Chitral Times

Apr 14, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

سیاسی نظام میں اسٹیبلشمنٹ ضروری یا جمہوریت کے لیے خطرہ – قادر خان یوسف زئی 

Posted on
شیئر کریں:

سیاسی نظام میں اسٹیبلشمنٹ ضروری یا جمہوریت کے لیے خطرہ – قادر خان یوسف زئی

پاکستان کے سیاسی نظام کو مختلف عوامل کی وجہ سے گزشتہ برسوں کے دوران متعدد چیلنجز اور عدم استحکام کا سامنا ہے، جس میں اسٹیبلشمنٹ کا ملکی سیاست میں قیام پاکستان سے لے کر موجودہ دور تک بالواسطہ یا بلا واسطہ آئینی مداخلت پاکستان کی تاریخ کا ناقابل فراموش حصہ ہیں، جس نے جمہوری عمل میں خلل ڈالا ہے اور مطلق العنان حکمرانی کے ادوار کا باعث بنا۔ دوسری جانب پاکستان میں کرپشن ایک مستقل مسئلہ رہا ہے اور اس نے حکومت پر عوام کے اعتماد کو ختم کر دیا۔ اس کی وجہ سے بھی سیاست دانوں کے لیے مؤثر طریقے سے حکومت کرنا اور پالیسیوں پر عمل درآمد کرنا مشکل ہو گیا ہے بالخصوص ان حالات میں کہ بیشتر سیاست دان کرپشن کے الزامات کی زد میں بھی ہوں، شائد یہی وجہ ہو کہ ملک کے سیاسی ادارے، جیسے عدلیہ، اکثر کمزور اور جوڑ توڑ کا شکار رہے ہیں، جس نے قانون کی حکمرانی کو کمزور کیا ہے اور سیاسی عدم استحکام میں کردار ادا کیا۔ ایک اور وجہ نے بھی نسلی، مذہبی اور علاقائی خطوط پر سیاسی پولرائزیشن اور تقسیم نے سیاسی رہنماؤں کے لئے مؤثر اتحاد تشکیل دینا اور ملک پر جمہوری حکمرانی کرنا مشکل بنا دیا۔

ہمیشہ کی طرح پاکستان کو غربت، بے روزگاری اور بڑھتے ہوئے بجٹ خسارے جیسے متعدد معاشی چیلنجز کا سامنا ہے، جس نے حکومت پر دباؤ ڈالا اور سیاسی عدم استحکام میں کردار ادا کیا ہے بھارت اور افغانستان جیسے ہمسایہ ممالک کے ساتھ تناؤ نے بھی ملکی سیاست پر عدم استحکام کے اثرات مرتب کیے ہیں یہ بھی وہ عوامل ہیں جو پاکستان میں سیاسی عدم استحکام کا باعث بنے ہیں۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ یہ چیلنجز پیچیدہ اور باہم مربوط ہیں، اور ان سے نمٹنے کے لئے کثیر الجہتی اور پائیدار کوششوں کی ضرورت ہوگی۔

اسٹیبلشمنٹ نے ملکی سیاست میں اہم کردار ادا کیا ہے اور اکثر یہ الزام عائد کیا جاتا ہے کہ وہ سیاسی نتائج کی تشکیل کے لئے جمہوری عمل میں مداخلت کرتی ہے۔ خاص طور پر فوج کی سیاست میں مداخلت کی ایک طویل تاریخ ہے، وہ ماضی میں طویل مدت تک ملک پر حکومت کر چکی ہے۔ انٹیلی جنس سروسز پر انتخابات پر اثر انداز ہونے اور مخصوص امیدواروں کو فروغ دے کر سیاسی نتائج کو مبینہ تشکیل دینے میں کردار ادا کرنے کا بھی الزام عائد کیا جاتا ہے۔ واضح رہے کہ سابق آرمی چیف ملک میں سیاسی مداخلت کا بر ملا اعتراف کر چکے ہیں کہ اب”اسٹیبلشمنٹ غیر جانب دار رہے گی۔ جمہوری عمل میں مداخلت کے علاوہ اسٹیبلشمنٹ پر اپنے مفادات کو فروغ دینے اور اپنا اثر و رسوخ برقرار رکھنے کے لیے میڈیا، سول سوسائٹی اور دیگر اداروں پر بھی اثر انداز ہونے کا الزام عائد کیا جاتا رہا ہے۔ پاکستان کی سیاست میں اسٹیبلشمنٹ کا کردار ایک پیچیدہ اور متنازع مسئلہ ہے اور اس حوالے سے مختلف نقطہ نظر اور تشریحات موجود ہیں۔ کچھ لوگوں کا کہنا ہے کہ سیاسی افراتفری اور بدعنوانی کے پیش نظر استحکام برقرار رکھنے کے لیے اسٹیبلشمنٹ ضروری رہی ہے جبکہ دیگر اسے جمہوریت کے لیے خطرہ اور سیاسی عدم استحکام میں اہم کردار کے طور پر دیکھتے ہیں۔

پاکستان کی خارجہ پالیسی اور بین الاقوامی برادری میں پوزیشن ایک پیچیدہ اور کثیر الجہتی مسئلہ ہے جو متعدد عوامل سے متاثر ہوتا ہے۔ کچھ عوامل جو خارجہ محاذ پر اس کی مبینہ کمزوری کا سبب بنتے ہیں ان میں شامل ہیں سیاسی عدم استحکام اور حکومت میں تبدیلیوں نے پاکستان کے لئے مستقل اور موثر خارجہ پالیسی پر عمل کرنا مشکل بنا دیا ہے۔ پاکستان کے معاشی چیلنجز، جیسے غربت، بے روزگاری اور بڑھتے ہوئے بجٹ خسارے نے اس کی مضبوط خارجہ پالیسی پر عمل کرنے اور بین الاقوامی سطح پر اپنا اثر و رسوخ پیش کرنے کی صلاحیت کو محدود کر دیا ہے بھارت اور افغانستان جیسے ہمسایہ ممالک کے ساتھ تناؤ نے ملک کی خارجہ پالیسی پر عدم استحکام کے اثرات مرتب کیے ہیں اور اپنے ہمسایوں کے ساتھ موثر تعلقات استوار کرنے کی اس کی صلاحیت کو محدود کردیا ہے۔ دہشت گردی اور انتہا پسندی کے ساتھ تعلق کی وجہ سے ان ممالک کے امیج اور ساکھ کو نقصان پہنچا ہے جس کی وجہ سے ملک کے لیے دوسرے ممالک کے ساتھ مضبوط تعلقات استوار کرنا اور بین الاقوامی سطح پر اپنا اثر و رسوخ ظاہر کرنا مشکل ہو گیا ہے۔

پاکستان کے محدود وسائل، جیسے فوجی اور سفارتی کور نے ملک کے لئے ایک مضبوط خارجہ پالیسی پر عمل کرنا اور بین الاقوامی سطح پر اپنے مفادات کا مؤثر طریقے سے دفاع کرنا مشکل بنا دیا ہے یہ وہ عوامل ہیں جو خارجہ محاذ پر پاکستان کی کمزوری کا سبب بنتے ہیں۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ صورتحال پیچیدہ ہے اور بین الاقوامی برادری میں ملک کی پوزیشن کو بہتر بنانے کے لئے طاقت اور مواقع بھی موجود ہیں جن سے فائدہ اٹھایا جا سکتا ہے۔ تحریک انصاف وزیر خارجہ پر تنقید میں افغانستان کا دورہ نہ کرنے پر تنقید کا نشانہ بناتی ہے تاہم مبصرین کے مطابق بلاول بھٹو کے افغانستان کا دورہ نہ کرنے کی کئی وجوہات ہوں، جیسے سیکیورٹی خدشات، دونوں ممالک کے درمیان سفارتی تعلقات یا ان کی سیاسی ترجیحات۔ سیاسی رہنما اکثر مختلف عوامل کی بنیاد پر اپنے سفر کو ترجیح دیتے ہیں، بشمول ان کا داخلی سیاسی ایجنڈا، خارجہ پالیسی کے اہداف، اور ان کے دوروں کی مبینہ اہمیت۔ یہ بھی ممکن ہے کہ ان کے پاس دیگر وعدے تھے جن کی وجہ سے وہ افغانستان کا دورہ نہیں کر سکے، یا یہ کہ ان کا دورہ طے نہیں کیا گیا۔ یہ ہمیشہ ممکن ہے کہ اگر موقع ملا تو وہ مستقبل میں افغانستان کا دورہ کریں اور یہ ان کے سیاسی اور سفارتی مقاصد سے مطابقت رکھتا ہے۔ یہاں ایک امر یہ بھی غور طلب ہے کہ اسٹیبلشمنٹ ہی سیاسی دوروں کے لئے فضا ساز گار کرتی رہی ہے۔ اس لئے سیاسی پنڈت کی رائے ہے کہ اسٹیبلشمنٹ کا کردار ملکی سیاست سے بالکل ختم نہیں ہونا چاہے۔

اسٹیبلشمنٹ، جس میں فوج، انٹیلی جنس سروسز اور دیگر با اثر ریاستی ادارے شامل ہیں، پاکستان میں سیاسی استحکام کو فروغ دینے میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔ عدلیہ جیسے جمہوری اداروں کی حمایت اور قانون کی حکمرانی کا احترام کرتے ہوئے اسٹیبلشمنٹ ایک مستحکم اور متوقع سیاسی ماحول پیدا کرنے میں مدد دے سکتی ہے جو استحکام اور ترقی کے لیے سازگار ہو۔سیاست میں مداخلت سے گریز اور جمہوری عمل کو بغیر کسی مداخلت کے کام کرنے کی اجازت دے کر اسٹیبلشمنٹ استحکام اور قانونی حیثیت کو فروغ دینے میں مدد دے سکتی ہے۔ سیاسی رہنماؤں اور جماعتوں کو تعمیری مکالمے میں مشغول ہونے اور مشترکہ مقاصد کے لیے مل کر کام کرنے کی ترغیب دے کر اسٹیبلشمنٹ ایک مستحکم سیاسی ماحول کو فروغ دینے میں مدد دے سکتی ہے۔ معیشت کو مضبوط بنانے اور غربت، بے روزگاری اور عدم مساوات جیسے مسائل کو حل کرنے کے لئے کام کرکے، اسٹیبلشمنٹ استحکام کو فروغ دینے اور معاشرتی بدامنی کے خطرے کو کم کرنے میں مدد کر سکتی ہے۔

ہمسایہ ممالک کے ساتھ استحکام اور تعاون کو فروغ دے کر، اسٹیبلشمنٹ ایک زیادہ محفوظ اور متوقع علاقائی ماحول پیدا کرنے میں مدد کر سکتی ہے جو استحکام اور ترقی کے لئے سازگار ہے۔ یہ کچھ اقدامات ہیں جو اسٹیبلشمنٹ پاکستان میں سیاسی استحکام کو فروغ دینے کے لئے آئینی دائرے میں ادا کر سکتی ہے۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ ان کوششوں کے لئے ایک پائیدار اور کثیر جہتی کوشش کی ضرورت ہوگی، اور حکومت، سول سوسائٹی اور نجی شعبے جیسے دیگر کرداروں کے ساتھ تعاون اور ہم آہنگی کی ضرورت ہوگی۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
71339