Chitral Times

Jul 1, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

دھڑکنوں کی زبان . “مہڑپ یاترا” – محمد جاوید حیات

شیئر کریں:

دھڑکنوں کی زبان . “مہڑپ یاترا” – محمد جاوید حیات

مہڑپ تورکھو کا ایک خوبصورت گاوں ہے اس کی طرف امتحانی ڈیوٹی کا سفر تھا اس لۓ اس کو مقدس سفر یعنی “یاترا” لکھا ۔۔۔اس سال پانچ سال بعد امتحانی ڈیوٹی آٸی تو سوچا کہ مہڑپ جاٸیں کبھی جانے کا اتفاق نہیں ہوا تھا نٸی جگہ دیکھیں تو سہی ۔۔دس مٸ کو چترال میں امتحانی سپریٹنڈنس کا ورک شاپ تھا سنیٹینیل ہاٸی سکول چترال کا ہال قوم کے معماروں سے بھرا ہوا تھا ۔پشاور بورڈ کا نماٸندہ یونس صاحب موجود تھے بورڈ کی طرف سے آٸی ٹی سپیشلسٹ اور چترال کیمپس کے آٸی ٹی سپیشیلسٹ ولی صاحب موجود تھے ۔بورڈ کی طرف سے ہدایات دی گٸیں ۔امتحان شفاف کرنے کی التجا کی گٸی ۔آن لاٸن حاضری کے لۓ ٹیلیفونوں میں کوٸی App ڈاون لوڈ کیا گیا ۔چترال لوٸر کے ڈپٹی ڈی ای او شاہد حسین صاحب نے دردمندانہ اور پر مغز خطاب کیا ۔۔نقل کی ناسور کو ختم کرنے کی اپیل کی ۔امتحانی سنٹروں میں اساتذہ کی آو بگھت روکنے کی گزارش کی ۔انہوں نے مقدار اور معیار کا ذکر کیا ۔فرمایا کہ انہیں تعلیم کا معیار چاہیۓ مقدار نہیں ۔ان کا خلوص بولتا تھا ۔مگر میں نے دل پہ ہاتھ رکھا۔۔سکولوں میں اٹھویں جماعت تک امتحانات ہوچکے ہیں ۔ہدایات ہیں کہ کلاس بندی کراٸی جاۓ ۔فیل پاس کا تصور ختم ۔۔داخلہ مہم ۔۔جو بچہ جہان سے ملے لا کے داخلہ دیا جاۓ ۔۔سکول سے خارج ہونے کا تصور ختم ۔سزا کوٸی نہیں ۔۔۔مار سے نہیں پیار سے پڑھاو۔۔پبلک سکولوں میں پڑھاٸی اچھی ہے ۔۔داخلہ میرٹ پر ۔۔امتحان میرٹ پر ۔سرزنش جرمانے ۔۔۔فیس بھرنے میں تاخیر برداشت نہیں ہوگی۔۔میرٹ پر کوٸی رعایت نہیں ہوگی ۔والدین پہلے بچوں کا ہوم ورک چیک کریں گے پھر کھانا کھاٸیں گے ۔شاہد حسین صاحب نے فرمایا ہمیں خام مال نہیں چاہیۓ ۔لیکن وہ بھی سسٹم کے ہاتھوں مجبور ہیں ۔اساتذہ اداروں میں دھوپ میں بھیٹے ہیں پوچھنے والا کوٸی نہیں ۔پبلک سکولوں میں اساتذہ کو نوکری سے نکالے جانے کا خطرہ ہے ۔یہاں ہم ہر خطرے سے بالاتر ہٕیں ۔

ہم مہڑپ جاٸیں گے ۔ڈپٹی سپریٹنڈنٹ رفیع الدین دروش سے آگۓ ہیں بورڈ کا نماٸندہ ضیإ الاسلام آگۓ ہیں ۔ہم نے ٹیکسی پکڑی ہے رائین کے مقام پر ہمیں اتارا جاتا ہے کہوت کا کرایہ مبلغ سات سو روپیہ ہم میں سے ہر ایک سے وصول کیا جاتا ہے وہاں سے پھر 2500روپیہ دے کر ٹیکسی پکڑنی پڑی ہے ۔ہم پشاور سے بھی زیادہ کراۓ پہ چترال سے مہڑپ پہنچتے ہیں ۔مہڑپ کے لۓ کوٸی راستہ نہٕیں خوفناک چڑھاٸی پر پکڈنڈی ہے ۔۔۔مجھے” ہاٸی وے ٹو ہیون ” ناول یاد آیا ۔۔ساتھی نے کہا “ہاٸی وے ٹو ہیل ” یہ روڈ حکومت نے کب کے بنانی تھی یہ اس کے منہ پر بد نما داغ ہے ۔۔یہ قومی نمائندے جو بڑے بڑے دعوے کرتے ہیں ان کے لۓ چیلنچ ہے کہ وہ نا اہل ہیں ۔یہ روڈ سارے سرگرم این جی اووز کے لۓ سوالیہ نشان ہے جو پسماندگی دور کرنے اور خدمت خلق کا دعوی کرتے ہیں۔عصرکے وقت ہم ہاٸی سکول مہڑپ پہنچتے ہیں۔اساتذہ اور ہیڈ ماسٹر سردار صاحب انتظار میں ہیں ۔ ہمارے ساتھی نظام صاحب اور شیر رسول الحق صاحب پہنچتے ہیں ۔۔سکول ایک ویرانےمیں ہے۔۔ بے ترتیب عمارت ہے ۔۔کوٸی چاردیواری نہیں رات کو گیدڑ لومڑی لینگس اور کبھی کبھی بھڑیوں کا راج ہوتا ہے ۔ رات کو باہر نکلیں تو ان کی چیخ چاخ سے لرزہ براندام ہوں ۔امتحانی ہال کوٸی نہیں ۔بازو والی کرسیاں نہیں کہ بچے ان میں جوابی پرچہ رکھ کے لکھ سکیں ۔ایک شہید مولانا اللہ ان کی تربت نور سے بھر دے اپنی تقریر کے دوران “توجہ ” بولا کرتے تھے مجھے بھی توجہ توجہ کا نعرہ لگانا ہے ۔ہم مسافر اساتذہ کے ساتھ mess میں شریک ہوۓ ۔بچے قابل رحم کیونکہ دوران امتحان دو بار برف پڑی ۔بچے بچیان دو دو گھنٹے مسافت طۓ کرکے آتے ہیں ۔ان کی ہمت کو داد ہو ۔۔مہڑپ مہذب لوگوں کی سرزمین ہے ۔گاوں چھوٹے چھوٹے مگر چڑھاٸی اتراٸی ہموار زمین کہیں نہٕیں ۔گاوں والے جان کھپاتے ہیں پینےکے پانی کا مسلہ ہے سخت موسمی حالات سے لڑتے ہیں ۔ہم نے سفر کو “یاترا ” کہا کہ سفر بھی سقر ہے اور مقصد بھی مقدس ۔۔امتحانی عمل سے نقل کا خاتمہ ہو اور ساتھ ساتھ میرٹ کا بول بالا ہو ۔۔فیل پاس ہو سزاجزا ہو ۔اساتذہ جواب دہ ہوں تب معیار آۓ گا ۔۔شاہد صاحب پھر یاد آۓ اور جگر کی شاعری بھی۔۔۔۔

یہ ہے میکدہ یہاں رند ہٕیں یہاں سب کا ساقی امام ہے
یہ حرم نہیں ہے اے شیخ جی یہاں پارساٸی حرام ہے
کوٸی مست ہے کوٸی تشنہ لب تو کسی کے حصے میں جام ہے
مگر اس کو کوٸی کرے گا کیایہ تو میکدے کا نظام ہے
یہ جناب شیخ کا فلسفہ ہے عجیب سارٕے جہان سے
جو وہاں پیو تو حلال ہے جو یہاں پیو تو حرام ہے ۔۔۔۔۔
اسی کائینات میں اے جگر کوٸ انقلاب اٹھے گاپھر۔۔۔۔۔۔۔
کہ بلند ہو کے بھی آدمی ابھی خواہشوں کا غلام ہے


شیئر کریں: