Chitral Times

Feb 29, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

ماں کے دودھ کی افادیت  سے متعلق آگاہی کاعالمی مہینہ اگست کی مناسبت سے  ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر اپرچترال کے زیر صدارت اجلاس

Posted on
شیئر کریں:

ماں کے دودھ کی افادیت  سے متعلق آگاہی کاعالمی مہینہ اگست کی مناسبت سے  ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر اپرچترال کے زیر صدارت اجلاس

 

اپر چترال(چترال ٹایمز رپورٹ ) ماں کے دودھ کی افادیت  سے متعلق آگاہی کاعالمی مہینہ اگست کی مناسبت سے ایک اہم اجلاس گزشتہ دن ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر اپرچترال ڈاکٹرارشاداحمد کے زیر صدارت ڈی ایچ او آفس بونی اپر چترال میں منعقدہوا ۔

اجلاس میں ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر ، امیونائزیشن آفیسر اپرچترال ڈاکٹر عبدالناصر ، ایم ایس ہیڈکوارٹر ہسپتال بونی ڈاکٹر فرمان ولی خان، تحصیل خطیب مولانا فصیح الرحمن، اسماعیلی لوکل کونسل بورڈ کے صدر یوسف سمیت مختلف مکتب فکر کے لوگوں نے شرکت کی۔

تلاوت کلام پاک کے بعد کوآرڈینیٹر ایل ایچ ڈبلیو ڈاکٹر فضل محبوب نےمعزز شرکاء کو خوش آمدید کہتے ہوئے تقریب کی اغراض و مقاصد بیان کی اور ماں کے دودھ کی افادیت پر روشنی ڈالی

ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر نے اپنے خطاب میں کہا کہ عالمی ادارے صحت کہتا ہے کہ بچے کے لئے پہلی بہترین خوراک ماں کا دودھ ہوتا ہے اور چھ ماہ تک بچے کو اس کے علاؤہ کچھ اور نہیں دینا چاہئے اور اس کا کوئی نعم البدل نہیں ہے ہمیں اس سلسلے میں ہر ہرگھر تک آگاہی پہنچانا ہے

تحصیل خطیب نےبچے کے لئے ماں کے دودھ کی افادیت پر مفصّل خطاب کیا اور اس بات پر زور دیا کہ قرآن مجید کے حکم کے مطابق ہر ماں کو اپنے بچے کو پیدائش سے لیکر دو سال تک دودھ پلانا ضروری ہے
اسماعیلی لوکل کونسل بورڈکے صدر یوسف ، ایم ایس ہیڈکوارٹر ہسپتال بونی نے بھی بچے کے لئے ماں کے دودھ کی افادیت پر اظہار خیال کیا۔
امیونائزیشن آفیسرنے اپنے خطاب میں کہا کہ اسلام اور سائنس اس بات پر متفق ہیں کہ بچے کے لئے ماں کی دودھ انتھائی ضروری ہے ہمیں اس سلسلے میں آگاہی مہم کو مزید تیز کرنی ہوگی

محترمہ حمیدہ یونس نے اپنے خطاب میں کہا کہ یہ بات مشاہدے میں آئی ہے کہ جن بچوں کو ان کی مائیں دودھ پلاتی ہیں وہ بچے انتھائی صحت مند ہوتے ہیں
آخرمیں ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر اپرچترال اورکوآرڈینیٹر ایل ایچ ڈبلیو نے تمام شرکاء کاشکریہ ادا کیااور ماں کے دودھ کی افادیت کے آگاہی کو تمام گھرانوں تک پہچانے کا عزم کے ساتھ یہ اجلاس اختتام پذیر ہوا

chitraltimes dho upper meeting on breast feeding booni


شیئر کریں: