Chitral Times

Sep 25, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

 عام آدمی کی معیاری تعلیم تک رسائی اور شعبہ تعلیم کی ترقی ہماری حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ وزیراعلیِ

شیئر کریں:

 عام آدمی کی معیاری تعلیم تک رسائی اور شعبہ تعلیم کی ترقی ہماری حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ وزیراعلیِ محمود خان

پشاور ( چترال ٹایمز رپورٹ ) وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے عام آدمی کی معیاری تعلیم تک رسائی اور شعبہ تعلیم کی ترقی کو اپنی حکومت کے منشور کا ایک اہم حصہ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ موجودہ صوبائی حکومت نے اس شعبے میں جدت لانے اورموجودہ تعلیمی نظام کو عصری تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے کیلئے ترقیاتی منصوبوں کے ساتھ ساتھ اصلاحات کا بھی ایک سلسلہ شروع کر رکھا ہے جس کا حتمی مقصد اپنے بچوں کو گھر کی دہلیز پرتمام سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنانا ہے ۔وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ سے جاری اپنے ایک بیان میں محمود خان نے کہاکہ موجودہ صوبائی حکومت نے پارٹی قائد عمران خان کے وژن کے مطابق تعلیم کے فروغ اور تعلیمی معیار کو بہتر بنانے کیلئے دور رس اقدامات اُٹھانے کا سلسلہ شروع کررکھا ہے جن کے نتیجے میں سرکاری سکولوں میں سہولیات کی فراہمی اوردرس و تدریس کے معیار میں نمایاں بہتری آئی ہے ۔

 

اُنہوں نے کہاکہ حکومت کے ان ہی اقدامات کی بدولت سرکاری سکولوں پر عوام کا اعتماد بحال ہو گیا ہے اوروہ اعتماد کے ساتھ اپنے بچوں کو سرکاری سکولوں میں داخل کروا رہے ہیں ۔ وزیراعلیٰ نے شعبہ ابتدائی و ثانوی تعلیم میں حکومتی اقدامات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ موجودہ حکومت ایک منظم منصوبہ بندی کے تحت شعبہ ابتدائی و ثانوی تعلیم میں اقدامات اُٹھا رہی ہے جن میں نئے سکولوں کی تعمیر، پہلے سے موجود سکولوں کی بہتری و بحالی، میرٹ کی بنیاد پر اساتذہ کی بھرتی ، اساتذہ کی جدید بنیادوںپر ٹریننگ ، سکولوں میں مفت درسی کتب کی فراہمی، خواتین کی شرح خواندگی کو بڑھانے کیلئے بچیوں کو وظائف کی فراہمی ، سکولوں میں کھیلوں کی سہولیات کی فراہمی، ایجوکیشن مانیٹرنگ اتھارٹی کا قیام ،سرکاری سکولوں میں سیکنڈ شفٹ کا اجرا، سکول لیڈرز کی بھرتی اور دیگر شامل ہیں۔

 

واضح رہے کہ رواں صوبائی سالانہ ترقیاتی پروگرام میں ابتدائی و ثانوی تعلیم کے110 منصوبے شامل کئے گئے ہیں جن میں 79 جاری اور31 نئے منصوبے ہیں جن کا مجموعی تخمینہ لاگت 20 ارب روپے سے زائد ہے ۔ مذکورہ منصوبوں میں ضم اضلاع کے بھی منصوبے شامل ہیں جن کا تخمینہ لاگت تقریبا ً8 ارب روپے ہے ۔ اس کے علاوہ گزشتہ چار سالوں کے دوران ابتدائی و ثانوی تعلیم کے شعبے میں متعدد اقدامات اُٹھائے گئے ہیں جن میں 58 ہزار اساتذ ہ کی مستقلی ،چھ لاکھ سے زائد طلبہ کو درسی کتب اور سکول بیگز کی فراہمی ، 174 سکولوں کی اپ گریڈیشن ، چار ماڈل سکولز کی تعمیر،89 سکولوں کی تعمیر نو، 90 سکولوں کی سٹینڈرڈائزیشن ، 141 سکولوں کا قیام،سرکاری سکولوں میں 400 اضافی کمروں کی تعمیراور 1585 کمروں کی مرمت، 21 لاکھ بچیوں کو وظائف کی فراہمی ، تین ارب روپے کی لاگت سے 68141 یونٹس کو فرنیچر کی فراہمی ، کیڈٹ کالج سپین کئی جنوبی وزیرستان کی تعمیر اور اس طرح کے دیگر اقدامات شامل ہیں۔


شیئر کریں: