Chitral Times

Feb 8, 2023

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

صحت کارڈ پلس کے تحت جنوری 2022 سے30 نومبر2022 ءتک 10 لاکھ 58 ہزار797 مریضوں پر 25 ارب 83 کروڑ 40 لاکھ روپے لاگت آئی ۔ وزیراعلیِ

Posted on
شیئر کریں:

صحت کارڈ پلس کے تحت جنوری 2022 سے30 نومبر2022 ءتک 10 لاکھ 58 ہزار797 مریضوں پر 25 ارب 83 کروڑ 40 لاکھ روپے لاگت آئی ۔ وزیراعلیِ

پشاور ( چترال ٹایمز رپورٹ ) وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے صحت کارڈ پلس کو غریب پرور اور عوام دوست منصوبہ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ صحت کارڈ پلس سکیم نہ صرف مفت علاج معالجے کی سہولیات کا ایک جامع پیکج ہے بلکہ یہ سماجی تحفظ کا ایک پروگرام ہے جو غربت کی شرح کو کم کرنے اور لوگوں کے معیار زندگی کو بہتر بنانے میںبھی مدد فراہم کر رہا ہے ۔ پیر کے روز وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ سے جاری اپنے ایک بیان میں وزیراعلیٰ نے کہاکہ صحت کارڈ پلس پاکستان تحریک انصاف کی صوبائی حکومت کا ایک انقلابی قدم ہے جس سے خیبرپختونخوا کے لاکھوں افراد بلا امتیازمستفید ہورہے ہیں ۔ صحت کار ڈ پلس کو نہ صرف قومی سطح پر پذیرائی ملی ہے بلکہ بین الاقوامی سطح پر بھی سراہا گیا ہے ۔

 

تفصیلات کے مطابق صحت کارڈ پلس کے تحت جنوری 2022 سے30 نومبر2022 ءتک 10 لاکھ 58 ہزار797 مریضوں کے ایڈمشنز کئے گئے ہیں جن پر 25 ارب 83 کروڑ 40 لاکھ روپے لاگت آئی ہے ۔ اسی عرصے کے دوران 73 کڈنی ٹرانسپلانٹ اور 49 لیور ٹرانسپلانٹ کئے گئے ہیں جن پر بالترتیب 10 کروڑ 20 لاکھ روپے اور19 کروڑ90 لاکھ روپے لاگت آئی ہے ۔اس کے علاوہ 47 ہزار 679 کارڈیالوجی ، ایک لاکھ46 ہزار840 جنرل سرجری، ایک لاکھ 24 ہزار328 گائنی، ایک لاکھ42 ہزار615 میڈیکل، 16 ہزار340 نیورو سرجری،52 ہزار 481 آرتھو پیڈک،37 ہزار384 انکالوجی ، 42 ہزار914 یورالوجی،3 ہزار388 کارڈیک سرجری ، ایک لاکھ 71 ہزار195 ڈائیلاسز،48 ہزار386 تھروٹ اور55 ہزار 229 اپتھمالوجی کے مریضوں کے ایڈمشن کئے گئے ہیں۔

 

واضح رہے کہ خیبرپختونخوا کے 96 لاکھ سے زائد خاندان صحت کارڈ کے تحت رجسٹرڈ ہیں جوسالانہ 10 لاکھ روپے تک مفت علاج کی سہولت حاصل کر سکتے ہیں۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ صوبائی حکومت صحت کارڈ منصوبے کی افادیت کو مدنظر رکھتے ہوئے اس میں مزید بیماریوں کے علاج کو بھی شامل کر نے کیلئے اقدامات کر رہی ہے جس کا مقصد شہریوں کو زیادہ سے زیادہ ریلیف فراہم کرنا ہے تاکہ شہری علاج کی مد میں خرچ ہونے والی رقم تعلیم اور دیگر ضروریات زندگی کو پورا کرنے میں خرچ کریں ۔ اُنہوںنے صحت کارڈ منصوبے کو چیئرمین عمران خان کے فلاحی ریاست کے وژن کی جانب ایک اہم قدم قرار دیا ہے اور کہا ہے کہ اس منصوبے کو قانونی تحفظ دینے کیلئے خیبرپختونخوا یونیورسل ہیلتھ کوریج ایکٹ2022 منظور کرایا گیا ہے۔


شیئر کریں: