Chitral Times

Apr 21, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

بیماریوں کی روک تھام میں وضو کا سائنسی کردار – پروفیسرعبدالشکورشاہ

Posted on
شیئر کریں:

بیماریوں کی روک تھام میں وضو کا سائنسی کردار – پروفیسرعبدالشکورشاہ

 

وضو کا مطلب ہے صفائی، حسن اور روشنی۔ ”جب تم نماز پڑھنے کا ارادہ کرو تو اپنے چہروں اور اپنے ہاتھوں کو کہنیوں تک دھوؤ، اپنے سروں پر (گیلے ہاتھ پھیر کر) اور پاؤں ٹخنوں تک دھوؤ۔“ (قرآن)۔وضو نماز کے علاوہ مختلف بیماریوں سے بچاؤ کی ایک قدرتی ڈھال ہے۔میڈیکل سائنس میں وضوکو بیماریوں سے تحفظ اور راحت فراہم کرنے کا ایک طریقہ سمجھا جاتا ہے۔ وضو کے زریعے ہم ماحولیاتی آلودگی کے اثرات اورمختلف بیماریوں کی منتقلی سے بچتے ہیں جو تھیم کے ارد گرد کے ماحول میں موجود ہو سکتی ہیں۔ جب گندگی یا غلاظت پھیل کر جلد کی سطح پر چپک جاتی ہے تو یہ تیزی سے دھول اور دیگر مواد کے ساتھ مل جاتی ہے۔ ہماری روزمرہ کی کچھ سرگرمیوں سے ہماری جلد آلودہ ہو جاتی ہے یا جراثیم سے بھری ہوتی ہے جو کہ بہت زیادہ مضر صحت ہوتے ہیں۔دن میں کم از کم پانچ بار وضو کرتاہی مسلمان کی صحت کا بنیادی عنصر ہے۔ یہ جاننا ضروری ہے کہ وضو نہ صرف جسم کے سطحی حصے کے لیے ضروری ہے بلکہ اندرونی حصے کی تشکیل بھی ضروری ہے، مثلاً اعضاء، ملاشی، منہ، کان، ناک اور آنکھیں۔ جسم کے سطحی حصے کی صفائی کی اشد ضرورت گندگی کی باقیات کو ختم کرنا ہے،

 

بصورت دیگرگندگی بڑھ سکتی ہے اور فنگس یا بیکٹیریا کو بڑھا سکتی ہے۔ یہ مختلف بیماریوں کی بنیادی وجوہات ہیں جن میں جلد کی بہت خطرناک بیماریاں بھی شامل ہیں۔فرمان نبوی ہے ”جس نے صحیح طریقے سے وضو کیا تو اس کے بدن سے تمام گناہ ناخنوں کے نیچے سے نکل جائیں گے۔مسلم۔ انگریزی میں ’sins‘ علامتی زبان کے مطابق انسانوں کے لیے نقصان دہ جراثیم، بیکٹیریا اور فنگس کے ساتھ ایک جیسے معنی رکھتا ہے۔وضو جلد کے کینسر کو روکتا ہے۔ وضو سے پہلے مسواک کا استعمال، غرارے کرنا، استنشاق، اور تین بار عمل کرنا، انسانی جسم کے لیے اہم طبی راز وں پر مشتمل ہے۔وضو میں جسم کے ان اعٖضاء کی صفائی پر زیادہ زور دیا گیا ہے جو جراثیم سے آلودہ ہونے کا بہت زیادہ خطرہ رکھتے ہیں۔باقاعدگی سے وضو کرنے سے انسان کی جلد کی سطح اور اندرونی جلد پر موجود دھول اور دیگر خطرناک مواد کو ختم کیا جا سکتا ہے اور روکا جا سکتا ہے۔ جلد کی سطح ہمیشہ جراثیم اور گندگی سے صاف رہے گی۔ مزید یہ کہ اس کا اندرونی خول کی صحت پر بڑا اثر پڑے گا تاکہ اندرونی جلد فعال طور پر اچھی اور نارمل رہ سکے۔پانی بالوں کے ٹشوز کو مضبوط کر تاہے، لٹ والے بال، خون، اعصاب، اور چوٹیاں جلد کی سطح کے قریب ہوتی ہیں تاکہ ہر حصے متحرک اور مسلسل کام کر سکیں۔

 

جلد کے کینسر کی وجوہات، زیادہ تر جلد کی سطح پر پھیلنے والے کیمیکلز، خاص طور پر کیمیائی مصنوعات کے اثرات کی وجہ سے ہوتی ہیں۔ ایسا جلد کو بار بار دھو کر کیا جا سکتا ہے، تاکہ جلد پر کیمیکلز کے اثر کو کم کیا جا سکے۔ طبی محققین کے مطابق دنیا میں زیادہ تر لوگ جو رسولیوں، پھیپھڑوں کے کینسر، تلی، گردے اور مثانے کی خرابی میں مبتلا ہیں، ان کی آمد کے اور اس کا سبب ہاتھوں کے زریعے مختلف دھاتوں کی منتقلی جو جلد کے چھیدوں کے ذریعے جسم میں کیمیکل مواد کے داخلے کا سبب بنتے ہیں۔خاص طور پر الٹرا وائلٹ شعاعیں جو جلد کے کینسر کا سبب بن سکتی ہیں۔آج کل، انسانی صحت اور ترقی کے اعدادوشمار جلد کے کینسر میں اضافہ کو ظاہر کرتے ہیں۔ جلد کا کینسر زیادہ تر مغربی ممالک خصوصاً امریکہ اور آسٹریلیا کے باشندوں پر حملہ آور ہوتا ہے۔یہ بیماری مشرقی ممالک بشمول ریاستی عرب اور دیگر مسلمان آبادی کو بھی متاثر کرتی ہے۔وضو کی مشق اس بیماری کو روک سکتی ہے کیونکہ وضوجلد کی سطح کو گیلا کرنے میں مدد دیتاہے۔روزمرہ کی زندگی میں ہم پیتھوجینز، آلودگی اور دیگر نقصان دہ مادوں سے گھرے ہوئے ہیں۔

 

یہ پیتھوجینز اور نقصان دہ مادے ہمارے آلودہ ہاتھوں سے منہ، ناک اور آنکھوں کے ذریعے براہ راست یا بالواسطہ ہمارے جسم میں داخل ہو سکتے ہیں۔ متعدی بیماری کے کنٹرول کا ایک بڑا پہلو ”ٹرانسمیشن کی زنجیر کو توڑنایا اس میں رکاوٹ پیدا کرنا ہے۔ ٹرانسمیشن کی زنجیر کو توڑنے میں ذاتی حفظان صحت ایک اہم عمل ہے۔ ذاتی حفظان صحت کی کمی کے ساتھ ساتھ ناقص صفائی ستھرائی ایک شخص سے دوسرے شخص میں انفیکشن کی منتقلی کا سبب بنتی ہے۔اس کی ایک مثال ہندوستان میں 1984 کی پیچش کی وبا ہے۔وضو منہ، آنتوں اور بعض رابطے کے انفیکشن کو روکتا ہے جیسے جلد اور آنکھوں، سانس کا انفیکشن وغیر ہے۔سائنسی طور پر یہ ثابت ہے کہ وضو انسانی جسم کے کھلے ہوئے حصوں کو صاف کرنے کے لیے موزوں ترین عمل ہے۔ہاتھ سب سے عام ذریعہ ہے جس کے ذریعے پیتھوجینک ایجنٹ جلد، ناک، آنتوں وغیرہ کے ساتھ ساتھ دیگرحصوں تک منتقل ہوتے ہیں۔ انفیکشن کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے ہاتھ دھونا سب سے مؤثر طریقہ ہے۔ کرٹس اور کیرن کراس کے ایک جائزے سے پتہ چلتا ہے کہ صابن سے ہاتھ دھونا، خاص طور پر پاخانے کے ساتھ رابطے کے بعداسہال کے واقعات کو 42-47٪ تک کم کر سکتا ہے، جب کہ Rabie et al تجویز کرتا ہے کہ ہاتھ دھونے سے سانس کے انفیکشن میں 16 فیصد کمی ممکن ہے۔ CoVID-19 کی روک تھام کے لیے ہاتھ دھونے پر بہت زور دیا جاتا ہے۔ درحقیقت یہ وائرس کے پھیلاؤ کو محدود کرنے کے لیے ایک اہم اقدام ہے۔مسواک یا انگلی کا استعمال کھانے کے ذرات کو ہٹاتا ہے، دانتوں اور مسوڑھوں کو مضبوط کرتا ہے اور منہ کے انفیکشن کو روکتا ہے۔

 

مسواک ایک روایتی چبانے والی چھڑی ہے جسے سلواڈورپرسیکا کی جڑوں، ٹہنیوں اور تنے سے تیار کیا جاتا ہے اور اسے ہزاروں سالوں سے دنیا کے کئی حصوں میں دانتوں کی صفائی کے لیے قدرتی طریقہ کے طور پر استعمال کیا جا رہا ہے۔ متعدد سائنسی مطالعات نے ثابت کیا ہے کہ مسواک (سالواڈورپرسیکا) میں اینٹی بیکٹیریل، اینٹی فنگل، اینٹی وائرل، اینٹی کیریوجینک اور اینٹی پلاک خصوصیات ہیں نتھنوں کو تین بار صاف کیا جائے۔ ناک کی صفائی اینٹی جینز اور پیتھوجینز کو دھوتی ہے جو ناک جم سکتے ہیں۔ دوسرا، یہ ناک کی رطوبتوں کو پتلا کرتا ہے، اس طرح موٹی بلغم کو صاف کرنے کے لیے بلغم کی حرکت کو آسان بناتا ہے۔ اور تیسرا، ہائپرٹونک محلول میوکوکیلیری موٹیلٹی کو بہتر بناتا ہے، اس طرح میوکوکیلیری کلیئرنس کو بہتر کرتا ہے۔ ناک کلی کرنا الرجک rhinitis اور rhinosinusitis کے علاج میں ایک ثابت شدہ ضمنی تکنیک ہے۔ چہرہ دھوئیں (ماتھے پر بالوں کی لکیر سے جہاں سے چہرے کے بال شروع ہوتے ہیں اور کان سے کان تک)۔ یہ تین بار کرنا ہے۔ سی ڈی سی کے مطابق، بہت سی بیماریوں اور حالات کو مناسب ذاتی حفظان صحت کے ذریعے روکا یا کنٹرول کیا جا سکتا ہے اور چہرے کے کچھ حصوں کو صابن اور صاف، بہتے پانی (اگر دستیاب ہو) سے بار بار دھونے سے بھی روکا جا سکتا ہے۔

 

چہرے کی صفائی کا ایک عام فائدہ چہرے اور آنکھوں سے گندگی، تیل اور دیگر ناپسندیدہ ملبے کو ہٹانا ہے۔ دن بھر ہمارے چہرے کی جلد مسلسل بیکٹیریا، آلودگی، وائرس، گندگی اور پرانے (مردہ) جلد کے خلیات سے ڈھکی رہتی ہے۔ یہ عمل ہمیں آنکھوں کی مختلف پانی سے دھونے والی بیماریوں جیسے ٹریچوما، آشوب چشم وغیرہ سے بچاتا ہے۔مسح کرنا سر سے پیتھوجینز اور گندگی کے ذرات کو صاف کرتا ہے، کانوں سے اضافی موم کو ہٹاتا ہے اور موم کے جمع ہونے اور کان کے انفیکشن کو روکتا ہے۔ پیروں کو اچھی طرح دھونا اور انگلیوں کے درمیان دھونا پاؤں کی حفظان صحت کا بنیادی اور اہم حصہ ہے۔ یہ عمل ہمیں پاؤں کے مختلف انفیکشن، فنگل یا بیکٹیریل سے بچاتا ہے۔ اس کے علاوہ، بار بار پاؤں دھونے سے ہک کیڑے کے انفیکشن کے امکانات کو روکا جا سکتا ہے کیونکہ اس کا لاروا جلد کے ذریعے جسم میں داخل ہوتا ہے۔وضو ذاتی حفظان صحت کا کسی لاگت کے بغیر آسان، بہتر طریقہ ہے تاکہ کمیونٹی میں انفیکشن کے پھیلاؤ کو روکا جا سکے کیونکہ اس میں صفائی کا بہتر پروٹوکول ہے اور ہر ایک کے لیے صرف صاف پانی کی ضرورت ہے۔ نماز سے پہلے وضو کرنے کے علاوہ کھانا کھانے سے پہلے، مریضوں کی عیادت کے وقت، سفر کے لیے گھر سے نکلنے سے پہلے اور سونے سے پہلے بھی مستحب اور مستحب ہے۔

 


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
72133