Chitral Times

Jun 14, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

دختران خیبرپختونخوا کی قابل تقلید مثال – محمد شریف شکیب

Posted on
شیئر کریں:

دختران خیبرپختونخوا کی قابل تقلید مثال – محمد شریف شکیب

خواتین کا سال میں ایک بار عالمی دن منانے پر ہمارے ایک دوست کو اعتراض ہے ان کا موقف ہے کہ سال کے باقی ماندہ 364 دن بھی خواتین کے دن ہوتے ہیں بے چارے مردوں کا کوئی دن نہیں ہوتا۔مردوں کے تین ہی دن ہوتے ہیں ایک پیدائش کا دن ہے جب ماں باپ اور دوسرے رشتے دار بیٹے کی پیدائش پر خوشیاں مناتے ہیں۔دوسری خوشی کا دن ان کی شادی کا ہوتا ہے۔جب مرد کے چہرے پر آخری بار سچی مسکراہٹ آتی ہے اور مرد کا تیسرا دن اس کی موت کا دن ہوتا ہے جب لوگ اس کی جدائی پر سوگ منا رہے ہوتے ہیں۔عورت کا عالمی دن منانے کی تجویز کس نے دی ہوگی اس بارے میں وثوق سے کچھ نہیں کہا جاسکتا تاہم یہ بات طے ہے کہ کوئی مرد ایسی حماقت کا تصور بھی نہیں کرسکتا۔یہ بھی کسی عورت کی کارستانی ہوگی۔دنیا کے دوسرے ملکوں میں عالمی یوم نسواں پر کوئی خاص ہلہ گلہ نہیں ہوتا۔ ہمارے ہاں ویلنٹائن ڈے اور یوم خواتین کو خصوصی اہتمام کے ساتھ منایا جاتا ہے۔

 

 

گذشتہ چند سالوں سے بڑے شہروں کی ترقی یافتہ خواتین اس دن کو یوم آزادی کے طور پر منا رہی ہیں۔ان کا خیال ہے کہ پاکستان کی عورت آج بھی غلامی کی زنجیروں میں جکڑی ہوئی ہے۔ان کا خیال ہے کہ حقیقی آزادی جسم کی آزادی ہے ذہن کی آزادی کوئی معنی نہیں رکھتی۔انہوں نے ایک نعرہ مستانہ تخلیق کیا ہے کہ “میرا جسم میری مرضی” اب ان نیک بختوں سے کون پوچھے کہ تمہاری زبان سمیت جسم پر کسی کا زور کب چلا ہے۔سولہ سنگھار صرف عورت کے جسم کے لئے جائز قرار دیا گیا ہے۔۔رد بیچارہ نہ میک اپ کرتا ہے نہ ہی اسے بناو و سنگھار کی فرصت ہے۔اسلام آباد، پنڈی، فیصل آباد، حیدر آباد، لاہور اور کراچی جیسے بڑے شہروں کی خواتین کا خیال ہے کہ خیبر پختونخوا کی خواتین سب سے مظلوم، محکوم، مجبور اور قابل رحم ہیں، مردوں کے نقارہ خانے میں ان بیچاریوں کی آواز کوئی نہیں سنتا۔وہ اپنے پیدائشی حقوق سے بھی ن آشنا ہیں۔لیکن اس بار خیبر پختونخوا کی خواتین نے یوم نسواں جس انداز سے منایا ہے انہوں نے ثابت کر دیا کہ وہ سب سے زیادہ باشعور ہیں وہ صرف اپنے جسم، اپنی ذات اور اپنے خاندان کے بارے میں نہیں سوچتیں بلکہ انہیں اپنی قوم، اپنی آنے والی نسلوں اور اپنے مادر وطن کی بھی فکر ہے۔

 

انہوں نے یہ بھی ثابت کر دیا ہے کہ وہ بنی نوع انسان کو درپیش خطرات سے بھی بخوبی آگاہ ہیں اور انہیں موسمیاتی تبدیلی سے انسانی زندگی کو درپیش خطرات کا بھی احساس ہے۔ اس بار پشاور کی خواتین نے عالمی یوم نسواں کو یوم شجرکاری کے طور پر منایا۔ خواتین نے بوٹانیکل گارڈن سمیت مختلف مقامات پر پھول اور پودے لگائے۔ان پودوں کو پانی دیا اور دنیا کو یہ پیغام دیا کہ ۔ماحولیاتی تبدیلی سے انسانوں اور دیگر جانداروں کی بقاء کو جو سنگین خطرات لا حق ہیں ان کے تدارک کے لئے خواتین سمیت معاشرے کے ہر طبقے کو اپنا کردار ادا کرنا چاہئے ۔اس بار ہماری خواتین نے جو شاندار اور قابل تقلید مثال قائم کی ہے اس پر پوری قوم کو فخر ہے۔خواتین نے معاشرے کو درپیش خطرات کے بارے میں جو پیغام دیا ہے۔اس پر ارباب اختیار اور معاشرے کے سنجیدہ طبقوں کو ضرور غور کرنا چاہئے۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
72454