Chitral Times

May 29, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

تنہا پہاڑ – تحریر ۔شکیل احمد

Posted on
شیئر کریں:

تنہا پہاڑ – تحریر ۔شکیل احمد

 فلم کا آغاز سرسبز و شاداب جنگلات سے گھرے شاندار چترال کے پہاڑوں کے شاٹ سے ہوتا ہے۔  کیمرہ پھر پہاڑوں کے دامن میں بسے ایک چھوٹے سے گاؤں میں زوم کرتا ہے۔  یہ گاؤں ایک قابل فخر اور نرم مزاج چترالی لوگوں کا گھر ہے۔
 ہمارا تعارف ایک نوجوان چترالی لڑکی “ناشرہ” سے ہوا، جو اپنے خاندان کی توقعات کے بوجھ سے نبرد آزما ہے۔  ناصرہ کے والد کمیونٹی کے ایک معزز رکن ہیں، لیکن وہ سخت اور سخت مزاج بھی ہیں۔  وہ چاہتا ہے کہ ناصرہ ان کے نقش قدم پر چلیں اور کمیونٹی میں ایک رہنما بنیں، لیکن ناصرہ کی دوسری خواہشات ہیں۔
 ناصرہ ایک فنکار بننے کا خواب دیکھتی ہے، لیکن وہ اپنے گھر والوں کی توقعات میں پھنسے اور گھٹن محسوس کرتی ہے۔  اسے ایسا لگتا ہے کہ اس کے پاس کوئی بات کرنے والا نہیں ہے اور نہ ہی کوئی رخ کرنے والا ہے۔  تنہائی اور دباؤ اس پر اثر انداز ہو رہا ہے، اور وہ خودکشی کے بارے میں سوچنے لگتی ہے۔
 ایک دن ناشرہ کی ملاقات ایک پرانے فنکار سے ہوئی جو گاؤں میں پہاڑوں کو پینٹ کرنے آیا تھا۔  فنکار ناصرہ میں دلچسپی لیتا ہے اور اسے اپنے شوق کو آگے بڑھانے کی ترغیب دیتا ہے۔  ناصرہ فنکار کے سامنے کھلتی ہے اور اپنی جدوجہد اور خوابوں کو بتاتی ہے۔
 آرٹسٹ ناصرہ کو پینٹ کرنا سکھاتا ہے، اور جیسے ہی وہ پینٹ کرتی ہے، وہ اپنے فن میں سکون تلاش کرنے لگتی ہے۔  وہ پہاڑ جو کبھی جیل کی طرح محسوس ہوتے تھے، اب تحریک کا ذریعہ بن گئے ہیں۔  ناصرہ کو احساس ہے کہ اسے اپنے والد کے نقش قدم پر چلنے کی ضرورت نہیں ہے، اور وہ اپنا راستہ خود بنا سکتی ہے۔
 فلم کا اختتام ناصرہ کے چہرے پر مسکراہٹ کے ساتھ پہاڑوں کا ایک خوبصورت پورٹریٹ پینٹ کرنے کے ساتھ ہوتا ہے۔  اس کے برش اسٹروک کی آواز ہوا کو بھر دیتی ہے، جیسے وہ آخرکار اپنی آواز ڈھونڈ رہی ہو۔
 فلم کا پیغام یہ ہے کہ اپنے راستے پر چلنا اور اپنی آواز تلاش کرنا ضروری ہے، اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ دوسرے آپ سے کیا توقع رکھتے ہیں۔  یہ تنہائی کے تباہ کن اثرات اور مدد اور رہنمائی تلاش کرنے کی اہمیت کو اجاگر کرتا ہے۔۔

شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
71310