Chitral Times

Feb 6, 2023

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

کیا پاک افغان بارڈر متنازعہ ہے؟ ۔ ڈاکٹر زین اللہ خٹک

شیئر کریں:

کیا پاک افغان بارڈر متنازعہ ہے ؟ ۔ ڈاکٹر زین اللہ خٹک

 

ڈیورنڈ لائن پاکستان اور افغانستان کے درمیان سرحد ہے، یہ شمال میں واہ خان سے شروع ہوکر جنوب میں چاغی (بلوچستان) میں 2430 کلومیٹر کے رقبے پر پھیلی ہوئی ہے۔ وہ علاقہ جہاں ڈیورنڈ لائن کھینچی گئی ہے وہ چٹانی پہاڑ اور نیم زرخیز وادیاں ہیں۔ قبائلی پٹی کو پاکستان اور  افغانستان کے درمیان بفر زون میں تبدیل کر دیا گیا تھا۔ ڈیورنڈ لائن 12 نومبر 1893 کو افغانستان کے دارالحکومت کابل میں امیر افغانستان امیر عبدالرحمن خان اور برطانوی حکومت کے نمائندے مسٹر مورٹیمر ڈیورنڈ کے درمیان ایک معاہدے کے ذریعے کھینچی گئی۔

ڈیورنڈ لائن معاہدہ، سات آرٹیکلز پر مشتمل ایک مختصر دستاویز، بغیر کسی مدت یا مدت ختم ہونے کا ذکر کیے بغیر باضابطہ طور پر دستخط کی گئی اور بعد میں چار مختلف کمیشن – ہندوکش کمیشن، کرم کمیشن، وزیرستان کمیشن، اور بلوچستان کمیشن – کو عملی طور پر حد بندی کرنے کے لیے مقرر کیا گیا۔ افغانستان اور برطانوی ہند کے درمیان لائن ان کمیشنوں کو اپنی ذمہ داریاں نبھانے میں کسی قسم کی رکاوٹ کا سامنا نہیں کرنا پڑا اور نہ ہی مقامی برادریوں کی طرف سے کسی قسم کی مخالفت کی وجہ سے اس حقیقت کی وجہ سے کہ ڈیورنڈ لائن کے مشرق کا علاقہ پہلے ہی برطانوی ہندوستان کے انتظامی کنٹرول میں تھا۔مزید برآں یہ بات قابل ذکر ہے کہ انگریزوں نے یہ علاقہ سکھوں سے فتح کیا تھا۔ افغانستان کے امیر عبدالرحمن خان برطانوی ہند کے ساتھ طے پانے والے سرحدی معاہدوں پر بہت خوش اور مطمئن تھے۔ انہوں نے کہا کہ “اس وقت جب میں افغانستان کے جاگیردارانہ نظام کو توڑنے اور ملک کو ایک مضبوط ریاست میں ڈھالنے میں مصروف تھا، میں پڑوسی ممالک کے ساتھ اپنی سرحدوں کے تعین کی ضرورت سے نہ تو بے خبر تھا اور نہ ہی غافل تھا۔ میں اچھی طرح جانتا تھا کہ میری سلطنت کی حفاظت کے لیے اور ان کی پیش قدمی پر نظر رکھنے اور غلط فہمیوں اور تنازعات سے نجات کے لیے اپنے اور اپنے پڑوسیوں کے درمیان سرحدی روابط کو نشان زد کرنا ضروری ہے۔”معاہدے کے نتیجے میں امیر عبدالرحمن خان کو برطانوی حکومت سے 18 لاکھ روپے کا الاؤنس ملا۔ لہٰذا یہ ثابت ہوا کہ ڈیورنڈ لائن معاہدہ طاقت کے استعمال یا دھمکیوں کے ذریعے نہیں بلکہ دونوں فریقوں نے سفارتی طور پر اس پر باہمی رضامندی سے متعارف کرایا تھا۔ عبدالرحمن خان اور سر مورٹیمر ڈیورنڈ نے نجی طور پر مذاکرات کئے۔ سر مورٹیمر ڈیورنڈ فارسی زبان کے ماہر تھے اس لیے وہ فارسی زبان میں بات کرتے تھے۔ “خطہ میں ترقی اور خوشحالی لانے کے لیے انسان کی نیک نیتی کے لیے سرحدیں کھینچی گئی ہیں۔ یہ عوام کی تقسیم کے لیے تیار نہیں کی گئی ہے۔”

ڈیورنڈ لائن معاہدہ افغانستان کے ہر قسم کے خدشات کو ختم کرتا ہے جیسا کہ افغانستان کے امیر نے کہا کہ سرحدی معاملات کے بارے میں جو غلط فہمیاں اور تنازعات پیدا ہو رہے تھے ان کا خاتمہ مذکورہ معاہدے کے مطابق سرحدی لائنوں کو نشان زد کرنے کے بعد کر دیا گیا۔ دونوں حکومتوں کے کمشنروں نے دونوں حکومتوں کے درمیان عمومی امن اور ہم آہنگی کا مطالبہ کیا، جو میں دعا کرتا ہوں کہ خدا ہمیشہ جاری رکھے۔ امیر عبدالرحمن خان کی وفات کے بعد امیر حبیب اللہ خان، امیر عبدالرحمن کے بیٹے کو افغانستان کا حکمران مقرر کیا گیا۔امیر حبیب اللہ خان نے اپنے والد اور برطانوی حکومت کے درمیان ہونے والے تمام معاہدوں پر اتفاق کیا اور ان کا احترام کیا۔ افغانستان کے اگلے بادشاہ امان اللہ خان نے 1919 میں برطانوی حکومت کے ساتھ معاہدہ راولپنڈی پر دستخط کیے۔ راولپنڈی معاہدے کے پیراگراف نمبر 05 میں کہا گیا ہے کہ ‘افغانستان حکومت ڈیورنڈ لائن کی شرائط کو قبول کرتی ہے جسے امیر مرحوم نے قبول کیا تھا’۔ افغانستان کے بادشاہ نادر شاہ نے اپنی 1931 کی افتتاحی تقریر میں کہا، “میں نے بین الاقوامی قوانین کے اصولوں کے مطابق دوست ریاستوں کے ساتھ تمام معاہدوں کو تسلیم کیا”۔ نادر شاہ نے راولپنڈی معاہدے کی توثیق کی۔

میں ہندوستان اور پاکستان کے درمیان قائم ہونے والی آزادی کے دوران افغانستان ڈیورنڈ لائن کا مسئلہ نہیں اٹھاؤ گا اور نہ ہی 1947 میں صوبہ سرحد کے ریفرنڈم پر اعتراض کرو گا۔ ڈیورنڈ لائن معاہدہ اقوام متحدہ میں افغانستان کے نمائندے جناب حسین عزیز نے ستمبر 1947 میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے دوران کہا تھا کہ ’’ہم اس وقت تک صوبہ سرحد کو پاکستان کا حصہ تسلیم نہیں کر سکتے جب تک صوبہ سرحد کے لوگوں کو کسی بھی قسم کی آزادی کا موقع نہیں ملتا۔ اثر و رسوخ کاان کے لیے یہ طے کرنے کے لیے کہ وہ آزاد رہنا چاہتے ہیں یا پاکستان کا حصہ بننا چاہتے ہیں، کسی بھی قسم کے اثر و رسوخ سے پاک دہرائیں۔ اس وقت کی افغان حکومت نے نہ تو پشتون پٹی پر کنٹرول یا ملکیت کا دعویٰ کیا اور نہ ہی ڈیورنڈ لائن کو مسترد کیا۔ شاہ ولی خان پاکستان میں پہلے افغان سفیر تھے جنہوں نے کہا تھا کہ ’’ہمارا حکومت پاکستان سے کوئی تنازعہ نہیں ہے۔‘‘ افغانستان کے نمائندوں کے اسی طرح کے مسلسل تبصروں اور پالیسی موقف کے ساتھ اس طرح کے بیانات سے یہ بات واضح ہو گئی ہے کہ پاکستان کی آزادی کے بعد افغانستان نے ڈیورنڈ لائن پر کوئی دعویٰ نہیں کیا ہے اور نہ ہی ڈیورنڈ لائن سے متعلق ان تعلقات کو کنٹرول کرنے والے کسی بھی معاہدے کو مسترد کیا ہے۔پاکستانی پشتونوں نے آزادی ایکٹ 1947 کے تحت 16 جولائی 1947 کو ہونے والے ریفرنڈم کے ذریعے اپنی خواہشات کا اظہار کیا تھا، پاکستان میں شامل ہونے کے حق میں 99.9 فیصد ووٹ ڈالے گئے تھے۔ اس لیے افغانستان کا پشتونوں کے حق خودارادیت کا مطالبہ ذہن سے باہر ہے۔

 

23 اکتوبر 1947 کو افغانستان نے پاکستان کے خلاف اپنا منفی ووٹ واپس لے لیا اور ڈیورنڈ لائن کی سرحد کو تسلیم کر لیا۔ 1947 کے بعد پاکستان دولت مشترکہ کا رکن بنا جون 1950 کو برطانوی ہاؤس آف کامن میں اپنی تقریر کے دوران سیکرٹری آف اسٹیٹ آف کامن ویلتھ ریلیشن نے کہا کہ “برطانیہ میں ان کی عظمت کی حکومت نے اس اختلاف کو افسوس کے ساتھ دیکھا ہے جو پاکستان اور افغانستان کی حکومت کے درمیان حیثیت کے بارے میں موجود ہے۔ شمال مغربی سرحد پر واقع علاقوں کا۔ یہ ان کی عظمت کی حکومت کا نظریہ ہے کہ پاکستان بین الاقوامی قانون میں ہندوستان کی پرانی حکومت اور ان علاقوں میں برطانیہ میں ان کی عظمت کی حکومت کے حقوق اور فرائض کا وارث ہے اور یہ کہ ڈیورنڈ لائن بین الاقوامی سرحد ہے۔1956 میں، برطانیہ کے وزیر اعظم سر انتھونی ایڈن نے ڈیورنڈ لائن کے بارے میں کہا کہ “1947 میں پاکستان دولت مشترکہ کے ایک نئے خودمختار آزاد رکن کے طور پر وجود میں آیا۔ برطانوی حکومت نے اس بات کو مسترد کر دیا کہ پشتو بولنے والے لوگوں کی بھاری اکثریت کی مکمل رضامندی کے ساتھ انتظامی اور غیر انتظامی دونوں شعبوں میں اس طاقت کے استعمال میں کامیابیاں حاصل کی ہیں جو پہلے تاج کے ذریعے برصغیر کے شمالی مغربی علاقے میں استعمال کی جاتی تھی۔ ” برطانوی وزیراعظم کے بیان نے پاکستان اور افغانستان کے درمیان بین الاقوامی سرحد کے طور پر ڈیورنڈ لائن کی درستگی کو ثابت کردیاویانا کنونشن آن ریسپیکٹ ٹو ٹریٹیز (VCSSRT) کے آرٹیکل نمبر 11 میں کہا گیا ہے کہ ریاستوں کی جانشینی معاہدوں کے ذریعے بنائی گئی بین الاقوامی سرحد کو متاثر نہیں کر سکتی۔

6 سے 8 نومبر 1956 کو کراچی میں ہونے والے جنوب مشرقی ایشیا کے معاہدے کی تنظیم کے وزرائے خارجہ کی کونسلوں نے اپنے اجلاس میں اعلان کیا کہ کونسلوں کے اراکین نے سختی سے اعلان کیا کہ ان کی حکومت نے تسلیم کیا ہے کہ پاکستان کی خودمختاری ڈیورنڈ لائن کے درمیان بین الاقوامی سرحد تک پھیلی ہوئی ہے۔ پاکستان اور افغانستان نے اس کے نتیجے میں اس بات کی توثیق کی گئی کہ معاہدے کے آرٹیکل 4 اور آرٹیکل 8 میں جس معاہدے کا حوالہ دیا گیا ہے اس میں ڈیورنڈ لائن تک کا علاقہ شامل ہے۔ چنانچہ بین الاقوامی تنظیموں نے ڈیورنڈ لائن کو پاکستان اور افغانستان کے درمیان بین الاقوامی سرحد قرار دیا۔ ڈیورنڈ لائن کا مسئلہ پختون بیلٹ کے انتہا پسند قوم پرستوں اور پروپیگنڈوں نے ہمیشہ اٹھایا ہے۔ ان کے پاس ڈیورنڈ لائن کے خلاف اپنی دلیل کی حمایت کرنے کی کوئی قانونی وجہ نہیں ہے۔ قومی دھارے کے پشتون ڈیورنڈ لائن کو بین الاقوامی سرحد کے طور پر سپورٹ کر رہے ہیں۔ بین الاقوامی قانون میں پاکستان ہندوستان کی پرانی حکومت کے حقوق اور فرائض کا وارث ہے۔

موجود دور میں  ڈیورنڈ لائن کو بہت زیادہ جغرافیائی اہمیت حاصل ہے۔ پاکستان کی طرف بڑی تعداد میں افواج اور سرحد کے دوسری طرف طالبان سرحد  پار سے جھڑپیں روز کا معمول بن چکا ہے ۔  ڈیورنڈ لائن کے آر پار غیر قانونی نقل و حرکت کے لیے اسے ناقابل رسائی بنانا وقت کی اہم ضرورت ہے۔ تاکہ دونوں ممالک کے درمیان دوستانہ تعلقات کو دوائم بخشا جائے ۔

 


شیئر کریں: