکاہے، وہ یہ ہے۔
مرض بڑھتاگیاجوں جوں دواکی


چونکہ اصل شعر اورشاعر کے نام سے عدم ناواقفیت کی بنا پر اکثرلوگ صرف ایک ہی مصرع سے مطلب پوراکرلیتے ہیں،اس لیے کسی نے اصل شعر کو سمجھنے کی زحمت ہی نہیں کی۔ اس شعر کاپہلامصرع بھی مختلف قسم کاہے۔ایک جگہ میں ”مریض عشق پہ رحمت خداکی“ کے ساتھ شعردرج ہے، مگردرست اوراصل شعر، جوکہ مرزاعلی اکبرمضطرف کاہے، ذیل ہے۔
وصال یارسے دوناہواعشق
مرض بڑھتاگیاجوں جوں دواکی


اسی طرح محشربدایونی کاذیل شعراکثراوقات خطابت اوررنگین بیانی کے لئے استعمال ہوتاہے۔
اب ہوائیں ہی کریں گی روشنی کافیصلہ
جس دئے میں جان ہوگی وہ دیارہ جائے گا


بیان میں زورپیداکرنے اورحوصلہ، ہمت اورجذبہ بڑھانے کے لئے یہ شعراکثرتقاریرکے دوران بولاجاتاہے، مگراسکے شاعربھی گوشہ گمنامی میں پڑاہواہے۔محشربدایونی کااصل نام فاروق احمدتھا،جوکہ 1922ء کو بدایون میں پیداہوئے تھے۔ قیام پاکستان کے بعدہندوستان سے ہجرت کرکے پاکستان آئے اور1994ء کو کراچی میں وفات ہوئے۔
کسی کے آتے ہی ساقی کے یہ حواس گئے
شراب سیخ پہ ڈالی کباب شیشے میں


یہ شعر ایک دوست نے بڑے جرات کے ساتھ غالب کے ساتھ منسوب کیا اورساتھ ایک فرضی کہانی بھی سنائی کہ ایک محفل میں ایک نئے شاعرنے شعرکادوسرامصرع پڑھا۔محفل میں اسکی خوب جگ ہنسائی ہوئی، کہ اس دوران غالب نے اٹھ کر کہاکہ یہ شعرکادوسرامصرع ہے اورشعرکاپہلامصرع پڑھا،جس سے اہل محفل نے خوب داددی۔ مگرحقیقت یہ ہے کہ نہ تویہ واقعہ مستند ہے اورنہ کبھی
غالب نے ایساکوئی شعریامصرع کہاہے۔اصل میں یہ شعر وزیرلکھنوی کاہے۔مذکورہ شعرکاپہلامصرع اکثردوست اس طرح پڑھتے ہیں۔ ” کسی کے آتے ہی ساقی کے ایسے ہوش اڑے “۔ جبکہ درست مصرع یہ ہے۔” کسی کے آتے ہی ساقی کے یہ حواس گئے”۔ ریختہ کی ویب سائٹ پر یہ مصرع ” کسی کے آتے ہی ساقی کے ایسے ہوش اڑے ” کے ساتھ یہ شعر میرناظرحسین ناظم کے ساتھ بھی منسوب کیاگیاہے، مگراصل شعر یہی ہے۔(بحوالہ انتخاب سخن صفحہ نمبر221)

Posted in تازہ ترین, شعر و شاعری, مضامینTagged
35603 29258 24087

نظم…….. مجھے کچھ گُر نہیں آتے……. از ظہورالحق دانش

مجھے یہ گُر نہیں آتا
کسی کے کِذبِ عیّاں کو
صداقت کا گماں دے کر
حق میں ناحق بیاں دے کر
گویا اپنا ایماں دے کر
کوٸی مفاد حاصل کروں
غرض و لالچ کے تہِ دم
اصولوں کو بسمل کروں
مجھے یہ گُر نہیں آتا

مجھے یہ گُر نہیں آتا
کہ جو انسان کی تذلیل کو
اپنا شُغل سمجھتا ہے
میں اس کی صف میں بیٹھ جاٶں
اُس کی ڈکار تک کو میں
عظمت کی بانگ گردانوں
مجھے یہ گُر نہیں آتا

مجھے یہ گُر نہیں آتا
کہ جو اوروں کی بُراٸی کو اپنی بڑاٸی جانے
اور جس کی صبحیں اور شامیں
خلق کی تذلیل میں گزریں
ٹیڑھی دلیل میں گزریں
جھوٹی تاویل میں گزریں
اور میں اُس کے لفظ لفظ چن کر
گلے کا ہار بناٶں
نقش و نگار بناٶں
دل کا قرار بناٶں
مجھے یہ گُر نہیں آتا

مجھے یہ گُر نہیں آتا
خلقِ خدا کا حق چھین کر
شکم میں آگ بھر بھر کر
جو خود کو ”کیا“ سمجھتے ہیں
جو مجبوری کی خامشی کو
خلق کی رضا سمجھتے ہیں
جو استحصالِ انسان کو
اپنی ادا سمجھتے ہیں
اور جو فنا کے متاع کو
اپنی بقا سمجھتے ہیں
میں اُن کی گود میں بیٹھ کر
اُن کے شکم کے خدوخال،
اُتار چڑھاٶ ناپ لوں
اخلاق کے گھاٶ ناپ لوں
مجھے یہ گُر نہیں آتا

مجھے یہ گُر نہیں آتا
کہ جو تکذیب کے ٹکڑوں پر
پلا بڑا ہوا ہو اور
نااہلی کے زینے پر
ناز سے چڑھا ہوا ہو اور
میں اُس کی اِن کرتوتوں کو
شادمانی کا پیرہن دیدوں
جھوٹ کی عُریان روحوں کو
تاٸید کے ٹھوس بدن دیدوں
اُس کی رضا حاصل کرکے
خود کو محفوظ گردانوں
اس کا مقروض گردانوں
سودا ضمیر کا کرکے
کچھ قہقہے سمیٹ لوں
تاریک گوشے سمیٹ لوں
مجھے یہ گُر نہیں آتا

مجھے یہ گر نہیں آتا
کہ جو نفرت کے تاجر ہیں
خلق کی تقسیم کے ماہر ہیں
جو روحانیت سے عاری ہیں
انسا نیت سے عاری ہیں
حرص و مفاد کے پجاری ہیں
جو مادیت کے بیوپاری ہیں
اسی واسطے وہ استعمال
دین و مذہب کا کرتے ہیں
حسب نسب کا کرتے ہیں
یا سیاست کا کرتے ہیں
یا سیادت کا کرتے ہیں
میں اُن کا ہمرکاب بنوں
گویا بھوکا زرقاب بنوں
مجھے یہ گُر نہیں آتا

مجھے یہ گُر نہیں آتا
کہ جو خود ساختہ ”نیک لوگ“ ہیں
جو سماج کا اصل روگ ہیں
ہر دم خودبین تقویٰ کی اوٹ سے
دوسروں کو تکتے رہتے ہیں
معیارِ دوغلاپن میں جو
ہمیشہ اٹکتے رہتے ہیں
جنہیں سماج میں جستجو
سیہ کاروں کی رہتی ہے
گنہگاروں کی رہتی ہے
بُراٸی بے نقاب کرکے
ان کی پارساٸی بڑھتی ہے
خیر سے شر کشید کرکے
خلق کو دوزخ رسید کرکے
اُن کا ایمان پھولتا ہے
خُلد کا گمان پھولتا ہے
میں اُن کا دَم ساز بن کر
بربطِ بے آواز بن کر
اُن کی مِدحت گنواٶں
اُسی مدحت کی آڑ میں
خود کو پارسا گردانوں
نیک و رسا گردانوں
مجھے یہ گُر نہیں آتا

مجھے یہ گُر نہیں آتا
کسی کا پالشی بن کر
اور اندھا لالچی بن کر
کردار کو دغدار کرکے
خودی سے تکرار کرکے
گریبان اُس کے ہاتھ دے کر
ہر شر میں اس کا ساتھ دے کر
”گزارا“ کرکے جی لینا
”مدارا“ کرکے جی لینا
مجھے یہ گُر نہیں آتا
مجھے یہ گُر نہیں آتا

Posted in شعر و شاعریTagged
22688

باغِ چترال…………رحیم علی اشرو

محبت کے خزینے نکلتے ہیں لوگوں کے زباں سے
شرافت کی مہک آتی ہے خدا کی یہ گلستاں سے

 

میری یہ وادی باغِ ارم سے کچھ کم تو نہیں ہے
ذرا دیکھ دیدہِ دل سے کہیں صنم تو نہیں ہے

 

شوقِ ریاضت دہقاں کی تقدیر میں ہے
ایماں خواب میں نہیں ایماں تعبیر میں ہے

 

بکریاں مست چر رہے ہیں بیابانوں میں
پرندے یہ گُن گا رہے ہیں خیابانوں میں

 

فلک بھی ہے حیرت میں تماشا میں محو
خدا کے بندے ہیں اور خدا میں محو

 

مئےِ حسنِ قیامت سے لبریز ہے یہ وادی
دہقاں کی طبیعت سے بھی ذرخیز ہے یہ وادی

 

میں اپنے دل سے فدا ہوں خاکِ زمیں پر
یہ میری خدا کیوں نہ ہو عرشِ برین پر

 

یاں گرم چشمہ بھی ہے خدا کا کرشمہ بھی
یہ اِس دنیا میں ہے اُس جنت کا نقشہ بھی

 

شور مچاتا بہتا ہے دریا خموشی سے
بادل جھومتے ہیں فضا میں مدہوشی سے

 

روز نیا رنگ بکھیرتا اس بستی میں ہے
کتنی رفعت بلندی یہ پستی میں ہے

 

راحت بخشتا ہے گل کو شبنم بھی
آنسو گرنے سے مٹتے ہیں غم بھی

 

مایوں کی نغمہ سرائی میں کیا لطف ہے
شاعر کی غزل سرائی میں کیا لطف ہے

 

سر خُم کرتے ہیں کلام کرتے ہیں
شجر بھی جُھک کر سلام کرتے ہیں

 

محبت رگوں میں ہے خوں کی طرح
بادِ صبا پھیرتا ہے مجنوں کی طرح

 

یہ پھولوں کی مہک دے جا رہا ہے
یہ برف کی ٹھنڈک دے جا رہا ہے

 

یہ طبیعت کی شرابی سرور میں ہوتے ہیں
خیالوں کے کرشمے شعور میں ہوتے ہیں

 

یہ سکوں کی کیفیت یہ خموشی بے مثل ہے
یہ جنوں کی حالت یہ بیہوشی بے مثل ہے

 

قلب کی میری یہ نگاہ تیز ہونے لگی ہے
تیری منظر بھی قیامت خیز ہونے لگی ہے

 

تا شیلی قیامت دوست مہ غیچین کی تا لڑیر
چتہ چیمتا بوئے سُست مہ غیچین کی تا لڑیر

 

آسمانہ کھوٹ گیکو مہ سوراستیمتو چھاغ ہوئے
دی وارو بوشیتائے حیم دی کُوروتُو داغ ہوئے

 

تاکا جفت کونی ڈقانن کھوٹوک گانیک کونی
چوقوبیژ بونی کائی گینی پائگانیک کونی

 

جنتو نو کیا ہیہ قصہ دنیائی سنسارو اوشوئے
گلسمبر اشپنجونیاں لو مہ قشقارو اوشوئے

 

طبیب سے پوچھتا ہوں یہ ہنر کس میں ہے
اسے زندہ رہنا ہے خدا برتر کس میں ہے

 

میری قلم تصویر بناتا ہے غرور میں ہے
خدا کا کرشمہ کیا وادیِ طور میں ہے

 

ہردیار ڑوڑیکو بہشٹو ہوس مہ خلاس بویاں
آوا بہشٹی بریتام خور مہ کیا آفس بویاں

 

ستارے حیرت میں ہیں رات کی تاریکی سے
چاند مسکرا رہا ہے منظر کی باریکی سے

 

خموشی سر پھیلا کے صبح تک جاگتی نہیں ہے
مرغ کی بانگ تک نیند مجھے آتی نہیں ہے

 

موتی شبنم کے گرتے ہیں سہانا موسم ہے
فاختے فضا میں ہوتے ہیں سہانا موسم ہے

 

اخوت ہمدردی سادگی اچھی ہے زندگی میں
کسی بھی چیز کی کمی ہے میری بستی میں

 

مہ خیالا محشر چھوئے آنوس مہراں کوم
تا صفاتن مہ سوم الفاظ نکی کھیو بیاں کوم

 

ریشوواں گنی لوٹ چھیترو مہ کیشارو گویاں
گازو تروئی لینجی کوری اوغ کورارو گویاں

 

وطن سلامت رہے میری ارزو کا یہ معراج ہے
وطن سلامت ہے کسی جستجو کا یہ معراج ہے

Posted in شعر و شاعریTagged
22381 22187 22126 22118 22116

ماں ……………دلشاد پری

Posted on

ایک سیاہ اندھیری رات میں اللہ پاک نے ایک مجسمہ بنایا اور اسے فرشتوں کو دیکھایا،فرشتوں نے دیکھا کہ وہ ایک گوشت کا لوتھڑا ہے جس کے ہونٹوں کی جگہ محبت کے آدھ پھول کھلے ہوئے تھے۔جسکی آنکھوں کی جگہ محبت کے دو دیئے روشن تھے۔جس کے ہاتھوں میں محنت و مشقت کی انگنت لکیریں تھی۔جس کے جسم سے شفقت کی خوشبو آرہی تھی۔فرشتوں نے اللہ تبارک سے پوچھا ,,,یااللہ پاک یہ انسان نہی کیونکہ ایسی محبت انسانوں میں نہی،یہ فرشتہ بھی نہی پھر یہ کیا ہے؟اللہ پاک نے ایک نظر اس پہ ڈال کے فرمایا,,,یہ ماں ہے،،،،،

لفظ ماں ہی میں اتنی اپنائیت اور پیارپن ہے جس سے دل چاہتا ہے بار بار بولوں۔ماں ٹھنڈے چھاؤں کی مانند ہے۔جس طرح گرمی میں محنت و شاقہ کرنے کے بعد چند ساعت کے لئے ٹھنڈے چھاؤں کی ضرورت ہوتی ہے اس طرح ماں کے پیارو محبت کو انسان کی ضرورت ہوتی ہے۔چونکہ یہ ہفتہ ماں کے نام سے موسوم ہے تو اس خصوصی ہفتے کی مناسبت سے ایک کھوار( چترالی) غزل اپنی ماں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے سب قارئین کرام کی نظر کرنا چاہونگی۔۔۔۔۔

 

کیچہ ژانگ تا مقام تا ہے شان شیرین نان
جو دنیا ای ہمیش بو نوژان شیرین نان

موخوتے پورو کوئے وا سرمہ غیچھانتے
تا شفقت و نشان ہہ سورباند شیرین نان

سوت سالہ بیکو سوم مہ سکولوت اواؤ
تھے بستو دیتی ہہ کتا بان شیرین نان

اسکولو معاملہ مہ سوم کا شومے سیر
تن مالان بیزیمی پرائے فیزان شیرین نان

درست دنیا تا کوری بو افضل مہ اللہ
تہ چقہ کورا لیم نگہبان شیرین نان

قیامت و انوس تھے سوال مہ سار بوئے
قائی بوئے ہہ انوس تہ میزان شیرین نان

درست دونیو پورونیم تہ چقہ کورا لیم
بہشت و ای کونہ تا مکان شیرین نان

Posted in تازہ ترین, شعر و شاعری, کھوارسیکشن‎Tagged
21698 21620 21205

نظم……..اوا پیی پیی نشہ……محمد علی رحیل آف سین لشٹ

Posted on

مہ دوری نکی چٹائی اوہ پیی پیی نشہ

قالینو نس نہ درائی اوہ پیی پیی نشہ

شاہی لباس مہ سم عبس شاہی طعام مہ حقہ ژار

نسوارو بڑچ مہ مٹھائی اوہ پیی پیی نشہ

نہ دی خاڑانگو ہوشہ گوم نہ دی ورازنی مہ ورازی بوئے

مہ موڑا کھیچ بوئے تولائی اوہ پیی پیی نشہ

کارا ڈاکٹھر کا انجینئر کا ایم این اے،ایم پی اے ہوئے

کا صدر بش کا واجپائی اوہ پیی پیی نشہ

مہ کیہ دورار بیرانہ خائے چھوومال پھووفہ بنیان تان

مہ تتو تتو کمائی اوہ پیی پیی نشہ

بالٹی کلاشو دورا بی گانیکو سم بوتھال ٹارا

پولوس دوسی کوئے پٹائی اوہ پیی پیی نشہ

گوردوغو پائے جاشوم راحیل آڑوک بیرموغ مہ غیچی گوئے

ٹارو پی کھور مہ بینائی اوہ پیی پیی نشہ

Posted in شعر و شاعریTagged
20797 20666 20645

نعت سرور کائنات صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم……….زاہد علی نزاری

Posted on

اللھم صل علی محمد و آل محمد

نعت سرور کائنات صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم

وہ مہر و ماہ دل ہے، وہ دافع باطل ہےخوشبخت ہے وہ، اس کےجودین میں داخل ہے

جس کا خلق قرآن کی تفسیر باطنی ہےمیرا نبی ﷺ وہی ہے، خدائی روشنی ہے

ہے خاندان اس کا ہی نوح کا سفینہ آفاق میں، انفس میں، اللہ کا آئینہ

گوئی کہ خیلی دوراست، دراصل اوقریب استاو افضل البشر است، او عرشی عندلیب است

قانون جس کا اعلی و بہترین جہاں میں کہاں وہ آل و اصحاب نبی ﷺ کے اور کہاں میں

صل علی محمد، نور ہدی محمد ہر مسئلہٗ دین میں، عقدہ کشا محمدنبی ﷺ

مضمر ہے نور یزدان، مولا کی شریعت میں بعد از فنا، بقا بھی ہے اس کی حقیقت میں

کوثر ہے آب جنت، امید ہے بہ محشراز دست پر بہارش، باشد زبان جان تر

اب جاگ، نزاری، کب تک سوتا رہے گا یوں تواندر حریم احمد، شو دور از فسوں تو

 

 

زاہد علی نزاری شوتخار تورکھو
مورخہ ۳۰ مارچ سن ۲۰۱۹

Posted in شعر و شاعریTagged
20492 20277