Chitral Times

Jun 13, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

چترال ڈویلپمنٹ نیٹ ورک کے زیراہتمام خواتین کو فیصلہ سازی کے عمل میں برابر نمائندگی دینے کے حوالے ایک اہم اجلاس

Posted on
شیئر کریں:

چترال ڈویلپمنٹ نیٹ ورک کے زیراہتمام خواتین کو فیصلہ سازی کے عمل میں برابر نمائندگی دینے کے حوالے ایک اہم اجلاس

چترال(نمایندہ چترال ٹایمز )چترال ڈویلپمنٹ نیٹ ورک (سی سی ڈی این ) کے زیراہتمام  گزشتہ روز آغاخان رورل سپورٹ پروگرام چترال کے بیسٹ فارویرپراجیکٹ کی مالی معاونت سےخواتین کی صنفی مساوات، سیاسی، سماجی، ثقافتی، دانشورانہ اور معاشی زندگی کے تمام شعبوں میں فیصلہ سازی کے عمل میں برابر نمائندگی دینے کے حوالے ایک اہم اجلاس سی سی ڈی این کے دفترمیں منعقد ہوئی ۔

جس میں چیئرمین سی سی ڈی این رحمت الہی ،عوامی نیشنل پارٹی کے میرعبادالرحمن،مقصوداحمد،جماعت اسلامی کے فواداحمد،پاکستان پیپلزپارٹی کے وقاراحمدایڈوکیٹ،کے اے ڈی پی کے چیئرمین عبدالغفارلال،وائس چیئرمین سی سی ڈی این نازیہ حسن،منیجرسی سی ڈی این بی بی آمنہ اوردوسروں نے شرکت کی ۔باہمی گفتگومیں انہوں نے کہاکہ چترال میں گھرسے دورپولنگ اسٹیشن یامشترکہ پولنگ اسٹیشنز میں خواتین کوکئی مشکلات کاسامناہوتاہے ۔ پولنگ اسٹیشن میں رش ہونے کی وجہ سے انتخابی عمل سست روی کاشکارہوتاہے اورخواتین کوکئی گھنٹوں تک انتظارکرناپڑتاہے۔

 

انہوں نے کہاکہ ان مسائل کو حل کرنے کے لیے خواتین میں انتخابات، ووٹ اور حق رائے دہی کے استعمال کی افادیت اور اہمیت سے متعلق آگاہی پیدا کرنے کی ضرورت ہے، جبکہ الیکشن کمیشن آف پاکستان کو پولنگ سٹیشنز ووٹرز کے گھروں کے قریب ترین جگہوں کے قریب اور سماجی و ثقافتی اقدار کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے مرد اور خواتین کے لیے الگ الگ پولنگ سٹیشنز قائم کیے جانا چاہیے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ اکثرخواتین سیاسی ورکروں کی جانب سے یہ شکایت بھی سننے کو ملتی ہے کہ ان کو اپنی ہی جماعت کے مرد حضرات کی جانب سے مخالفت کا سامنا رہتا ہے۔ایسے رویوں کے باعث اکثر خواتین رہنما اپنی جماعتوں کوچھوڑنے پر مجبور ہوجاتی ہیں۔معاشرے کی ترقی کیلئے خواتین کی سیاسی میدان میں کامیابی اور ٹیکنالوجی تک رسائی بے حدضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ صنفی مساوات اور خواتین کو بااختیار بنانے کے لئے خواتین کوسیاسی عمل کے پہلووں میں اکثرمعاشرتی اورثقافتی رکاوٹوں ،سیاسی تربیت کی کمی،سیاسی تنظیم سازی کے وسائل کی عدم موجودگی اورغیریقینی معاشی چیلنجوں کوختم کرنے کی ضرورت ہے۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, چترال خبریںTagged
71918