Chitral Times

Jun 12, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

آنکھوں کی بیماری میں اضافہ – میری بات:روہیل اکبر

Posted on
شیئر کریں:

آنکھوں کی بیماری میں اضافہ – میری بات:روہیل اکبر

سکولوں میں آشوب چشم کی بدولت بچوں کی آنکھوں کی خرابی میں دن بدن اضافہ ہوتا جارہا ہے اورحکومت پنجاب نے تعلیمی اداروں بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے کیونکہ لاہور میں آشوب چشم کی وبا تیزی سے پھیل رہی ہے اور اس وائرل انفیکشن کی وجہ سے روزانہ سینکڑوں مریض سرکاری ہسپتالوں کا رخ کررہے ہیں جن میں طلبہ بھی شامل ہیں آشوب چشم کا شکار، ایک انتہائی متعدی آنکھ کا انفیکشن، بہت زیادہ آنسو کے ساتھ لالی، سوجن اور دردناک آنکھوں کی شکایت کرتا ہے۔ نگران وزیر اعلیٰ پنجاب محسن نقوی نے آنکھوں کی پھیلتی وبا کا فوری نوٹس لیتے ہوئے محکمہ صحت کے حکام اور ماہرین امراض چشم کے ساتھ اہم اجلاس میں چار امور پر فوری عملدرآمد کا فیصلہ کیا جبکہ لوگوں کو غلط ادویات کی فراہمی کا سبب بنے والی جعلساز کمپنیوں اور اور ان کے سپلائرز کو سخت تا دیبی سزاؤں کے لئے متعلقہ افسران کو احکامات دے دئیے گئے ہیں اورنان سٹرلائیذڈ انجکشن کی دستیابی کے ذمہ دار ڈرگ انسپکٹر وں کے خلاف بھی فوری کارروائی کی جارہی ہے۔

eyes girls

وزیر اعلیٰ کے حکم پر امراض چشم کے علاج کے لئے Avastin کے استعمال پر کوالٹی رپورٹ آنے تک دو ہفتے تک پابندی عائد کردی گئی ہے اس انجکشن کی وجہ سے متاثرہ اندھے پن کے شکار افراد کا فری علاج کیاجائے گااور معاملے کی تحقیقات کے لئے اعلیٰ اختیاراتی کمیٹی تشکیل دے دی گئی ہے آشوب چشم کا سرکاری ہسپتالوں میں علاج کی بہترین سہولتیں میسر ہیں آشوب چشم کی علامات آنکھیں سرخ،پانی بہنا،سوجن،چبھن ہیں یہ تب پھیلتا ہے جب آشوب چشم کے مریض سے ملنے والا شخص آنکھوں پر ہاتھ لگاتا ہے آشوب چشم کی سوزش کی وجہ سے گلابی آنکھ کے طور پر جانا جاتا ہے بیکٹیریل، وائرل یا الرجک رد عمل یہ کسی بھی عمر میں ظاہر ہو سکتا ہے اوردنیا بھر میں آشوب چشم کے 75% کیسز کے نتیجے میں 1,2 وائرل آشوب چشم کی طبی خصوصیات میں سرخی کے ساتھ ساتھ خون کی نالیوں کا جلنا، آنکھ کے علاقے سے خارج ہونا یا چھدم جھلیوں کی شمولیت کے ساتھ درد اور فوٹو فوبیا شامل ہیں یہاں تک کہ ترقی یافتہ ممالک میں وائرل آشوب چشم کے نتیجے میں زیادہ لاگت آتی ہے بالغوں کو وائرل آشوب چشم کی نسبت زیادہ کثرت سے بیکٹیریل آشوب چشم ہوتا ہے

 

حالیہ برسوں میں زیادہ تر وائرس جس کے نتیجے میں آشوب چشم کی حالت ہوتی ہے وہ ایڈینو وائرس اور کوویڈ 19 آشوب چشم ہیں۔subepithelial-infiltrates8-10 بیکٹیریل آشوب چشم کی موجودگی ترقی پذیر دنیا میں 4% کے طور پر ہے بہت سے بچوں اور بڑوں میں غیر صحت بخش طرز عمل، ماحولیاتی آمد بیکٹیریل آشوب چشم کی بڑی وجہ ہے گنگا رام ہسپتال میں پروٹوکول آفیسر اشفاق بھٹی کا کہنا ہے کہ اگر احتیاطی تدابیر اختیار نہ کی گئیں تو وائرس کے بڑے پیمانے پر پھیلنے کا خطرہ ہے اور اس وقت وائرس غیر معمولی شرح سے پھیل رہا ہے انفیکشن نہ صرف براہ راست رابطے کے ذریعے بلکہ ہوا اور آپس میں گفتگو کے ذریعے بھی پھیلتا ہے ”یہ وائرس آلودہ سطحوں کو چھونے، متاثرہ افراد سے قریبی رابطے اور یہاں تک کہ بات کرنے کے ذریعے بھی آسانی سے پھیل سکتا ہے اس لیے اپنے آپ کواس بیماری سے محفوظ رکھنے کے لیے کالے چشمے پہننے کی ضرورت ہے اور ساتھ ہی اپنے بستر اور برتنوں کو فوری طور پر الگ کر لیں، اور مزید منتقلی سے بچنے کے لیے انتہائی احتیاط برتیں اچھی حفظان صحت پر عمل کرنے کی فوری ضرورت ہے یہ وائرس مختلف سطحوں پر سات سے 10 دن تک برقرار رہ سکتا ہے جبکہ بعض اوقات تین یا چار ہفتوں تک بھی اگر کوئی مریض اپنی آنکھ کے بال کو چھوتا ہے اور پھر دوسری سطحوں یا افراد سے رابطہ کرتا ہے تو اس میں منتقلی کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے اس لیے ہمیں ایک دوسرے کے ساتھ محتاط رہنے کی ضرورت ہے اور روزمرہ کی زندگی میں استعمال ہونے والی اپنی ذاتی اشیاء کو بھی ذمہ داری کے ساتھ استعمال کرنے کی ضرورت ہے

 

آشوب چشم لاہور سمیت پنجاب بھر میں بڑھ رہا ہے اگرچہ شدید وائرل آشوب چشم کا کوئی کیس رپورٹ نہیں ہوا ہے لیکن اس کی زیادہ متعدی نوعیت کی وجہ سے ممکنہ کیسز کے لیے چوکس رہتے ہوئے روک تھام پر توجہ مرکوز کرنا بہت ضروری ہے یہ گلابی آنکھ کا وائرس وائرل اور بیکٹیریل انفیکشن یا الرجی کی وجہ سے ہو سکتا ہے بیکٹیریل آشوب چشم، جو کہ بالغوں کی نسبت سکول جانے والے بچوں میں زیادہ عام ہے دسمبر سے اپریل تک زیادہ پھیلنے کا خدشہ ہے بیکٹیریل آشوب چشم کی علامات میں آنکھوں میں لالی، لکیریں، سوجن، خارش، یا جلن شامل ہیں بیکٹیریل کیسز میں آنکھ سے پیپ کا اخراج اور پھاڑنا بھی شامل ہو سکتا ہے جس کی وجہ سے پلکیں آپس میں چپک جاتی ہیں بعض صورتوں میں، بیکٹیریل آشوب چشم کان کے انفیکشن کے ساتھ مل سکتا ہے دوسری طرف، وائرل آشوب چشم سردی، فلو، یا سانس کے انفیکشن کی علامات کے ساتھ ظاہر ہو سکتا ہے یہ عام طور پر ایک آنکھ سے شروع ہوتا ہے اور چند دنوں میں دوسری آنکھ میں پھیل جاتا ہے

 

اس کے ساتھ الرجی کی دیگر علامات بھی ہو سکتی ہیں، بشمول ناک، گلے میں خارش، چھینک آنا، اور یہاں تک کہ دمہ،وائرل اور بیکٹیریل آشوب چشم دونوں انتہائی متعدی اور آسانی سے پھیلنے والے ہیں اچھی حفظان صحت انفیکشن اور اس کے پھیلاؤ کے خطرے کو نمایاں طور پر کم کر سکتی ہے اس لیے شہری اپنے ہاتھوں کو صابن اور گرم پانی سے کم از کم 20 سیکنڈ تک اچھی طرح دھوئیں اور ہینڈ سینیٹائزر کا استعمال کریں متاثرہ افراد کو آئی ڈراپس لگانے کے فوراً بعد ہاتھ دھونا بہت ضروری ہے مریض کو صحت یاب ہونے میں ایک سے دو ہفتے لگ سکتے ہیں آشوب چشم کارنیا پر نشان چھوڑتا ہے جس کے ٹھیک ہونے میں زیادہ وقت لگ سکتا ہے یہ جراثیم بہت گرم اور بہت سرد موسم میں زندہ نہیں رہ سکتے اور انتہائی مرطوب حالات میں پروان چڑھتے ہیں ماہرین امراض چشم نے آنکھوں کی انتہائی متعدی بیماری کے پھیلاؤ کو موسمی حالات سے جوڑ دیا جس سے ایسا لگتا ہے کہ ہوا کے معیار ہاتھوں کی ناقص صفائی، ہجوم ہاؤسنگ سسٹم اور گنجان آباد شہر میں گندے حالات ہیں انتہائی متعدی بیماری نے نوجوان بالغوں اور بچوں کو زیادہ متاثر کیا ہے شاید اس کی وجہ آپس کے سماجی تعلقات ہیں اور وہ ہاتھوں کی صفائی بہتر انداز میں نہیں کرپاتے اس مرض کو کنٹرول کرنے میں پنجاب حکومت سکولوں کو چھٹیاں دینے پر غور کررہی ہے امید ہے اس طرح بچوں میں یہ مرض پھیلنے سے رک سکے گا۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
79577