Chitral Times

Apr 17, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

قراقرم انٹرنیشنل یونیورسٹی میں پرائم منسٹر یوتھ لیپ ٹاپ سکیم کے تحت 660 طلبہ وطالبات میں لیپ ٹاپ تقسیم کردیا گیا۔

Posted on
شیئر کریں:

قراقرم انٹرنیشنل یونیورسٹی میں پرائم منسٹر یوتھ لیپ ٹاپ سکیم کے تحت 660 طلبہ وطالبات میں لیپ ٹاپ تقسیم کردیا گیا۔

کے آئی یو میں پرائم منسٹر یوتھ لیپ ٹاپ سکیم کے تحت طلبہ وطالبات میں لیپ ٹاپ تقسیم کرنے کی شاندار تقریب کا انعقاد،وزیر اعلیٰ،صوبائی وزراء، وائس چانسلر سمیت دیگر زمہ داران کی بھرپور شرکت
گلگت بلتستان میں اعلیٰ تعلیم وتحقیق کے فروغ میں جامعہ قراقرم کا کلیدی کردار رہاہے۔وزیر اعلیٰ گلگت

گلگت ( چترال ٹائمزرپورٹ) قراقرم انٹرنیشنل یونیورسٹی میں وزیر اعظم یوتھ لیپ ٹاپ سکیم کے تحت 660 طلبہ وطالبات میں لیپ ٹاپ تقسیم کیاگیا۔شعبہ تعلقات عامہ کی پریس ریلیز کے مطابق لیپ ٹا پ سکیم جو کہ پرائم منسٹر یوتھ پروگرام کا ایک اہم اقدام ہے۔ جس میں نوجوانوں کو جدید ٹیکنالوجی میں بااختیار بنانے اور تعلیمی مہارت کو فروغ دیناہے۔ تقریب میں 600 قابل طلباء میں لیپ ٹاپ تقسیم کیا گیا۔تقریب کے دوران لیپ ٹاپ حاصل کرنے والے طلبا کی خوشی قابل دید تھی۔لیپ ٹاپ تقسیم کے تقریب سے بطور مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حاجی گلبر خان نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ جدید تقاضوں کے مطابق تعلیم کو آگے لے جانا وقت کی اہم ضرورت ہے۔لیپ ٹاپ سکیم تعلیم کو جدید تقاضوں پر لانے میں معاون ثابت ہوگی۔ہم سمجھتے ہیں کہ نوجوانوں کو جدید ٹیکنالوجی سے بااختیار بنانا پاکستان کے مستقبل میں سرمایہ کاری ہے۔انہوں نے کہاکہ گلگت بلتستان میں اعلیٰ تعلیم وتحقیق کے فروغ میں جامعہ قراقرم نے کلیدی کردار ادا کیاہے۔جسے کسی صورت فراموش نہیں کیاجاسکتاہے۔جامعہ قراقرم ہمارا قومی آثاثہ ہے۔اس کی تعمیر وترقی اور فلاح وبہبود کے لیے ہم سب نے مل کر کام کرناہیں۔انہوں نے مزید کہاکہ جامعہ کے مسائل کا احساس ہے اس لیے صوبائی حکومت نے قراقرم بورڑ کو واپس لانے کے لیے صوبائی کابینہ کے اراکین پہ مشتمل کمیٹی قائم کی ہے۔بہت جلد بورڑ کو واپس لائیں گے۔تاکہ جامعہ کے مالی مسائل حل ہونے سمیت گلگت بلتستان کے عوام کو امتحانات سے متعلق گھر کی دہلیز پر سہولیات میسر آسکے۔انہوں نے کہاکہ جامعہ قراقرم کو اپنے بساط کے مطابق ہرممکن تعاون فراہم کررہے ہیں اور مستقبل میں بھی تعاون کو جاری رکھیں گے۔ان سے قبل افتتاحی کلمات پیش کرتے ہوئے وائس چانسلر ڈاکٹر عطاء اللہ شاہ نے کہاکہ گلگت بلتستان کی صوبائی حکومت نے ہر مشکل وقت میں جامعہ قراقرم کے ساتھ تعاون کیاہے۔جس پر صوبائی حکومت کا جتنا شکریہ ادا کیاجائے کم ہے۔تقریب میں ایچ ای سی کے ریجنل کوارڈنیٹر برائے لیپ ٹاپ سکیم محمد ماجد مصطفی نے اظہار خیال کرتے ہوئے ہائیر ایجوکیشن کی جانب سے ملک عزیز بلخصوص گلگت بلتستان میں اعلیٰ تعلیم کے فروغ کے لیے ایچ ای سی کے چیئرمین کی ترجیحات سے متعلق تفصیلی گفتگو کی اور لیپ ٹاپ حاصل کرنے والے طلبہ وطالبات کو مبارک باد پیش کیا۔لیپ ٹاپ تقسیم کی تقریب میں وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان کے علاوہ وائس چانسلر قراقرم انٹرنیشنل یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر عطاء اللہ شاہ، صوبائی وزیر تعلیم غلام شہزاد آغا،صوبائی وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی ثریا زمان،معاون خصوصی زبیح اللہ،وزیر اعلیٰ کے سیکرٹری ثناء اللہ خان، ایچ ای سی کے ریجنل کوارڈنیٹر برائے لیپ ٹاپ سکیم محمد ماجد مصطفی،یونیورسٹی کے سینئرانتظامی وتدریسی افسران، مختلف اداروں کے زمہ داران،صحافی برادری سمیت لیپ ٹاپ حاصل کرنے والے طلبا موجود تھے۔

chitraltimes kiu gilgit laptop distribution cermony chitraltimes kiu gilgit laptop distribution2 chitraltimes kiu gilgit laptop distribution

chitraltimes kiu gilgit laptop distribution cermony gb

 

 

 

پاکستان ریلوے نے ٹرینوں کو حادثات سے بچانے کا کامیاب تجربہ کرلیا

لاہور(سی ایم لنکس)پاکستان ریلوے کی جانب سے ٹرینوں کو حادثات سے بچاؤ کا کامیاب تجربہ کرلیا گیا۔جدید ترین ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے پاکستان ریلوے نے ٹرینوں کو حادثات سے بچانے کا کامیاب تجربہ کر لیا، جس کے بعد اب ریلوے ٹریک پر کسی انسان سمیت دیگر جانداروں اور مختلف ٹرانسپورٹ کی نشاندہی پہلے ہی ڈرائیور کو انفراریڈ لیزر تھرمل امیجنگ کے ذریعے ہو جائے گی اور ڈرائیور ز بروقت بریک لگا کر ٹرین کو حادثے کا شکار ہونے سے بچا سکے گا۔پاکستان ریلوے کو اکثر ریلوے کراسنگ یا پھاٹک کراس کرتے ہوئے حادثات کا سامنا رہتا ہے، جس سے نہ صرف ریلوے کو کروڑوں روپے کا نقصان ہوتا ہے بلکہ قیمتی انسانی جانوں کا ضیاع بھی ہوتا ہے۔ریلوے انتظامیہ نے یونیورسٹی آف انجینئرنگ ٹیکنالوجی(یو ای ٹی) کی مدد سے ایک ایسی ڈیوائس تیار کی ہے، جو ڈرائیور کو ریلوے ٹریک پر آنے والے انسان، جانور یا کسی بھی قسم کی ٹرانسپورٹس کو شدید دھند یا اندھیرے میں ایک کلو میٹر کی دْوری سے انفرا ریڈ تھرمل امیجنگ ٹیکنالوجی کی مدد سے فوری نشاندہی کرے گی۔ریلوے نے یہ آلات اپنے مختلف ٹرینوں کے انجن کے ساتھ لگا دیے ہیں، جس پر صرف 15 لاکھ کے اخراجات آئے ہیں۔ پاکستان ریلوے نے ملک کے مختلف شہروں میں چلائی جانے والی ٹرینوں میں اس ڈیوائس کو لگا کر تجربات کر لیے، جو کہ کامیاب ثابت ہوئے۔انفرا ریڈ تھرمل ٹیکنالوجی کی کامیابی کے بعد ریلوے انتظامیہ نے تمام ٹرینوں پر مرحلہ وار یہ آلات لگانے کا کام شروع کر دیا ہے۔ رواں مالی سال کے اختتام تک ریلوے اپنی تقریباً تمام ٹرینوں میں اس جدید ٹیکنالوجی کا استعمال شروع کر دے گا۔

 


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, جنرل خبریں, گلگت بلتستانTagged
82813