Chitral Times

Sep 26, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

سڑکوں اورپاور سپلائی لائن کی بحالی وفاقی حکومت کے زمرے میں آتی ہے تاہم ا ن کی جانب سے اب تک اس ضمن میں کوئی بھی اقدام نظر نہیں آرہا۔وزیراعلیِ محمودخان

Posted on
شیئر کریں:

سڑکوں اورپاور سپلائی لائن کی بحالی وفاقی حکومت کے زمرے میں آتی ہے تاہم ا ن کی جانب سے اب تک اس ضمن میں کوئی بھی اقدام نظر نہیں آرہا۔وزیراعلیِ محمودخان

پشاور ( چترال ٹایمز رپورٹ ) وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے وفاقی حکومت کے غیر سنجیدہ رویے پر گہری تشویش کااظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ سڑکوں اورپاور سپلائی لائن کی بحالی وفاقی حکومت کے زمرے میں آتی ہے تاہم ا ن کی جانب سے اب تک اس ضمن میں کوئی بھی اقدام نظر نہیں آرہا جو اس بات کا واضح ثبوت ہے کہ سلیکٹڈ حکومت قدرتی آفات کی اس گھڑی میں بھی اوچھے ہتھکنڈے استعمال کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت صوبے میں سیلاب سے متاثرہ لوگوں کی بحالی اور دیکھ بھال بخوبی کر سکتی ہے تاہم وفاق کی جانب سے خیبرپختونخوا کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک برداشت نہیں کیا جائے گا۔ ضلع کوہستان اور شانگلہ کے ایک روزہ دورہ پر وزیراعلیٰ سیلاب متاثرین سے ملے اور جاںبحق ہونے والے افراد کے لواحقین اور زخمیوں میں امدادی چیکس تقسیم کئے۔ ضلع کوہستان میں سیلاب زدگان سے بات چیت کرتے ہوئے وزیراعلیٰ نے واضح کیا کہ صوبائی حکومت کے تمام تر وسائل اس وقت سیلاب زدگان کی بحالی کیلئے بروئے کار لائے جارہے ہیں۔

chitraltimes cm kp visit kohistan mahmood khan

وزیراعلیٰ نے ہدایات جاری کیں کہ ضلع کوہستان کے دوردراز علاقوں کے متاثرین کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے محفوظ مقامات پر منتقل کیا جائے اورضروری سامان،ادویات اور اشیائے خوردونوش کی فراہمی یقینی بنائی جائے۔ا نہوں نے واضح کیا کہ موجودہ حکومت حقیقی معنوں میں عوامی نمائندگی کر رہی ہے اور سیلاب زدگان کی اپنے گھروں کو واپسی موجودہ حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ حالیہ سیلاب کے باعث ہونے والی تباہ کاریوں کے بارے میں بریفنگ دیتے ہوئے ضلعی انتظامیہ نے وزیراعلیٰ کو آگاہ کیا کہ ضلع لوئر کوہستا ن میں 18افراد سیلاب سے لقمہ اجل بنے جبکہ پانچ افراد زخمی ہوئے۔ ضلع اپر کوہستان میں پانچ افراد جاںبحق اور پانچ زخمی ہوئے۔ اس کے علاوہ اپر کوہستان میں ایک مسجد،ایک مدرسہ،ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتال اور ایک ہوٹل مکمل تباہ ہوئے۔ دونوں اضلاع میں مکانوں،فصلوں اور دیگر انفراسٹرکچر کو نقصانات کی اسسمنٹ کا عمل شروع ہے جو جلد مکمل کر لیا جائے گا۔ وزیراعلیٰ کو بتایا گیا کہ ریلیف کیمپوں میں سیلاب متاثرین کیلئے طبی سہولیات یقینی بنائی گئی ہیں۔وزیراعلیٰ کو بتایا گیا کہ بھاری مشینری کے ذریعے دورافتادہ دیہاتوں تک زمینی رسائی یقینی بنائی جارہی ہے۔

 

وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے ضلع شانگلہ کا بھی دورہ کیا۔شانگلہ میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے وزیراعلیٰ نے واضح کیاکہ اگر خیبرپختونخوا سے دیگر صوبوں کا موازنہ کیا جائے ،تو یہاںبحالی کاکام بہتر طور پر جاری ہے۔صوبہ سیلابی صورتحال سے متاثر ہوا ہے ، متاثرہ علاقوں میں روڈ انفراسٹرکچر اور بجلی سپلائی بری طرح متاثر ہوئی ہے۔ وزیراعلیٰ ضلع شانگلہ کے دورے کے دوران کروڑہ اور سیرائی گئے جہاں پرسیلاب سے متاثرہ رورل ہیلتھ سنٹر اوررابطہ سڑکوں کا جائزہ لیا۔ا نہوںنے سیلاب متاثرین اور مقامی عمائدین سے ملاقات کی اورسیلاب کے باعث جاںبحق افراد کے لواحقین اور زخمیوں میں امدادی چیکس تقسیم کئے۔ دورے کے موقع پر ڈپٹی کمشنر شانگلہ نے وزیراعلیٰ کو سیلاب سے ہونے والے نقصانات ، ریسکیو، ریلیف اور بحالی کے اقدامات پر بریفینگ دی۔

chitraltimes cm kp visit kohistan

بریفنگ میں بتایا گیا کہ سیلابی صورتحال کے دوران چار اموات ہوئیں اور آٹھ افراد زخمی ہوئے۔ اسی طرح تین سب ڈویژنوں اور پانچ سب تحصیلوں میں انفراسٹرکچر کو بھی نقصان پہنچا ہے جس میں این ایچ اے روڈ ، نو مین روڈز اور242 رابطہ سڑکیں سیلابی ریلوں کی وجہ سے جابجا متاثرہوئیں۔ شانگلہ میں سیلابی ریلوں سے 77 سکولوں کو نقصان پہنچا ، 34 گھر مکمل تباہ ہوئے ، 78 گھروں کو جزوی نقصان پہنچا، 14 ٹراوٹ فش فارمز اورسات ایریگیشن چینلز بھی متاثر ہوئے ہیں۔ صحافیوں کے سوالات کے جواب میں وزیراعلیٰ محمود خان کا کہنا تھا کہ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں تفصیلی اسسمنٹ ہو گی اور اس ضمن میں بحالی کیلئے اقدامات ا ±ٹھائے جائیں گے۔ اس موقع پر صوبائی وزیربرائے محنت شوکت علی یوسفزئی اور دیگر اعلیٰ حکام بھی وزیراعلیٰ کے ہمراہ موجود تھے۔


شیئر کریں: