Chitral Times

May 28, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

بحالی پروگرام میں تاخیر – محمد شریف شکیب

Posted on
شیئر کریں:

بحالی پروگرام میں تاخیر – محمد شریف شکیب

بچوں کی فلاح و بہبود پر کام کرنے والے بین الاقوامی ادارے کی تازہ رپورٹ کے مطابق پاکستان میں 34 لاکھ سے زائد بچے شدید بھوک کا شکار ہیں جن میں سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں رہنے والے 76 ہزار بچے بھی شامل ہیں جنہیں خوراک کی شدید قلت کی وجہ سے جان کا خطرہ لا حق ہو سکتا ہے رپورٹ کے مطابق پاکستان کے بیشتر حصوں میں سیلاب کی تباہ کاریوں کے بعد بھوک کا شکار افراد کی تعداد 45 فیصد تک بڑھ گئی ہے جہاں پہلے 59 لاکھ 60 ہزار لوگ خوراک کی ہنگامی قلت سے دوچار تھے، اب ان کی تعداد 86 لاکھ 20 ہزار ہوگئی ہے جن کی اکثریت کا تعلق سیلاب زدہ علاقوں سے ہے۔رپورٹ میں اس خدشے کا اظہار کیا گیا ہے کہ موسم سرما کی آمد پر بھوک کا سامنا کرنے والے افراد کی تعداد میں اضافہ ہو سکتا ہے اور اگر بروقت انہیں خوراک اور سردی سے بچانے والے سامان مہیا نہیں کئے گئے تو لاکھوں افراد کی زندگیوں کو خطرات لاحق ہوسکتے ہیں۔خیبر پختونخوا کے پہاڑی علاقوں، چارسدہ اور نوشہرہ کے علاوہ جنوبی پنجاب، سندھ اور بلوچستان میں سیلاب کی تباہوں سے فصلوں اور مویشیوں کا ناقابل تلافی نقصان ہوا ہے۔

 

روزمرہ استعمال کی اشیاءکی عدم دستیابی کی وجہ سے قیمتوں میں بھی غیر معمولی اضافہ ہوا ہے۔جس کی وجہ سے خوراک سمیت ضروری اشیاء ان خاندانوں کی پہنچ سے دور ہو گئی ہیں جو سیلاب میں اپنا گھر اور سب کچھ کھونے کے بعد کھلے آسمان تلے پڑے ہوئے ہیں۔ سیلاب میں متاثرہ علاقوں کے 86 فیصد خاندان اپنا سب کچھ کھو بیٹھے ہیں جس کی وجہ سے انہیں کھانا بھی میسر نہیں ہے۔متاثرہ خاندان زندہ رہنے کے لیے مایوس کن اقدامات کا سہارا لے رہے ہیں وہ جسم وجاں کا تعلق برقرار رکھنے کے لئے قرض حاصل کر رہے ہیں یا کھانے کے لیے گھر کا بچا ہوا سامان بیچ رہے ہیں، خیرات پر انحصار کر رہے ہیں یا اپنے بچوں سے مزدوری کروارہے ہیں۔مایوسی کا شکار والدین کا کہنا ہے کہ پیسے کمانے کے لیے وہ اپنے بچوں کومزدوری یا بھیک مانگنے کے لئے باہر بھیجنے پر مجبور ہیں۔یہ لوگ اپنا مالی بوجھ ہلکا کرنے کے لئے نوعمر بچوں کی شادیاں بھی کرا رہے ہیں۔سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں آلودہ پانی کی وجہ سے اب دوسری تباہی یعنی پانی سے پیدا ہونی والی بیماریاں بھی پھیلنے لگی ہیں۔

 

موسم سرما کی آمد سے قبل متاثرہ خاندانوں کو گرم اور محفوظ رکھنے کے لیے خیموں، گرم کپڑوں اور دیگر اشیا کی فوری ضرورت ہے۔
پاکستان تخفیف غربت فنڈ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ متاثرہ علاقوں میں پیدا ہونے والی ضروریات کا جائزہ لیا جارہا ہے تاکہ متاثرین کو درکار اشیا فراہم کی جا سکیں۔تباہ کن سیلاب کو گزرے دو مہینے ہو گئے اب تک سرکاری ادارے جائزہ رپورٹ بھی مکمل نہیں کرسکے کچھ فلاحی ادارے اور مقامی لوگ اپنی مدد آپ کے تحت متاثرین کی مدد کررہے ہیں۔متاثرین سیلاب کی بحالی اور آبادکاری ایک طویل المعیاد منصوبہ ہے اس میں سالوں لگ سکتے ہیں فی الحال انہیں خوراک، ادویات، گرم کپڑوں اور سر چھپانے کے لئے محفوظ ٹھکانے کی ضرورت ہے جس کی طرف ہنگامی بنیادوں پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔۔


شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, مضامینTagged
67233