Chitral Times

Feb 6, 2023

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

پاکستان کو 5 سال میں سود سے پاک کر سکتے ہیں، ملک میں اسلامی بینکاری 20 سے 21 فیصد ہو چکی ہے، وزیر خزانہ اسحاق ڈار

شیئر کریں:

پاکستان کو 5 سال میں سود سے پاک کر سکتے ہیں، ملک میں اسلامی بینکاری 20 سے 21 فیصد ہو چکی ہے، وزیر خزانہ اسحاق ڈار کا سود کی حرمت کے حوالے سے سیمینار سے خطاب

اسلام آباد(چترال ٹایمز رپورٹ)وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ پاکستان کو 5 سال میں سود سے پاک کر سکتے ہیں،ملک میں اسلامی بینکاری 20 سے 21 فیصد ہو چکی ہے اور اسلامی بینکنگ کے اثاثے 7 ٹریلین روپے کی سطح پر ہیں، اسلامی بینکنگ کی پراڈکٹس کو سستا کرنا ہو گا۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے بدھ کو سود کی حرمت کے حوالے سے کراچی میں ہونے والے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا کہ دنیا بھرمیں کوشش کی جارہی ہے کہ ہر شخص کو بینکاری نظام سے منسلک کیا جائے، بینکاری کا نظام زندگی کی ضرورت بن چکا ہے اور بینکاری نظام کے ذریعے شفاف لین دین کو یقینی بنایا جا سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت ملک سے سودی نظام کے خاتمے کے لیے پرعزم ہیں اور شرعی عدالت کے حرم سود سے متعلق فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہیں، اسلامی بینکاری نظام کے حوالے سے آج ہم وہاں کھڑے ہیں جہاں 2018 میں کھڑے تھے، اگر ہم خلوص نیت سے صرف اللہ کی رضا کے لیے فیصلہ کریں تو 5 سالوں میں ملک سے سود کا خاتمہ ہو سکتا ہے۔وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ اس وقت ملک میں اسلامی بینکاری 20 سے 21 فیصد ہو چکی ہے اور اسلامی بینکنگ کے اثاثے 7 ٹریلین روپے کی سطح پر ہیں، اسلامی بینکنگ کی پراڈکٹس کو سستا کرنا ہو گا، میوچل فنڈز اور انشورنس کو اسلامی بنیاد پر لانا ہو گا، اسلامک بینکوں کو کنونشل بینکوں سے زیادہ بہتر کارکردگی دکھانا ہوگی۔اسحاق ڈاکر کا کہنا ہے کہ سٹیٹ بینک اور دیگر بینکوں نے وفاقی شرعی عدالت کے فیصلے کے خلاف اپیلیں دائر کی تھیں جو واپس لے لی گئیں، اسلامی بنکاری کے لیے اسٹیٹ بینک کام کرے گا، سیمینار کی قرار دادیں وزیراعظم کے ساتھ بھی شیئر کروں گا۔وفاقی وزیر کا کہنا تھا پاکستان کو کرنٹ اکاؤنٹ اور بجٹ خسارے کا بھی سامنا ہے، ہم آمدنی سے زیادہ خرچہ کرنے کے عادی بن چکے ہیں، ہمیں آمدنی بڑھانی ہوگی اور خرچوں کوکم کرنا ہوگا۔

 

 

سپریم کورٹ کا سوئی سدرن ملازمین کا کیس لارجر بینچ کے سامنے مقرر کرنے کا حکم

اسلام آباد(چترال ٹایمز رپورٹ)چیف جسٹس پاکستان جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ ملازمین کے پاس ایک ہی قانونی نکتہ ہے کہ ان کے ساتھ زیادتی ہوئی،کیس کو لارجر بینچ میں سن کر فیصلہ کریں گے۔سپریم کورٹ میں سوئی سدرن گیس کمپنی کے ملازمین کی مستقلی کے کیس کی سماعت ہوئی۔سپریم کورٹ نے سوئی سدرن ملازمین کا کیس لارجر بینچ کے سامنے مقرر کرنے کا حکم دے دیا۔سپریم کورٹ میں لارج بینچ کل کیس کی سماعت کرے گا۔ملازمین کے وکیل فیصل صدیقی کا کہنا ہے کہ سوئی سدرن کے ملازمین کو 1993 میں بھرتی کیا گیا تھا۔وکیل نے مزید کہا کہ ملازمین کی مستقلی کی پالیسی پر عمل نہیں کیا گیا۔جسٹس اطہر من اللّٰہ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ سوئی سدرن میں ملازمین سے کنٹریکٹ کے بغیر لمبے عرصے ملازمت کرائی۔جسٹس عائشہ ملک نے کہا کہ ملازمین کی مستقلی کے لیے کوئی قانونی بنیاد نہیں ہے۔

 

کوئٹہ: خودکش دھماکے میں شہید اہلکار کی نمازِ جنازہ ادا

کوئٹہ(سی ایم لنکس)کوئٹہ کے علاقے بلیلی میں آج صبح ہوئے خودکش دھماکے میں شہید ہونے والے پولیس اہلکار کی نمازِ جنازہ پولیس لائن میں ادا کر دی گئی۔وزیرِ داخلہ ضیاء اللّٰہ لانگو اور آئی جی پولیس بلوچستان عبدالخالق شیخ نے شہید اہلکار کی نمازِ جنازہ میں شرکت کی۔بلیلی دھماکے میں زخمی ہونے والے ظفر خان نامی شخص نے ’جیو نیوز‘ سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا ہے کہ دھماکیمیں میرا 1 بیٹا جاں بحق اور 4 بچے زخمی ہوئے ہیں۔ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ فیملی کے ساتھ شادی میں شرکت کے لیے لاہور جا رہا تھا کہ خودکش دھماکے کا شکار ہو گئے۔بلوچستان کے وزیرِ داخلہ میر ضیاء اللّٰہ لانگو کوئٹہ کے سول اسپتال کے ٹراما سینٹر پہنچ گئے جہاں انہوں نے بلیلی دھماکے کے زخمیوں کی عیادت کی۔واضح رہے کہ کوئٹہ کے علاقے بلیلی میں بلوچستان کانسٹیبلری کے ٹرک کے قریب خود کش دھماکے کے نتیجے میں 3 افراد جاں بحق ہو گئے۔ڈی آئی جی کوئٹہ غلام اظفر مہیسر نے خود کش دھماکے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا ہے کہ دھماکے کے نتیجے میں 22 اہلکاروں سمیت 27 افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔ڈی آئی جی کوئٹہ نے بتایا ہے کہ پولیو ڈیوٹی پر لے جانے والے پولیس کے ٹرک سے خودکش حملہ آور نے بارود سے بھرا رکشہ ٹکرایا ہے، خود کش بمبار کی لاش قریب سے ملی ہے۔انہوں نے بتایا ہے کہ قریب سے گزرنے والی گاڑیاں بھی زد میں ٓگئیں، دھماکے میں 20 سے 25 کلو دھماکا خیز مواد استعمال کیا گیا، دھماکے کی شدت سے ٹرک الٹ گیا اور اس میں آگ لگ گئی۔ڈی آئی جی غلام اظفر مہیسر نے بتایا ہے کہ دھماکے کے نتیجے میں جاں بحق ہونے والوں میں 1 بچہ اور 1 اہلکار شامل ہیں۔


شیئر کریں: