Chitral Times

Oct 1, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

خیبرپختونخوا انوائرنمنٹل پروٹیکشن کونسل کاوزیراعلیِ کے زیر صدارت  پہلا اجلاس

Posted on
شیئر کریں:

خیبرپختونخوا انوائرنمنٹل پروٹیکشن کونسل کاوزیراعلیِ کے زیر صدارت  پہلا اجلاس

پشاور ( چترال ٹایمز رپورٹ ) خیبرپختونخوا انوائرنمنٹل پروٹیکشن کونسل کا پہلا اجلاس منگل کے روز وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان کی زیر صدارت منعقد ہواجس میں صوبے کی تازہ انوائرنمنٹل پروفائلنگ کرانے جبکہ ماحولیاتی آلودگی کو کم کرنے کیلئے اینٹ کی بھٹیوں میںزگ زیگ ٹیکنالوجی متعارف کرانے کا فیصلہ کیا گیا ۔اجلاس میں بعض ضروری ترامیم کے ساتھ کونسل کے رولز آف پروسیجرز اور کونسل کے تحت مختلف کمیٹیوں کی تشکیل کی منظوری بھی دی گئی۔ صوبائی کابینہ اراکین اشتیاق ارمڑ ، بیرسٹر محمد علی سیف کے علاوہ متعلقہ محکموں کے انتظامی سیکرٹریز ، کونسل کے نجی ممبران اور دیگر متعلقہ حکام نے اجلاس میں شرکت کی ۔ اجلاس کو کونسل کی تشکیل ، اختیارات ، ذمہ داریوں اور دیگر جملہ اُمو رپر تفصیلی بریفنگ دی گئی ۔ کونسل کے اجلاس میں پانی اور ہوا میں آلودگی کی مانیٹرنگ کیلئے جدید آلات استعمال کرنے جبکہ صنعتوں سے پیدا ہونے والی آلودگی کی مانیٹرنگ کیلئے کارخانوں میں خود کار سنسرز لگانے پر اتفاق کیا گیا ۔

اس کے علاوہ انڈسٹریل زونز میں واٹر ری سائیکلنگ پلانٹس کی تنصیب پر اتفاق کیا گیا اور وزیراعلیٰ نے متعلقہ حکام کو اس سلسلے میں ہوم ورک کرنے کی ہدایت کی ہے۔ اجلاس کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ خیبرپختونخوا کی کلائمیٹ چینج پالیسی اور ایکشن پلان 2022 ءتیار کرلئے گئے ہیںجو حتمی منظوری کیلئے جلد صوبائی کابینہ کے سامنے پیش کئے جائیں گے ۔ مزید بتایا گیا کہ ماحولیاتی آلودگی کے موثر تدارک کیلئے انوائرنمنٹل پروٹیکیشن ایکٹ 2014 میں ضروری ترامیم تجویز کی گئی ہیں جبکہ ایکٹ میں ان ترامیم کے علاوہ پلاسٹک بیگز پر پابندی عائد کرنے کی شق شامل کی گئی ہے۔ وزیراعلیٰ نے ماحولیاتی آلودگی کے تدار ک کیلئے تمام متعلقہ محکموں اور اداروں کے درمیان کوآرڈنیشن کا موثر نظام وضع کرنے کی ہدایت کی ہے اور کہا ہے کہ متعلقہ ادارے ماحولیاتی آلودگی پر قابو پانے کیلئے اپنی اپنی ذمہ داریاں بروقت پوری کریں ۔اُنہوںنے مزید ہدایت کی ہے کہ ماحولیاتی آلودگی کے سدباب کیلئے بننے والے قوانین اور قواعد وضوابط پر من و عن عمل درآمد یقینی بنایا جائے اور ماحولیاتی آلودگی کا باعث بننے والے کارخانوں پر کڑی نظررکھی جائے ۔ اُنہوںنے کہاکہ ماحولیاتی آلودگی کا باعث بننے والے کارخانوں کے این او سیز منسوخ کرنے کا اختیار انوائرنمنٹل پروٹیکشن ایجنسی کودیا جائے ۔ وزیراعلیٰ نے زرعی زمینوں کے تحفظ کیلئے متعلقہ حکام کو بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کو جلد فعال بنانے کی ہدایت بھی کی ہے۔


شیئر کریں: