Chitral Times

May 19, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

جامع آپریشن کے اسباب و اثرات – قادر خان یوسف زئی

شیئر کریں:

جامع آپریشن کے اسباب و اثرات – قادر خان یوسف زئی کے قلم سے

پاکستان کے شمالی علاقوں کو طویل عرصے سے شدت پسند گروہوں کا گڑھ سمجھا جاتا رہا ہے اور گزشتہ چند دہائیوں کے دوران اس خطے میں دہشت گردی کی متعدد لہریں دیکھی گئی ہیں۔ خطے میں انتہا پسندانہ سرگرمیوں کو روکنے کے بجائے حکومت کی نرم پالیسی کی وجہ سے یہ گروہ اپنی سرگرمیاں جاری اور اپنی جڑیں مضبوط کرنے میں کامیاب ہوئے۔ اس ضمن میں پاکستان کی قومی سلامتی کونسل کے اجلاس میں ملک میں شدت پسندی سے نمٹنے کے لیے ایک نیا جامع آپریشن شروع کرنے کی منظوری دی گئی۔ اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ ’کمیٹی نے دہشت گردی کی حالیہ لہر کو ٹی ٹی پی کے ساتھ نرم گوشہ اور عدم سوچ بچار پر مبنی پالیسی کا نتیجہ قرار دیا، واپس آنے والے ان خطرناک دہشت گردوں اور افغانستان میں بڑی تعداد میں موجود مختلف دہشت گرد تنظیموں کی طرف سے مدد ملنے کے نتیجے میں ملک میں امن و استحکام منتشر ہوا جو بے شمار قربانیوں اور مسلسل کاوشوں کا ثمر تھا۔

جارج ٹاؤن یونیورسٹی کے پروفیسر اور دہشت گردی اور شورش کے معروف ماہر بروس ہوف مین کے مطابق ’’انتہا پسندانہ نظریات کی جڑیں اکثر شکایت یا مبینہ ناانصافی کے احساس میں ہوتی ہیں، اور یہ کہ ان بنیادی مسائل کو حل کرنا ضروری ہے‘‘۔ انٹرنیشنل سینٹر فار دی اسٹڈی آف ریڈیکلائزیشن اینڈ پولیٹیکل وائلنس کے سینئر ریسرچ فیلو شیراز مہر نے انتہا پسند نظریات کے پھیلاؤ میں سوشل میڈیا کے کردار پر روشنی ڈالی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ”آن لائن بنیاد پرستی ایک بڑا چیلنج بن چکی ہے کیونکہ انتہا پسند گروہ دنیا بھر میں کمزور افراد کو بھرتی کرنے اور بنیاد پرست بنانے کے لیے سوشل میڈیا کا استعمال کرتے ہیں‘‘۔خطے میں دہشت گردی کے مسئلے کو موثر طریقے سے حل کرنے کے لئے کثیر الجہتی نقطہ نظر کی ضرورت ہے۔ اس میں سیاسی اور معاشی اصلاحات، سلامتی کے لیے علاقائی نقطہ نظر اور انتہا پسند نظریات کا مقابلہ کرنے پر توجہ مرکوز کرنا شامل ہونا چاہیے۔ سیاسی اور معاشی اصلاحات بنیادی شکایات کو دور کرنے میں مدد دے سکتی ہیں جو اکثر افراد کو انتہا پسند گروہوں میں شامل ہونے کی طرف راغب کرتی ہیں۔ سلامتی کے لئے علاقائی نقطہ نظر دہشت گرد نیٹ ورکس کو ناکام بنانے اور انہیں سرحد پار سے دہشت گردی روکنے میں مدد کر سکتا ہے۔ اور انتہا پسند نظریات کا مقابلہ کرنے پر توجہ مرکوز کرنے سے افراد اور برادریوں کی بنیاد پرستی کو روکنے میں مدد مل سکتی ہے۔

انتہا پسندی کے خلاف جنگ ایک طویل المیعاد کوشش ہے جس کے لیے حکومتوں، سول سوسائٹی اور نجی شعبے کی جانب سے مستقل عزم اور تعاون کی ضرورت ہے۔ انتہا پسندی کی بنیادی وجوہ سے نمٹنے اور امن و استحکام کو فروغ دینے کے لئے مل کر کام کرکے اس اہم خطرے کا مقابلہ کرنے میں پیش رفت کرسکتے ہیں تاہم، ان عوامل کے باوجود، انتہا پسند گروہ کے اپنی جڑیں مضبوط کرنے کے اسباب کو مد نظر رکھنا بھی ضروری ہے جس میں ایک وجہ خطے میں معاشی مواقع کا فقدان ہے۔ بے روزگاری کی شرح بہت زیادہ ہے، اور بہت سے لوگ اپنی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے مجبوراََ ملوث ہو جاتے ہیں۔ مزید برآں، تعلیم اور صحت کی دیکھ بھال تک رسائی کی کمی نے آبادی کو انتہا پسند پروپیگنڈے کا شکار بنا یا۔بعض ایسے اقدامات بھی ہوئے جس کی وجہ سے عوام میں ناراضگی اور بیگانگی کا احساس پیدا ہوا۔ اس سے ان گروہوں کے لیے احساس محرومی کا شکار افراد کو اپنے مذموم مقاصد کے لیے حمایت حاصل کرنا آسان ہو گیا نیز بدعنوانی اور ناقص گورننس نے انتہا پسند گروہوں کے عروج میں بھی کردار ادا کیا۔

سنگین و دیرینہ مسئلے کو حل کرنے کے لئے یہ ضروری ہے کہ ریاست متاثرہ علاقوں کو ترجیح دے اور معاشی ترقی، تعلیم اور صحت کی دیکھ بھال میں سرمایہ کاری کرے۔ مزید برآں، بدعنوانی سے نمٹنے اور گورننس کو بہتر بنائے اس سے انتہا پسند گروہوں کی حمایت کو کم کرنے اور انہیں خطے میں قدم جمانے سے روکنے میں مدد مل سکتی ہے۔ شمالی علاقے جات ملک کی سکیورٹی فورسز کے لیے تشویش کا باعث رہے ہیں۔ اس خطے میں متعدد عسکریت پسند گروہ دوبارہ وارد ہوئے اور شہریوں، سکیورٹی اہلکاروں پر حملے کیے۔ یہ گروہ اسمگلنگ، اغوا اور دیگر مجرمانہ سرگرمیوں میں بھی ملوث رہے ہیں۔ لہذا علاقے میں آپریشن شروع کرنے کا فیصلہ سیکورٹی نقطہ نظر سے قابل فہم ہے۔ تاہم، کچھ حلقے شہریوں پر ممکنہ اثرات اور آپریشن کے وسیع تر سیاسی مضمرات کے بارے میں خدشات کا حوالہ دیتے ہوئے اس فیصلے پر تحفظات کا اظہار بھی کر رہے ہیں۔

پاکستان میں سیاسی عدم استحکام ملک میں دہشت گردی کے عروج کا ایک اہم عنصر رہا ہے۔ سیاسی عدم استحکام اور موثر حکمرانی کی عدم موجودگی نے ایک خلا پیدا کیا جسے عسکریت پسند گروہوں نے پر کیا۔ مثال کے طور پر، 1990 ء کی دہائی کے دوران، جب پاکستان سیاسی عدم استحکام کے دور سے گزر رہا تھا اور ٹی ٹی پی جیسے عسکریت پسند گروہ ملک میں خود کو قائم کرنے میں کامیاب رہے۔ اسی طرح، 1999ء سے 2008 ء تک دور آمریت کے دوران، انتہا پسند گروہ نسبتاً استثنیٰ کے ساتھ بڑھنے اور کام کرنے میں کامیاب رہے۔ آپریشن کی کامیابی کو یقینی بنانے کے لئے، ریاست کے لئے یہ ضروری ہے کہ وہ مقامی برادریوں اور اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ مل کر کام کرے۔ اس سے اعتماد پیدا کرنے میں مدد ملے گی اور اس بات کو یقینی بنایا جا سکتا ہے کہ آپریشن اس طرح سے کیا جائے جو تمام افراد کے حقوق اور خدشات کا احترام کرے۔ اس بات کو یقینی بنانا بھی ضروری ہے کہ آپریشن کے دوران حراست میں لیے گئے کسی بھی فرد کے ساتھ انسانی حقوق کے بین الاقوامی معیارات کے مطابق سلوک کیا جائے۔ نیا جامع آپریشن شروع کرنے کا فیصلہ ایک مشکل ہے، جس کے ممکنہ فوائد اور خطرات دونوں ہیں اگرچہ تمام اسٹیک ہولڈرز کے خدشات کو تسلیم کرنا ضروری ہے، لیکن ملک کے شہریوں کی سلامتی اور فلاح و بہبود کو ترجیح دینا بھی ضروری ہے۔ مل کر کام کرنے اور متوازن سوچ اپنانے سے ان دونوں اہداف کا حصول اور تمام پاکستانیوں کے لیے ایک محفوظ اور خوشحال مستقبل کی تشکیل ممکن ہے۔

 


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
73561