Chitral Times

Oct 6, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

صوبائی فوڈ کمیٹی نے چترال کے گندم کوٹہ کو لوکل چکی انڈسٹری کو پسائی کیلئے دینے کی منظوری دے دی 

Posted on
شیئر کریں:

خیبرپختونخوا کے وزیر خوراک اور سائنس و انفارمیشن ٹیکنالوجی عاطف خان کی زیر صدارت صوبائی فوڈ کمیٹی کا اجلاس
کمیٹی نے چترال کی مختص گندم کوٹہ پسائی کیلئے علاقائی چکی مشین انڈسٹری کو دینے اور گنجان آباد شہروں کا گندم کوٹہ ضرورت کے مطابق ضلعی سطح پر 5 فیصدجبکہ ہیڈکوارٹر سطح پر 10 فیصد بڑھانے کی منظوری دے دی

پشاور (چترال ٹائمز رپورٹ) خیبرپختونخوا کے وزیر برائے خوراک اور سائنس و انفارمیشن ٹیکنالوجی عاطف خان نے کہا ہے کہ صوبے میں گندم کی کافی مقدار موجود ہے اور تمام اضلاع کو آبادی کے تناسب سے گندم کی فراہمی جاری ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے پشاور میں صوبائی فوڈ کمیٹی کی منعقدہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں سیکرٹری محکمہ خوراک،ڈائریکٹر فوڈ، کمیٹی ممبران سمیت دیگر متعلقہ حکام نے شرکت کی۔اجلاس کو بتایا گیا کہ صوبے کے تمام اضلاع کے لئے محکمہ خوراک کی جانب سے آبادی کے تناسب سے گندم کا خاص کوٹہ مختص کیا گیا ہے، تاہم پشاور سمیت دیگر گنجان آباد بڑے شہروں میں مقامی آبادی کے ساتھ نہ صرف دیگر اضلاع سے تعلق رکھنے والے افراد مقیم ہیں، بلکہ شہری علاج، کاروبار اور سیاحت سمیت دیگر کاموں کے لئے بھی ان اضلاع کا رخ کرتے ہیں۔ جن کی وجہ سے ان علاقوں پر اضافی بوجھ پڑ تا ہے۔ اسکے اجلاس کو چترال کے علاقے کے باشندہ گان کے مطالبے سے بھی آگاہ کرتے ہوئے بتایا گیا کہ چترال اپر اور لوئر کے لئے گندم کا مختص کوٹہ علاقائی چکی والوں کو پیسنے کیلئے فراہم کیا جائے تاکہ علاقے کے شہریوں کو بآسانی میسر ہو۔ کمیٹی ارکان نے طویل مشاورت کے بعد صوبائی وزیر خوراک کی سربراہی میں بڑے شہروں سمیت سیاحتی مقامات کو گندم کوٹہ ضرورت کی بنیاد پرضلعی سطح پر 5 فیصدجبکہ ہیڈکوارٹر سطح پر 10 فیصد بڑھانے اور چترال کے کوٹہ کو لوکل چکی انڈسٹری کو پسائی کیلئے دینے کی منظوری دے دی جسے پالیسی کا حصہ بھی بنایا جائے گا۔ اجلاس کے آخر میں عاطف خان نے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ تمام اضلاع کو پالیسی کے مطابق گندم کی فراہمی یقینی بنائی جائے اور اس سلسلے میں کسی قسم کی کوئی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی.

صوبائی فوڈ کمیٹی نے چترال کے گندم کوٹہ کو لوکل چکی انڈسٹری کو پسائی کیلئے دینے کی منظوری دے دی 


شیئر کریں: