Chitral Times

Oct 3, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

ضلعی افسران عوامی شکایات ومسائل حل کرنےپرتوجہ دیں سستی برتنے پر متعلقہ افسران کے خلاف کاروائی عمل میں لائی جائیگی۔ چیف سیکرٹری

Posted on
شیئر کریں:

افسران کھلی کچہریوں اور پاکستان سیٹیزن پورٹل کے ذریعے عوام کی شکایات و مسائل حل کرنے پر توجہ دیں اور قانون کے مطابق میرٹ پر ان کی شکایات کا فوری ازالہ کریں، سستی برتنے یا قانون کی خلاف ورزی پر متعلقہ افسران کے خلاف کاروائی عمل میں لائی جائیگی۔ چیف سیکرٹری خیبرپختونخوا
تجاوزات کے خلاف آپریشن میں 5ہزار 110 کنال سرکاری اراضی واگزار، تجاوزات کے خلاف آپریشن کا سلسلہ جاری۔ ڈاکٹر شہزاد خان بنگش

پشاور(چترال ٹائمز رپورٹ)چیف سیکرٹری خیبرپختونخوا ڈاکٹر شہزاد خان بنگش نے ضلعی جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے تمام ڈویژنل کمشنرز اور ضلعی افسران سے خطاب کے دوران کہا ہے کہ افسران عوام کی شکایات و مسائل حل کرنے پر توجہ دیں اور قانون کے مطابق میرٹ پر ان کی شکایات کا فوری ازالہ کریں۔ اجلاس میں تمام انتظامی سیکرٹریز، ڈویژنل کمشنرز اور تمام اضلاع کے ڈپٹی کمشنرز سمیت دیگر اعلی حکام نے شرکت کی۔ ڈائریکٹر پرفارمنس مینجمنٹ اینڈ ریفارمز یونٹ کیپٹن (ر) عبدالرحمن نے اجلاس کے شرکاء کو کھلی کچہریوں سے متعلق رپورٹ پیش کی۔ کیپٹن (ر) عبدالرحمن نے اجلاس کو بتایا کہ صوبے بھر میں دو ماہ کے دوران ضلعی سطح پر 175 کھلی کچہریاں منعقد کی گئی ہیں جس میں 85 کھلی کچہریاں ڈپٹی کمشنرز کی زیر صدارت منعقد ہوئیں۔ شرکاء کو مزید بتایا گیا کہ21 کھلی کچہریاں آن لائن، 4 خواتین، 3 اقلیتی برادری اور 2 کھلی کچہریاں کسانوں کے مسائل سے متعلق منعقد کی گئیں۔اس موقع پر چیف سیکرٹری خیبر پختونخوا ڈاکٹر شہزاد بنگش نے کہا کہ حکومت خیبرپختونخوا کی کوشش ہے کہ عوام کے مسائل ان کے گھر کی دہلیز پر حل کئے جائیں۔ انہوں نے سختی سے تاکید کی کہ عوام کے مسائل کے حل میں کسی بھی قسم کی سستی اور کوتاہی کو ہرگز برداشت نہیں کیا جائے گا۔

انہوں نے تمام متعلقہ افسران کو ہدایات جاری کرتے ہوئے کہا کہ افسران عوام کی شکایات و مسائل حل کرنے پر توجہ دیں اور ان کی شکایات کا قانون کی روشنی میں اور میرٹ پر فوری ازالہ کریں۔ ڈائریکٹر پرفارمنس مینجمنٹ اینڈ ریفارمز یونٹ کیپٹن (ر) عبدالرحمن نے صوبے بھر میں ہونے والی ریگولیٹری انسپکشنز کے حوالے سے اجلاس کے شرکاء کو بتایا کہ صوبہ بھر میں ماہ جنوری میں 78ہزار 914 اور ماہ فروری میں 75ہزار اور 50 یونٹس/کاروباروں کے معائنے کئے گئے اس دوران قانون کی خلاف ورزی کرنے والے یونٹس پر دو ماہ کے دوران 28.8 ملین روپے جرمانے عائد کئے گئے۔اسی طرح ماہ جنوری اور فروری میں 2ہزار 668 یونٹس/کاروباروں کیخلاف ایف آئی آرز بھی درج کئے گئے۔ اجلاس کو مزید تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے ڈائریکٹر پی ایم آر یو نے کہا کہ دو ماہ کے دوران 348افراد کو قانون کی خلاف ورزی پر جیل بھیج دیا گیاہے جبکہ 4ہزار 611 یونٹس/کاروبار سیل کردئیے گئے ہیں جبکہ 24ہزار 732 یونٹس کو وارننگز جاری کی گئیں۔ گڈ گورننس حکمت عملی کے تحت صوبے بھر میں ہونے والی کاروائی پر بھی روشنی ڈالی گئی۔ ڈائریکٹر پرفارمنس مینجمنٹ اینڈ ریفارمز یونٹ کیپٹن (ر) عبدالرحمن نے اجلاس کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ دو ماہ کے دوران تجاوزات کے خلاف آپریشن کے دوران 5ہزار 110.6 کنال اراضی واگزار کی گئی ہے۔ 130 غیرقانونی کان کنی کے خلاف بھی کاروائی عمل میں لائی گئی۔ 413 بس اڈوں اور ٹرمینلز میں بھی بہتری لائی گئی ہے۔ 3ہزار 584 غیرقانونی سپیڈ بریکرز اور 2ہزار 141 غیر قانونی بل بورڈز کو ہٹایا گیا ہے۔ جبکہ مختلف کھیلوں کے 266 پروگرامات بھی منعقد کئے گئے ہیں۔

ضلعی افسران عوامی شکایات ومسائل حل کرنےپرتوجہ دیں سستی برتنے پر متعلقہ افسران کے خلاف کاروائی عمل میں لائی جائیگی۔ چیف سیکرٹری


شیئر کریں: