Chitral Times

Apr 14, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

القادر ٹرسٹ کرپشن کیس میں عمران خان کی 2 ہفتوں کیلئے ضمانت منظور

شیئر کریں:

القادر ٹرسٹ کرپشن کیس میں عمران خان کی 2 ہفتوں کیلئے ضمانت منظور

اسلام آباد(چترال ٹایمز رپورٹ ) اسلام آباد ہائی کورٹ نے القادر ٹرسٹ کرپشن کیس میں عمران خان کی 2 ہفتوں کے لیے ضمانت منظور کر لی۔عمران خان کے خلاف القادر ٹرسٹ میں مبینہ کرپشن کے کیس کی سماعت کے لیے اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق نے جسٹس میاں گل حسن اورنگ زیب اور جسٹس ثمن رفعت امتیاز پر خصوصی ڈویڑن بینچ تشکیل دیا تھا جس نے سماعت کی۔کیس کی وقفے کے بعد ڈھائی بجے سماعت شروع ہوئی تو عمران خان کے وکیل خواجہ حارث نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ یہ عمران خان کی ضمانت قبل از گرفتاری اور حفاظتی ضمانت کی درخواست ہے، ہم نے ایک اور درخواست میں انکوائری رپورٹ کی کاپی مانگی ہوئی ہے، ہم چاہتے ہیں کہ نیب کو انکوائری رپورٹ کی کاپی فراہم کرنے کا حکم دیا جائے، نیب کی انکوائری رپورٹ کا اخبار سے پتہ چلا، انکوائری اگر انویسٹی گیشن میں تبدیل ہو تو صرف اسی صورت وارنٹ جاری ہو سکتے ہیں، وارنٹ کے اجراء کی وجہ بتائی گئی کہ مسلسل نوٹسز کے باوجود پیش نہیں ہوئے۔خواجہ حارث نے کہا کہ انویسٹی گیشن اسٹارٹ ہوتے ہی گرفتاری کی کوشش کی گئی، نیب قانون کے مطابق انکوائری رپورٹ فراہم کرنے کا پابند ہے، یہ انکوائری رپورٹ کورٹ آف لاء میں چیلنج کرنے کا حق بھی رکھتا ہوں، اسی وجہ سے نیب پر انکوائری رپورٹ فراہم کرنا لازم ہے،

 

عمران خان کی گرفتاری کے بعد انکوائری رپورٹ فراہم کر دی گئی، میں نے انکوائری رپورٹ نہیں دیکھی کیونکہ عمران خان قید میں تھے، میں نے انکوائری رپورٹ نہیں دیکھی کیونکہ عمران خان قید میں تھے۔عمران خان کے وکیل نے کہا کہ 28 اپریل کو انکوائری کو انویسٹی گیشن میں تبدیل کیا گیا، 2 کال اپ نوٹسز کا جواب بھی جمع کرایا، جواب دیا کہ کال اپ نوٹسز قانون کے مطابق نہیں ہیں، یہ بتانا ضروری ہے کہ متعلقہ شخص کو کس حیثیت میں بلایا گیا ہے؟ بطور گواہ بلایا جا رہا ہے یا بطور ملزم؟ اگر بطور ملزم بلایا جا رہا ہے تو الزامات کی تفصیل دینا ضروری ہے۔جسٹس میاں گل حسن اورنگ زیب نے سوال کیا کہ ا?پ کو نوٹس کے ساتھ کوئی سوالنامہ نہیں دیا گیا، کیا آپ نے نیب آفس وزٹ کیا؟خواجہ حارث نے جواب دیا کہ اس کیس میں کوئی سوالنامہ نہیں دیا گیا، وہ توشہ خانہ کیس الگ ہے، نیب آفس اس لیے وزٹ نہیں کیا کیونکہ کال اپ نوٹس غیر قانونی ہے، تفصیلی جواب میں اعتراضات اٹھائے جس کے بعد دوبارہ نوٹس نہیں ملا۔ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد بیرسٹر جہانگیر جدون نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ جو پٹیشن یہاں دائر کی گئی اس کے لیے متبادل فورم موجود ہے، رٹ پٹیشن میں یہ معاملہ ہائی کورٹ لانے کی کوئی ٹھوس وجہ نہیں، آئین کے آرٹیکل 245 کے تحت فوج کو طلب کیا گیا ہے، جس طرح کے پْر تشدد واقعات ہوئے اس کے بعد فوج کو طلب کیا گیا۔کیا یہاں مارشل لاء لگ گیا کہ سماعت روک دیں؟

 

جسٹس میاں گلجسٹس میاں گل حسن نے سوال کیا کہ کیا یہاں مارشل لاء لگ گیا ہے کہ ہم تمام درخواستوں پر سماعت روک دیں؟ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے جواب دیا کہ اس معاملے پر عدالت اٹارنی جنرل کو بلا کر بھی سن لے۔ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل نیب سردار مظفر عباسی نے عدالت کو بتایا کہ 15 جولائی کو انکوائری شروع ہوئی جس کے بعد کال اپ نوٹس جاری ہوا، عمران خان کبھی بھی انکوائری میں پیش نہیں ہوئے، اس کیس میں ایک بزنس ٹائیکون، زلفی بخاری اور دیگر کو نوٹسز ہوئے، محمد میاں سومرو، فیصل واو?ڈا اور دیگر کو بھی نوٹسز ہوئے جنہوں نے انکوائری جوائن کی، شہزاد اکبر کو بھی نوٹس ہوا مگر انہوں نے انکوائری جوائن نہیں کی۔عدالت نے کیس کے تفتیشی افسر کو روسٹرم پر بلا لیا جن سے جسٹس میاں گل حسن نے سوال کیا کہ عمران خان 2 دن ا?پ کے پاس تھے آپ نے ان سے کیا تفتیش کی؟عدالتِ عالیہ نے عمران خان کی 2 ہفتوں کے لیے ضمانت منظور کر لی۔اسلام آباد ہائی کورٹ نے انکوائری رپورٹ فراہم کرنے کی درخواست غیر مو ثر ہونے پر نمٹا دی۔سماعت مکمل ہونے کے بعد رینجرز نے کورٹ روم کے باہر عمران خان کی حفاظت کے لیے حصار بنا لیا۔عمران نے ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد سے معافی کیوں مانگی؟اسلام آباد ہائی کورٹ میں وقفے کے بعد کیس کی سماعت سے قبل ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد جہانگیر جدون اور پی ٹی آئی کے وکیل سیف الرحمٰن کے درمیان تلخ کلامی ہوئی۔عمران خان کمرہء عدالت میں کھڑے ہو گئے اور کہا کہ تمام لوگ پْرامن رہیں اور عدالت کے احترام کو ملحوظِ خاطر رکھیں۔

 

 

عمران خان نے ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد جہانگیر جدون سے معافی مانگ لی۔عمران خان کو دیکھ کر پی ٹی آئی کے وکیل سیف الرحمٰن نے بھی جہانگیر جدون سے معافی مانگ لی۔سماعت سے قبل چیئرمین پاکستان تحریکِ انصاف عمران خان نے گرفتاری کے خدشے کے پیشِ نظر اپنی لیگل ٹیم سے بھی راطہ کیا۔عمران خان نے وکیل حامد خان سے رابطہ کر کے کہا کہ پنجاب پولیس مجھے گرفتار کرنے کے لیے باہر کھڑی ہے۔آج جب سماعت شروع ہوئی تو کمرہء عدالت میں عمران خان کے حق میں نعرے لگائے گئے۔نعرے لگانے پر ججز نے اظہارِ برہمی کیا اور عدالت سے اٹھ کر چلے گئے۔پی ٹی آئی کے وکیل نے ججز کو بتایا کہ نعرہ لگانے والے وکیل کا ہم سے تعلق نہیں۔اس موقع پر جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے کہا کہ ایسے نہیں چلے گا، یہ کوئی طریقہ نہیں، مکمل خاموشی ہونی چاہیے۔جس کے بعد عدالت کی جانب سے کیس کی سماعت میں جمعے کی نماز کا وقفہ کرتے ہوئے سماعت کے لیے ڈھائی بجے کا وقت مقرر کیا گیا۔سماعت سے قبل عمران خان کورٹ روم نمبر 2 میں موجود تھے، پولیس اور رینجرز نے عمران خان کو لانے کے لیے کورٹ روم نمبر 2 سے 3 تک 2 لیئرز پر مشتمل حفاظتی حصار بنایا۔100 فیصد خدشہ ہے کہ گرفتار کر لیا جاؤں گا: عمران خانعدالت میں نجی ٹی وی کے نمائندہ سے گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے کہا کہ مجھے 100 فیصد خدشہ ہے کہ آج گرفتار کر لیا جاؤں گا۔صحافی نے ان سے سوال کیا تھا کہ کیا آپ آج گرفتار ہو سکتے ہیں؟

 

عمران خان نے صحافی کے ایک اور سوال کے جواب میں کہا کہ مجھے نیب نے اپنی اہلیہ سے بات کرنے کی اجازت دی تھی۔صحافی نے عمران خان سے سوال کیا کہ آپ کو گرفتاری کے دوران فون مل گیا تھا؟عمران خان نے جواب دیا کہ میں نے لینڈ لائن کے ذریعے بات کی تھی۔عمران خان سے سوال کیا گیا کہ فون آپ کو اہلیہ سے بات کرنے کے لیے دیا گیا تھا، آپ نے مسرت چیمہ کو ملا دیا؟عمران خان نے جواب دیا کہ میری بشریٰ بی بی سے بات نہیں ہو سکی تھی۔عمران خان نے عدالت میں میڈیا سے غیر رسمی بات چیت کے دوران کہا کہ اگر ضمانت منسوخ ہوئی تو مزاحمت نہیں کروں گا۔انہوں نے کہا کہ جب گرفتار کیا گیا تو لوگوں نے اپنے غصے کا اظہار کیا، یہ میرا ملک ہے، میری فوج ہے، میں آپ کو تمام صورتِ حال سے آگاہ کر رہا ہوں۔عمران خان نے صحافیوں سے کہا کہ اگر مجھے دوبارہ گرفتار کیا گیا تو پھر وہی ردِ عمل آئے گا، میں نہیں چاہتا کہ ایسی صورتِ حال دوبارہ پیدا ہو۔عمران خان سے سوال کیا گیا کہ خان صاحب! جب آپ کو گرفتار کیا گیا تو آپ کا کیسا تجربہ رہا؟اس سوال کے جواب میں عمران خان اوپر دیکھتے رہے اور انہوں نے جواب نہ دیا۔عمران خان سے صحافی نے سوال کیا کہ کہا جا رہا ہے کہ آپ کو دیگر سیاسی رہنماؤں کے مقابلے میں ریلیف ملا ہے؟عمران خان نے جواب دیا کہ میں ہائی کورٹ میں بیٹھا تھا، ان کے پاس مجھے پکڑنے کا کوئی جواز نہیں تھا، مجھے اغواء کیا گیا، جیل میں لے گئے تو پہلی بار وارنٹ دکھایا گیا، یہ تو جنگل کے قانون میں ہوتا ہے، کدھر گئی پولیس؟ کدھر گیا قانون؟ ایسا لگ رہا ہے جیسے یہاں مارشل لاء ڈکلیئر ہو گیا ہے۔اس سے قبل چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان سخت سیکیورٹی میں پولیس لائنز کے گیسٹ ہاؤس سے اسلام آباد ہائی کورٹ پہنچے۔

 

 

عمران خان کی پیشی سے قبل ڈائری برانچ میں ان کا بائیو میٹرک کیا گیا جس کے بعد وہ کورٹ روم نمبر 2 میں پہنچ گئے۔عمران خان کے وکیل انتظار پنجوتھا کورٹ روم نمبر 3 پہنچے جہاں انہوں نے کورٹ روم کا جائزہ لیا۔عمران خان کی پیشی سے قبل کورٹ روم نمبر 3 میں شدید دھکم پیل نظر آئی، جس کے بعد غیر متعلقہ افراد کو کورٹ روم نمبر 3 سے نکال دیا گیا۔اس موقع پر وکلاء کی سیکیورٹی عملے سے تلخ کلامی بھی ہوئی۔سماعت سے قبل کورٹ روم نمبر 3 کے باہر رینجرز نے پوزیشن سنبھال لی جبکہ کورٹ روم کو خالی کرا کے بم ڈسپوزل اسکواڈ نے وہاں کلیئرنگ اور سوئپنگ کا عمل مکمل کیا۔عمران خان کی پیشی کے موقع پر ماضی کی طرح ان کے سر پر نہ حفاظتی بالٹی تھی اور نہ ہی اطراف میں حفاظتی شیلڈ تھی۔اسلام آباد ہائی کورٹ میں پیش ہونے کے لیے آنے والے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان سے ’نجی ٹی وی کے نمائندے حیدر شیرازی نے سوال کیا کہ دورانِ قید آپ کی اسٹیبلشمنٹ سے ملاقاتیں ہوئیں؟عمران خان نے اس سوال کا نفی میں سر ہلا کر جواب دیا۔صحافی نے عمران خان سے سوال کیا آپ ڈٹے ہوئے ہیں یا ڈیل کر لی؟اس سوال پر عمران خان جواب دینے کی بجائے مسکرا دیے۔عمران خان سے صحافی نے پھر سوال کیا کہ آپ کی خاموشی کو سمجھیں کہ کیا ڈیل کر لی گئی ہے؟عمران خان نے منہ پر انگلی رکھ کر انہیں خاموش رہنے کا اشارہ کیا۔عمران خان ڈائری برانچ سے بائیو میٹرک کرا کے نکلے تو انہوں نے کیمروں کی جانب دیکھ کر مسکراتے ہوئے انگلیوں سے وکٹری کا نشان بنایا۔سماعت سے قبل وکلاء کی جانب سے اعتراض اٹھاتے ہوئے عدالتی اسٹاف سے استدعا کی گئی کہ کورٹ روم تو بہت چھوٹا ہے، کسی بڑے کورٹ روم میں سماعت کر لی جائے۔

 

عدالتی عملے نے وکلاء کو جواب دیا کہ یہ فیصلہ تو بینچ کے سربراہ ہی کر سکتے ہیں۔عمران خان عدالتِ عالیہ میں سخت سیکیورٹی میں پہنچے ہیں۔اس موقع پر عدالت اور اطراف میں سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے ہیں، ہیلی کاپٹر کے ذریعے فضائی نگرانی کی جا رہی ہے۔اسلام آباد ہائی کورٹ کے دو گیٹس پر سخت سیکیورٹی تعینات ہے، پچھلے راستے کو مکمل سیل کر دیا گیا ہے۔اسلام آباد ہائی کورٹ کے باہر رینجرز اور پولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی ہے۔ایف سی اہلکار اور اسلام آباد پولیس کی ٹیمیں سرینگر ہائی وے اور عدالت کے اطراف تعینات کی گئی ہیں۔اسلام آباد پولیس چیکنگ کے بعد اسلام آباد ہائی کورٹ کے اطراف داخلے کی اجازت دے رہی ہے۔عمران خان کی ہائی کورٹ روانگی سے قبل آئی جی اسلام آباد اور ڈی آئی جی آپریشنز نے پولیس لائن پہنچ کر سیکیورٹی انتظامات کا معائنہ کیا۔چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے اسلام آباد ہائی کورٹ میں پیشی سے قبل وکلاء اور پارٹی رہنماؤں سے ملاقات کی ہے۔ترجمان اسلام آباد پولیس کے مطابق عدالتی حکم کے مطابق گزشتہ شب عمران خان سے 10 افراد نے ملاقات کی۔اسلام آباد پولیس کے ترجمان نے بتایا ہے کہ صدرِ مملکت عارف علوی، وزیرِ اعلیٰ گلگت بلتستان خالد خورشید اور عمران خان کے معالج ڈاکٹر فیصل نے بھی پولیس گیسٹ ہاؤس میں ان سے ملاقات کی ہے۔ترجمان اسلام آباد پولیس نے یہ بھی بتایا ہے کہ ان افراد کے علاوہ 7 رکنی قانونی ٹیم نے بھی عمران خان سے ملاقات کی۔پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان کو گزشتہ روز سپریم کورٹ کی جانب سے آج اسلام آباد ہائی کورٹ میں پیش ہونے کی ہدایت کی گئی تھی۔

 

 

پی ڈی ایم کا پیر کو سپریم کورٹ کے سامنے بڑا دھرنا دینے کا اعلان

اسلام آباد(سی ایم لنکس)پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) نے سپریم کورٹ کے رویے کے خلاف احتجاج کا اعلان کردیا۔پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ سپریم کورٹ مدر آف لاء ہے، مدر ان لاء نہیں ہے، عدالت عظمیٰ کے سامنے پیر کو بڑا دھرنا دیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے رویے کے خلاف احتجاج کا فیصلہ کیا ہے، پوری قوم سے اپیل کرتا ہوں کہ پیر کو اسلام آباد کی طرف روانہ ہو۔پی ڈی ایم سربراہ نے مزید کہا کہ عدالت دہشت گردی اور مجرم کو تحفظ دے رہی ہے، سپریم کورٹ نے غبن کو تحفظ دیا، غبن اور غبن کرنے والے کی حوصلہ افزائی کی۔ان کا کہنا تھا کہ آ ج ہائیکورٹ نے بھی فیصلے دیے ہیں کہ 9 مئی کے بعد ہوئے واقعات کے بعد درج کسی مقدمے میں عمران خان کے خلاف کارروائی نہ کی جائے۔مولانا فضل الرحمان نے یہ بھی کہا کہ عمران خان کے خلاف کسی بھی مقدمے میں انہیں گرفتار نہ کیا جائے، یہاں تک کہا گیا کہ کسی مقدمے کا اگر انہیں علم نہ ہو تب بھی انہیں گرفتار نہ کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ اندازہ لگائیں عدلیہ کس طرح آئین اور قانون سے ماورا فیصلے دے رہی ہے۔

 


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, جنرل خبریںTagged
74390