Chitral Times

Apr 15, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

بلاول بھٹو زرداری کا دورہ بھارت – پیامبر: قادر خان یوسف زئی کے قلم سے

Posted on
شیئر کریں:

بلاول بھٹو زرداری کا دورہ بھارت – پیامبر: قادر خان یوسف زئی کے قلم سے

شنگھائی تعاون تنظیم کے وزرائے خارجہ کا اجلاس بھارت کے سیاحتی شہر گوا میں ہونے جا رہا ہے جس میں پاکستان کی جانب سے وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری بھی شرکت کر رہے ہیں۔ 12 سال بعد کسی پاکستانی وزیر خارجہ کا یہ پہلا دورہ بھارت ہوگا، ایک ایسے وقت میں جب دونوں ممالک کے درمیان دو طرفہ تعلقات کئی متنازع معاملات کی وجہ سے تناؤ کا شکار ہیں۔ ان میں سب سے نمایاں مسئلہ کشمیر پر تنازع ہے تاہم شنگھائی تعاون تنظیم کا اپنے ارکان کے اندرونی معاملات میں عدم مداخلت کا اصول ہے اور وہ ان کے تنازعات میں فریق نہیں بنتا۔ یہ ان کے درمیان بات چیت اور اعتماد سازی کے اقدامات کی بھی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔ شنگھائی تعاون تنظیم کے چارٹر میں ہے کہ اس کے اراکین کو ”پرامن طریقے سے سرحدی تنازعات کو دوستانہ مشاورت کے ذریعے حل کرنا چاہیے” اور ”طاقت کے استعمال یا دھمکی سے پرہیز کرنا چاہیے”۔ ایس سی او کے پاس علاقائی سلامتی کے مسائل پر مشاورت کا ایک طریقہ کار بھی ہے، جسے علاقائی انسداد دہشت گردی ڈھانچہ (RATS) کہا جاتا ہے، جو تاشقند، ازبکستان میں واقع ہے۔ RATS کی ایگزیکٹو کمیٹی کی سربراہی سابق ازبک سفارت کار روسلان مرزائیف کر رہے ہیں۔

گوا میں شنگھائی تعاون تنظیم کا اجلاس، بھارت اور پاکستان کو اپنے سیکورٹی خدشات کو دور کرنے اور علاقائی استحکام کے لیے مشترکہ بنیاد تلاش کرنے کے لیے ان میکانزم کو استعمال کرنے کا موقع فراہم کر سکتا ہے۔ یہ وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر اعظم شہباز شریف کے درمیان ملاقات کی راہ بھی ہموار کر سکتا ہے۔ اس طرح کی ملاقات برف کو توڑنے اور دونوں ممالک کے درمیان تعطل کا شکار امن عمل کو بحال کرنے میں مدد دے سکتی ہے۔ یہ ان کے متعلقہ عوام اور عالمی برادری کو یہ اشارہ بھی دے سکتا ہے کہ وہ اپنے اختلافات کو محاذ آرائی کی بجائے بات چیت کے ذریعے حل کرنے کے لیے تیار ہیں۔ تاہم، بہت سے چیلنجز اور رکاوٹیں ہیں جو اس طرح کے نتائج کو روک سکتی ہیں۔ دونوں ممالک کشمیر، دہشت گردی، تجارت اور پانی کی تقسیم جیسے اہم مسائل پر مختلف موقف رکھتے ہیں۔ انہیں سخت گیر عناصر کے داخلی دباؤ کا بھی سامنا ہے جو کسی سمجھوتے یا رعایت کی مخالفت کرتے ہیں۔ مزید برآں، وہ بیرونی عوامل سے متاثر ہیں جیسے کہ چین اور امریکہ کے ساتھ ان کے جن کے جنوبی ایشیا میں اپنے مفادات اور ایجنڈے ہیں۔

پاکستان کے وزیر خارجہ اور پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کے دورے نے دونوں ممالک میں تنقید اور تنازع کو بھی جنم دیا ہے۔ پاکستان میں، کچھ لوگوں نے اس طرح کے حساس پورٹ فولیو کو سنبھالنے کے لیے ان کی اسناد اور تجربے پر سوال اٹھائے ہیں، جب کہ دوسروں نے ان پر الزام لگایا ہے کہ وہ بھارت کے ساتھ نرم رویہ اختیار کر رہے ہیں اور قومی مفادات پر سمجھوتہ کر رہے ہیں۔ بلاول کو ایک نوجوان اور کرشماتی رہنما کے طور پر دیکھا جاتا ہے جو نوجوانوں اور معاشرے کے ترقی پسند طبقوں کو اپیل کر سکتا ہے۔ وہ انسانی حقوق، جمہوریت اور علاقائی امن کے بارے میں اپنے واضح خیالات کے لیے بھی جانا جاتے ہیں۔ تاہم بلاول کو مختلف حلقوں کی جانب سے تنقید اور مخالفت کا بھی سامنا ہے۔ کچھ لوگوں نے خارجہ امور میں ان کے تجربے کی کمی کے پیش نظر ان کی سیاسی ذہانت اور سفارتی صلاحیتوں پر سوال اٹھائے ہیں۔ کچھ لوگوں نے حکومت اور اپنی پارٹی کے اندر اس کے اختیار اور اثر و رسوخ پر بھی شک کیا ہے، جہاں اسے طاقتور دھڑوں اور ذاتی مفادات سے مقابلہ کرنا پڑتا ہے۔

بلاول کو سخت گیر گروہوں اور جماعتوں کے ردعمل کا بھی سامنا کرنا پڑا جو بھارت کے ساتھ کسی بھی بات چیت یا مشغولیت کی مخالفت کرتے ہیں۔ انہوں نے ان پر کشمیر کاز سے غداری اور قومی سلامتی اور خودمختاری پر سمجھوتہ کرنے کا الزام لگایا ہے۔ انہوں نے کشمیریوں اور پاکستانیوں کی حالت زار کو نظر انداز کرنے پر تنقید کی ہے۔ بھارت میں بھی بلاول کے دورے پر ملے جلے ردعمل سامنے آئے ہیں۔ کچھ لوگوں نے ان کے دورے کو تعلقات میں بہتری اور تناؤ کو کم کرنے کی جانب ایک مثبت قدم قرار دیا ہے۔ انہوں نے تجارت، پانی کی تقسیم اور ثقافتی تبادلے جیسے مختلف مسائل پر ان کے معتدل اور مفاہمت پر مبنی موقف کی تعریف کی ہے۔ انہوں نے یہ امید بھی ظاہر کی ہے کہ وہ اعتماد کے خسارے کو پورا کرنے اور دونوں ممالک کے درمیان بات چیت کو آسان بنانے میں تعمیری کردار ادا کر سکتے ہیں۔ تاہم کچھ لوگوں نے بلاول کے دورے پر شکوک اور عدم اعتماد کا اظہار بھی کیا ہے۔۔ انہوں نے دوستانہ اور تعاون کرنے کا بہانہ کرتے ہوئے کشمیر اور دیگر مسائل پر اشتعال انگیز بیانات دینے پر بھی ان پر تنقید کی ہے۔بلاول کا دورہ بھارت یا تو تعاون اور مفاہمت کی نئی راہیں کھول سکتا ہے یا موجودہ دشمنیوں اور شکوک و شبہات کو مزید گہرا کر سکتا ہے۔ یہ یا تو اس کی ساکھ اور قد کو بڑھا سکتا ہے یا اس کی ساکھ اور قانونی حیثیت کو نقصان پہنچا سکتا ہے۔ یہ یا تو کسی پیش رفت کی راہ ہموار کر سکتا ہے یا ردعمل کو متحرک کر سکتا ہے۔

بلاول کے دورے کے نتائج کا زیادہ تر انحصار اس بات پر ہوگا کہ وہ دونوں ممالک کو تقسیم کرنے والے پیچیدہ اور نازک معاملات کو کس طرح سنبھالتے ہیں، وہ اپنی ملکی اور بین الاقوامی ذمہ داریوں اور توقعات کو کس طرح متوازن رکھتے ہیں، وہ اپنے بھارتی ہم منصبوں اور بات چیت کرنے والوں کے ساتھ کس طرح بات چیت کرتے ہیں، لوگوں اور میڈیا، اور وہ اپنے قیام کے دوران پیش آنے والی کسی بھی غیر متوقع پیش رفت یا واقعات پر کیسے ردعمل ظاہر کرتے ہیں۔ بادی النظر بلاول کے پاس بھارت اور پاکستان کے تعلقات میں تبدیلی لانے کا تاریخی موقع ہے۔ اس پر یہ بھی بہت بڑی ذمہ داری ہے کہ وہ حالات کو مزید خراب نہ کرے۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
74098