Chitral Times

Sep 30, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

چترال کے جنگلاتی علاقے میں درختوں کی مارکنگ اور لاگ بنانے کے بعد فالتو لکڑی کو اٹھانے کی اجازت دی جایے، بصورت دیگر وہ سیلابی ریلے میں بہہ جاتے ہیں۔ کارپینٹراونرز ایسوسی ایشن چترال 

شیئر کریں:

چترال کے جنگلاتی علاقے میں درختوں کی مارکنگ اور لاگ بنانے کے بعد فالتو لکڑی کو اٹھانے کی اجازت دی جایے، بصورت دیگر وہ سیلابی ریلے میں بہہ جاتے ہیں اورعلاقے کو اربوں روپے کا نقصان اُٹھانا پڑتا ہے۔ کارپینٹراونرز ایسوسی ایشن چترال

chitraltimes carpenter owners association chitral press confrence2

چترال (نمائندہ  چترال ٹایمز ) چترال کے معروف شخصیت حاجی محمد یوسف خان نے متحدہ کارپنٹر اونرزایسوسی ایشن اور تین سال کے مدت کے لئے اس کے عہدیداروں کا اعلان کردیا جس کے مطابق عبدالعزیز سرپرست اعلیٰ، حاجی محمدیوسف خان صدر، عبدالقادر سینئر نائب صدر، نائب صدر سید قبول، جنرل سیکرٹری اقرار الدین، سیکرٹری خزانہ اکبر ولی، پریس سیکرٹری فضل الرحمن، سیکرٹری اطلاعات خالد محمود، آفس سیکرٹری حافظ محمد شامل ہیں۔ منگل کے روز ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ کارپنٹروں کا مشترکہ پلیٹ فارم نہ ہونے کی وجہ سے انہیں گونا گون مسائل کا سامنا کرنا پڑتا تھا اور اس پلیٹ فارم کی تشکیل کے بعد وہ مشترکہ لائحہ عمل تشکیل دے کر اجتماعی جدوجہد شروع کریں گے جبکہ کابینہ کو تمام فورم پر کارپینٹر برادری کی نمائندگی کرنے کی ذمہ داری سونپ دی گئی ہے۔ انہوں نے ایسوسی ایشن کے اعراض ومقاصدبیان کرتے ہوئے کہاکہ چترال جیسی جنگلاتی علاقے میں درختوں کی مارکنگ اور لاگ بنانے کے بعد فالتو لکڑی کو اٹھایا نہیں جاتا ہے جس کے نتیجے میں وہ سیلابی ریلے میں بہہ جاتے ہیں اور اس کروڑوں تن لکڑی دریائے چترال کے ذریعے افغانستان میں داخل ہوگئی جوکہ چترال کا نقصان ہے۔ انہوں نے کہاکہ ایسوسی ایشن ایسی غلطیوں کا اعادہ ہونے نہیں دے گی جبکہ ارندو کے مقام پر افغانستان میں چترال کی لکڑیوں کو داخل ہونے سے روکنے کے لئے جال لگوانے کی کوشش کریں گے۔

حاجی یوسف خان نے چترال کے ایم این اے مولانا عبدالاکبر چترالی اور ایم پی اے ہدایت الرحمن کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ انہوں نے چترال کے جنگل کو بچانے اور لکڑی کا ملبہ جنگل سے اٹھوانے میں مکمل طور پر ناکام ہوئے جبکہ اس اس مسئلے کو بار بار ان کے نوٹس میں لایا گیا تھا لیکن یہ عوام کے بجائے اپنی مفادات کی رکھوالی کررہے ہیں۔ حاجی یوسف نے مزید کہاکہ یہ چترالی عوام کی بدقسمتی ہے کہ وفاق میں کسی اور پارٹی کی حکومت ہوتی ہے لیکن ہم چترال والے کسی اور پارٹی سے ایم این اے اور ایم پی اے منتخب کرتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ چترال کے ایم این اے اور ایم پی اے سے ان کا کوئی ذاتی اختلاف نہیں ہے لیکن ان کی ناکامیوں کو عوام کے سامنے لاتے ہیں تاکہ عوام کو اصل حقائق کا پتہ چل سکے کہ چترال کی پسماندگی کا ذمہ دا ر کون ہے۔

chitraltimes carpenter owners association chitral press confrence4 chitraltimes carpenter owners association chitral press confrence3


شیئر کریں: