Chitral Times

Oct 4, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

مثبت،منفی اور صحیح سوچ – پروفیسرعبدالشکورشاہ

Posted on
شیئر کریں:

مثبت،منفی اور صحیح سوچ – پروفیسرعبدالشکورشاہ

اپنی زندگی میں مستقل اور دیرپا تبدیلیاں کرنے کا نقطہ آغازمثبت، منفی اور صحیح سوچ میں فرق سمجھنے سے ہوتا ہے۔بلکل ایک ایسے شخص کی طرح جو پیانو بجانے بیٹھتا ہے مگر الٹی سیدھی دھنیں بجانے کے علاوہ اس کچھ نہیں آتا۔ وہ کسی موسیقار کی تلاش میں نکلتا ہے۔”تم میں کھیلنے کی صلاحیت ہے،لیکن آپ کو موسیقی کو سمجھنے کی ضرورت ہے۔زندگی بھی پیانو کی طرح سمجھ لیں۔”ہم میں سے ہر ایک کے پاس زندگی کودرست معانی میں چلانے کی صلاحیت موجود ہے لیکن ہمیں زندگی کے قواعد و ضوابط کو جاننے کی ضرورت ہے۔زندگی جسمانی قانون کے مطابق چلتی ہے۔وہ بنیادی قانون جس سے دوسرے تمام قوانین مطابقت رکھتے ہیں  وہ ہے ”وجہ“ اور”اثر“ کا قانون۔ سبب اور اثر کا قانون کہتا ہے کہ اثریا کسی بھی صورت حال کا نتیجہ وجہ کے برابر ہونا چاہیے۔ہے۔ سبب کے قانون کو بیان کرنے کا ایک اور طریقہ اور اثر بونے اور کاٹنے کا عمل اور ردعمل ہے۔سبب اور اثر کا قانون غیر ذاتی ہے۔یہ کیوں ہے ہم بہت سارے لوگوں کو دیکھ سکتے ہیں جو بنیادی طور پر اچھے ہیں۔ان کی زندگی میں مسائل اور آفات بھی بہت زیادہ ہیں۔ کہیں یہ شخص قانون کا غلط استعمال تو نہیں کر رہے یا غلط فہمی کی وجہ سے قانون کا درست استعمال سیکھنے سے قاصر رے گئے ہوں۔

 

اگر کوئی شخص برا ہے اس کا مطلب یہ نہیں کہ وہ محبت کرنے والا شخص نہیں ہے۔ اسکا مطب ہے اس شخص نے قانوں زندگی کو لاعلمی یا غلط فہمی کے ذریعے، غلط استعمال کیا ہے۔قانون کائنات ایک ندی کی مانند ہے۔ دریا بہتا رہتا ہے۔ آپ خوش ہیں یا غمگین، اچھے ہیں یا برے زندگی کی ندیاں رواں دواں رہتی ہے۔ہم اس سے لطف اندوز ہو سکتے ہیں، یا ہم چھلانگ لگا کر ڈوب سکتے ہیں۔ہم میں سے کچھ لوگ چائے کا چمچہ لے کر زندگی کے دریا میں جا تے ہیں کوئی کپ کے ساتھ،کوئی بالٹی لے کر جا سکتا ہے، اور کوئی اور شخص ایک بیرل کے ساتھ جا سکتا ہے لیکن دریا کی کثرت ہمیشہ موجود ہے اسے فرق نہیں پڑتا۔ ہم اپنی زندگی میں بھی خود یہ فیصلہ کرتے ہیں کے ہم نے زندگی میں سے کیا کچھ کتنی مقدار میں لینا ہے۔ انتظار ہمارا شعور، ہمارے خیالات، ہمارا فریم آف ریفرنس اور ہمارایقین کا نظام اس بات کا تعین کرتا ہے کہ آیا ہم چاہئے کے چمچ کے ساتھ زندگی کے دریا میں جاتے، ایک کپ، ایک بالٹی یا ایک بیرل لیکر۔اگر ہم اپنی سوچ میں بے حال ہو کر ایک چمچ کے ساتھ دریا میں چلے گئے ہیں تو ہم اپنے پاس موجود تھوڑے پرلعن تعن کر سکتے ہیں۔ہم کچھ بھی حاصل کر سکتے ہیں اگر ہم اس یقین کو ترک کر دیں کہ ہم نہیں کر سکتے۔ عقائد حدود بن جاتے ہیں۔ہمارے تمام تجربات نے ہمیں کچھ چیزوں پر یقین کرنے پر مجبور کیا ہے۔

 

ہم خود چاہے یہ عقائد سچے ہیں یا نہیں اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کیونکہ اگر ہم انہیں سچ مان لیں تو وہ ہمارے لیے سچے ہیں۔ہم اس بارے میں کچھ نہیں کر سکتے سوائے اپنا ذہن بدلنے کے۔ اگر آپ ایک پودے لگاتے ہیں بیج بڑھنے جا رہا ہے اگر آپ ٹماٹر لگاتے ہیں تو آپ کے پاس ٹماٹر ہوگا۔ٹماٹر اپنا دماغ نہیں بدلے گا اور کھیرا نہیں بنے گا۔ہم بھی روائیتی طرز پر اپنے اذہان کو خیالات سے بھر بیٹھتے ہیں اور ان کے برعکس کچھ سننے کو بلکل بھی تیار نہیں ہیں۔ یہ وہی عقائد ہیں جس پر میں نے اپنی پوری زندگی کی بنیاد رکھی ہے۔عقائد کا مجموعہ جسے مذہب کہا جاتا ہے، عقائد کا ایک مجموعہ جسے سیاست کہا جاتا ہے، ایک مجموعہ اپنے بارے میں عقائد، لوگوں کی اقسام کے بارے میں عقائد کا ایک مجموعہ جو ہم پسند یا نا پسند اور ہر چیز کے بارے میں عقائد کا ایک مجموعہ۔بہت سی چیزیں جن پر ہم یقین رکھتے ہیں وہ ماضی سے حاصل کی گئی ہیں۔یہ سب جانتے ہوئے کے ہم نے زندگی کے جن اصولوں پر عمل کر کے زندگی گزارنے کی کوشش کی ہم اس سے مطمئن نہیں ہیں مگر ان کو چھوڑنے یا بدلنے کا نام تک لینا گوارا نہیں ہے۔دراصل ہم اپنے کمفرٹ زون میں مقفل ہیں چاہے یہ کتنا ہی خود کو تباہ کن کیوں نہ ہو۔ہمیں خود سے مذاق کرنا چھوڑ دینا چاہیے، دوسروں پر الزام لگانا چھوڑنا چاہیے، اور روکنا چاہیے۔ناخوشگوار فیصلوں سے گریز کریں اور سچائی کا سامنا کرنا شروع کریں جو ہم کر سکتے ہیں۔اپنے موجودہ عقائد کے نظام کے پیچھے دیکھیں اور اپنے سے پوچھیں۔یہ سچ ہے، آپ صحیح سوچ کا استعمال کر رہے ہیں۔

 

یہ مثبت ہونے کی بات نہیں ہے۔یا منفی، کشش کا قانون ہر چیز ہمارے پاس طبیعیات کے سب سے بنیادی قانون کے ذریعہ آتی ہے اسے کشش کا قانون کہا جاتا ہے۔کشش کا قانون، تمام قدرتی قوانین کی طرح چلتا ہے۔ریاضی کی درستگی یا غیر جانبداری اور غیر شخصی ہے۔ آپ اسے چاہتے ہیں یا نہیں چاہتے ہیں اس کا آپ کی شخصیت، آپ کے مذہبی عقائد سے کوئی تعلق نہیں،ایک ”اچھا” یا ”برا” شخص یا کچھ اور ہونا۔ اس سے آگے کوئی نہیں رہتایہ قانون. یہ کشش ثقل کے قانون کی طرح ایک ناقابل تردید قانون ہے۔ذہن ہر چیز کو اپنی طرف متوجہ کرتا ہے۔ خوف زدہ ذہن خوفناک تجربات کو اپنی طرف متوجہ کرتا ہے ایک الجھا ہوا ذہن مزیدالجھنیں اپنی طرف متوجہ کرتا ہے۔الجھاؤپرچلنے والا ذہن زیادہ کثرت سے الجھاو اور تناوکو اپنی طرف متوجہ کرتا ہے چونکہ ہم جس چیز کے بارے میں سوچتے ہیں اس کو اپنی طرف متوجہ کرتے ہیں، اس لیے یہ اچھی بات ہے کہ آپ لاشعوری سوچ کے نمونوں سے آگاہ ہوں۔زندگی لاشعور دماغ کا بنیادی کام اس کی پیروی کرنا ہے۔شعوری ذہن کی ہدایات۔ یہ اسے ”ثابت” کرکے کرتا ہے۔شعوری ذہن جو کچھ بھی مانتا ہے وہ سچ ہے۔ دوسرے الفاظ میں شعوری ذہن ہمیشہ ”صحیح” ہوتا ہے۔آپ کا لاشعور دنیا کی حقیقت کو نہیں بدلتایہ آپ کے ارد گرد صرف ان معلومات کو فلٹر کرتا ہے جو آپ اسے پیش کرتے ہیں۔

 

اپنے عقائد یا اس تصویر کی حمایت کریں جو آپ اپنے ذہن میں رکھتے ہیں۔مثال کے طور پر اگر آپ کو یقین ہے کہ کاروبار خراب ہے، یا کوئی نیا نہیں ہے آپ کے کاروبار کے مواقع، آپ کا لاشعور نئے مواقع کو نظر انداز کر دے گا۔مسائل جو آپ کے اس یقین کی تائید کرتے ہیں کہ چیزیں خراب ہیں، یا یہ کہ موجود ہیں۔کوئی نیا موقع نہیں عدم اطمینان کے بغیر ترقی نہیں ہوتی آپ کا اعلیٰ نفس ہمیشہ جانتا ہے کہ آپ کے لیے کیا بہتر ہے۔ سب کچھ جو تمہیں چاہیے کرنے کا مطلب یہ ہے کہ آپ اپنے حق سے بہتر کچھ چاہتے ہیں۔ابھی. جان لیں کہ عدم اطمینان کے بغیر ترقی نہیں ہوتی۔ جبکہ یہ ہے۔موجودہ لمحے میں جینا اور ”جو ہے” کو قبول کرنا ضروری ہے، یہ بھی ہے۔جہاں ہم ہیں وہاں سے بڑھنا ضروری ہے۔ اپنے عدم اطمینان کا بہت احتیاط سے مطالعہ کریں۔ہمارا بڑا وہم یہ ہے کہ ہم ایک ایسا معاشرہ بنا سکتے ہیں جو کام کرتا ہو۔ہماری موجودہ سطح سے زیادہ نفسیاتی اور روحانی سطح آگاہی بہت سے لوگ ہمیں ایک بہتر معاشرے یا بہتر کے لیے کام کرنے پر زور دیتے ہیں۔ جب تک ہم اپنی بیداری کی سطح کو بلند نہیں کر لیتے ہم اس سے اعلیٰ کوئی چیز نہیں بنا سکتے ہماری اپنی بیداری کی سطح، مجموعی طور پر معاشرہ زیادہ بہتر نہیں ہوتا۔سماجی تبدیلی کے لیے معاشرے کا نظام صرف ایک نیا بوجھ ڈالتا ہے۔ ایک پرانے بوجھ کے اوپرہمارے مغلوب دماغ کو کچھ سمجھ نہیں آرہا کہ کیا کریں۔اگر ہم اپنی زندگیوں کو اس طرح نہیں بنا رہے ہیں جس طرح سے ہم چاہتے ہیں تو ہم مثبت، منفی اور صحیح سوچ میں فرق نہیں کر پائیں گے۔


شیئر کریں: