Chitral Times

May 27, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

لخت حسنین اور پی آئی اے – میری بات:روہیل اکبر

Posted on
شیئر کریں:

لخت حسنین اور پی آئی اے – میری بات:روہیل اکبر

ملک بھر میں بجلی چوروں کے خلاف آپریشن جاری ہے تو ساتھ ہی حکومت نے ٹیکس چوروں کے خلاف بھی بڑے آپریشن کا فیصلہ کرلیا ہے پہلے مرحلے میں لاہور اور کراچی سمیت بڑے شہروں کے 11ہزار افراد کی فہرست تیار کی گئی ہے جس میں صنعتکار، ملز مالکان، تاجر، پراپرٹی ڈیلرز اور دیگر شامل ہیں ویسے آپس کی بات ہے حکومت کا ہاتھ ہمیشہ غریب اور مزدور طبقے کی گردن پر ہی رہا ہے پاکستان میں بڑے بڑے چور اور مافیاز ہمیشہ حکومتی سہولیات کے مزے لیتے رہے ان میں سے کچھ حکومت میں بھی رہے اور کچھ حکومت سے باہر خاص کر پی ڈی ایم کی حکومت نے تو قرض لیکر ان پیسوں کی بندر بانٹ کے ساتھ ساتھ اپنے کیس بھی ختم کروا لیے اور پھر کوئی لندن نکل گیا تو کوئی دبئی چلا گیا مشترکہ مفادات کی حکومت کے خاتمہ کے بعد اب بہت سے اسکینڈلز بھی منظر عام پر آنا شروع ہوچکے ہیں جاتے جاتے انہوں نے پی آئی اے کا جو حشربھی کراچی اسٹیل مل جیسا کردیا ہے

 

انہی کی سرپرستی میں غیر قانونی ایرانی تیل کے کاروبار میں 29سیاستدان بھی ملوث نکلے اور سب سے خطرناک بات یہ ہے کہ ایرانی تیل کی اسمگلنگ سے ہونے والی آمدنی دہشت گرد بھی استعمال کرتے ہیں حساس ادارے کی رپورٹ کے مطابق جو نگران وزیر اعظم کو بھی فراہم کردی گئی ہے میں انکشاف کیا گیا ہے کہ ایرانی تیل کی اسمگلنگ میں 90سرکاری اہلکارورں اور 29سیاستدانوں شامل ہیں ایران سے پاکستان کو سالانہ 2ارب 81کروڑ لیٹر سے زیادہ تیل اسمگل ہوتا ہے جس سے ملک کو سالانہ 60ارب روپے سے زیادہ نقصان ہورہا ہے جبکہپاکستان میں 722کرنسی ڈیلر حوالہ ہنڈی کے کاروبارمیں ملوث ہیں سب سے زیادہ 205ڈیلر پنجاب، خیبرپختونخوا میں 183، سندھ میں 176، بلوچستان میں 104، آزاد کشمیر میں 37اور اسلام آباد میں 17ڈیلرز حوالہ ہنڈی کا کاروبار کر رہے ہیں سول حساس ادارے نے اپنی ذمہ داری پوری کرتے ہوئے ایرانی تیل کی اسمگلنگ اور حوالہ ہنڈی کے کاروبار میں ملوث ڈیلروں کی رپورٹ اور ہر صوبے میں یہ کاروبار کرنے والوں کی تفصیلات وزیراعظم سیکریٹریٹ میں جمع کروادی ہے اب عوام منتظر ہے کہ ان ملک دشمن عناصر کے خلاف بھی کوئی کاروائی ہو گی یا یہ رپورٹ بھی فائلوں کے نیچے کہیں دبا دی جائیگی

 

ایجنسی کی اس رپورٹ میں سالانہ تقریبا 3ارب لیٹر ایرانی تیل پاکستان اسمگل ہونے اور اس میں سہولت کاری کرنے والے سیاستدانوں اور سرکاری حکام کی تعداد بھی بتائی گئی ہے ایرانی بارڈر سے ملحقہ علاقوں میں 76ڈیلرز تیل اسمگلنگ میں ملوث ہیں اور یہ تیل ملک بھر میں 995پیٹرول پمپس پر فروخت ہوتا ہے اب دیکھنا یہ ہے کہ موجودہ حکومت ان کے خلاف کیا کاروائی کرتی ہے اس نگران حکومت کا ایک اور امتحان بھی ہے کہ ہمارا قومی اثاثہ اور دنیا کی بہترین ائر لائن پی آئی اے کے مالی معاملات دن بدن خراب سے خراب تر ہوتے جارہے ہیں پی آئی اے کے 35طیاروں کے فلیٹ میں سے 15جہاز گرانڈ ہیں گرانڈ جہازوں میں سے9جہاز لیز پر ہیں ان گرانڈ کیے گئے لیز طیاروں میں 2بوئنگ 777،4اے 320اور3اے ٹی آر شامل ہیں پاکستا ن کی خراب معاشی حالت کے پیش نظر لیزنگ کمپنی نے اپنے 5 طیارے واپس مانگ لیے ہیں اگر پی آئی اے نے طیارے واپس کردیئے تو پی آئی اے کافلیٹ15جہازوں تک رہے جائے گا لیزنگ کمپنی پہلے ہی لیز پر دیئے گئے دوانجن واپس لے چکی ہے جس سے پی آئی اے کے دوجہاز گرانڈ ہیں پاکستان انٹرنیشنل ائیرلائن(پی آئی اے)کے فلیٹ میں کل 35جہاز شامل ہیں جن میں سے بوئنگ777کی تعداد12ہے ائیربس320کی تعداد17 اور اے ٹی آرکی تعداد6ہے بوئنگ777کے دوجہاز لیز پر ہیں ائیربس320کے 11جہاز لیز پر حاصل کئے گئے ہیں اور اے ٹی آرکے3جہاز لیز پر ہیں اس طرح 20جہاز آپریشنل ہیں

 

باقی 15جہاز گرانڈ ہیں۔15گرانڈ جہازوں میں سے بوئنگ777 کے 5جہاز، ائیربس320کے6جہاز اوراے ٹی آر کے 4جہاز شامل ہیں بوئنگ 777کے گرانڈ جہازوں میں سے 2جہاز لیز پر حاصل کئے گئے ہیں، ائیربس320کے 6گرانڈ جہازوں میں سے 2جہاز لیز پر ہونے کے باجود گرانڈ ہیں جبکہ 2جہازلیز کمپنی کے ساتھ معاملات طے نہ ہونے کی وجہ سے جکارتہ میں کھڑے ہیں ہماری سابقہ حکومتوں نے جو حشر اس قوی ادارے کا کیا وہی حشر انہوں نے ہمارے تعلیمی اداروں کے ساتھ کیا تھا جسکی وجہ سے آج ہم ذہنی طور پر معذور معاشرہ پیدا کررہے ہیں جبکہ پرائیویٹ تعلیمی ادارے کہاں سے کہاں پہنچ گئے تعلیمی نظام کی اس تباہی میں جہاں ہمارے حکمران اورایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ نے اپنا اپنا حصہ ڈالا وہی پر نااہل اور نکمے استاد بھی شامل ہیں جنہوں نے اس نطام کی بربادی میں اپنا اپنا حصہ ڈالا اب نگران وزیر اعلی پنجاب سید محسن نقوی نے پنجاب کے ایک ہزار سکولوں کا انتظام و انصرام مسلم ہینڈز پاکستان کے سپرد کرنے کا فیصلہ کیا ہے مسلم ہینڈز پاکستان کے چیئرمین سید لخت حسنین ان کاموں میں ماہر ہیں اور وہ اس وقت بھی پنجاب میں 117 سکول چلا ر ہے ہیں جبکہ جنوبی پنجاب کے مختلف اضلاع میں ہیلتھ اور ایجوکیشن کے ویلفیئرپراجیکٹس بھی بڑی خوبصورتی سے چلا رہے ہیں انکے پاس نوجوانوں کو خود انحصاری کی طرف گامزن کرنے کے لئے مارکیٹ بیسڈ آئی ٹی سکلز کا اہتمام بھی ہے امید ہے کہ نجی شعبے اور فلاحی تنظیموں کے تعاون سے سرکاری سکولوں کا معیار تعلیم بلند ہو گا سید لخت حسنین کے کاموں کو دیکھتے ہوئے اگر انہیں پی آئی اے بھی دیدی جائے تو امید ہے کہ اس مردہ ہوتے ہوئے ادارے میں بھی جان پڑ جائیگی کیونکہ طبیب اچھا اور سمجھدار ہو تو ایک چٹکی دوائی بھی اپنا اثر دکھانا شروع کردیتی ہے ورنہ تو بڑے بڑے آپریشن بھی ناسور کو بڑھنے سے روک نہیں سکتے۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
79043