Chitral Times

Jul 6, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

خیبر پختونخوا میں شرح خواندگی کا تناسب 52.4 سے بڑھ کر 55.1ہوگیا ہے جوکہ صوبے کے لئے ایک خوش آئند اور قابل فخر بات ہے,شہرام خان ترکئی

Posted on
شیئر کریں:

خیبر پختونخوا میں شرح خواندگی کا تناسب 52.4 سے بڑھ کر 55.1ہوگیا ہے جوکہ صوبے کے لئے ایک خوش آئند اور قابل فخر بات ہے,شہرام خان ترکئی

پشاور (چترال ٹائمز رپورٹ) خیبر پختونخوا کے وزیر برائے ابتدائی وثانوی تعلیم شہرام خان ترکئی نے کہا ہے کہ تعلیمی لحاظ سے خیبر پختونخوا پاکستان کے دوسرے صوبوں سے بازی لے گیا ہے خیبر پختونخوا میں شرح خواندگی کا تناسب 52.4 سے بڑھ کر 55.1ہوگیا ہے جوکہ صوبے کے لئے ایک خوش آئند اور قابل فخر بات ہے صوبے کا تعلیمی شرح خواندگی بڑھانے میں اساتذہ اور انتظامی افسران کی کوششیں قابل تعریف ہیں، انہوں نے کہا کہ تعلیم کو عام کرنا اور طلباؤ طالبات کو تمام تر سہولیات مہیا کرنا موجودہ صوبائی حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے تعلیم سے کوئی بچہ اب محروم نہیں رہے گا ان خیالات کا اظہار انہوں نے گورنمنٹ ہائیر سیکنڈری سکول نمبر 1پشاور کینٹ کے امتحانی ہال کے دورے کے موقع پر میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کیا

صوبائی وزیر نے امتحانی ہال میں تمام انتظامات کا جائزہ لیا اور سی سی ٹی وی کیمروں کے معائنے کئے صوبائی وزیر شہرام خان ترکئی نے کہا کہ تعلیمی نظام میں بہتری لانے اور نقل کے ناسور سے پاک امتحانات کے انعقاد کے لئے محکمہ تعلیم نے پورے صوبے میں سی سی ٹی وی کیمروں کو نصب کئے ہیں جوکہ نقل کی روک تھام کافی مددگار ثابت ہورہی ہے سی سی ٹی وی کیمرے صوبے کے تعلیمی بورڈز کے ساتھ براہ راست منسلک ہے جسکی باقاعدگی کھڑی مانیٹرنگ ہورہی ہے صوبائی وزیر تعلیم نے جاری ایف اے اور ایف ایس سی امتحانات کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت 5لاکھ 34ہزار طلباء اور طالبات امتحان میں حصہ لے رہے ہیں جس کیلیے محکمہ تعلیم کے زیر نگرانی 18سو امتحانی مراکز قائم کئے گئے ہیں انہوں نے کہا کہ طلباؤطالبات کو تعلیمی سہولیات کی فراہمی کیلیے ہر ممکن اقدام اٹھا رہے ہیں پورے صوبے کے سکولوں میں 3ارب روپے کا فرنیچر فراہم کیا ہے جبکہ مزید 3ارب روپے کا فرنیچر مہیا کرنے کا منصوپہ پائپ لائن میں ہے جوکہ اس پر بہت جلد عملی کارروائی شروع ہوجائیگی اور فرنیچر سے رہ جانے والے تعلیمی ادارے اس سے مستفید ہونگے،

صوبائی وزیر تعلیم کا مذید کہنا تھا کہ طلباؤطالبات کی سہولت کیلیے صوبے کے تمام تعلیمی بورڈز میں سٹوڈنٹس فیسیلیٹیشن سنٹرز قائم کردئیے ہیں جہاں پر ون ونڈو آپریشن کے تحت تمام تر سہولیات اور معلومات مہیا کی جارہی ہیں انہوں نے کہا کہ لیٹریسی ریٹ میں خیبر پختونخوا کا دوسرے صوبوں سے سبقت لے جانا ایک خوش آئند بات ہے اساتذہ اور محکمہ تعلیم کے انتظامی افسران کی کاوشوں سے ہمارا صوبہ تعلیم کے میدان میں دوسرے صوبوں سے آگے نکل گیا ہے،انہوں نے کہا کہ میں امید کرتاہوں کہ محکمہ تعلیم اس کوشش کو جاری رکھیگی اور صوبے میں تعلیم کی شرح کو 100فیصد تک بڑھائیگی۔


شیئر کریں: