Chitral Times

Jan 19, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

متعدد اضلاع میں 16 تا31 دسمبر2021 تک سمارٹ لاک ڈاون کا فیصلہ، چترال سمیت9 اضلاع مستثنیٰ

شیئر کریں:

پشاور (چترال ٹائمز رپورٹ) این سی اوسی کے حالیہ فیصلوں، کورونا وائرس کے کم پھیلاؤکی شرح اور کامیاب ویکینیشن مہم کو مدنظر رکھتے ہوئے حکومت خیبر پختونخوا نے 16 دسمبر تا31 دسمبر2021 تک ماسوائے اضلاع، پشاور، چارسدہ، چترال, اورکزئی، بونیر، صوابی، کرم، ایبٹ آباد اور بٹگرام کے صوبے کے لئے درج ذیل ہدایات جاری کی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق تمام کاروباری سرگرمیاں، اسٹبلشمنٹ اور بازار رات 10 بجے تک بند کئے جائیں گے جبکہ میڈیکل خدمات اور فارمیسیز/میڈیکل سٹورز ویکینیشن مراکز، تندور، دودھ / دہی د کانیں، ای کامرس(ہوم ڈیلیوری)، یوٹیلٹی سروسز (بجلی، گیس انٹرنیٹ، سیلولرز نیٹ ورک /ٹیلی کام، کال سنٹرز)، پیٹرول پمپس اور زرعی مشینوں کی دکانیں / ورکشاپس اس پابندی سے مستثنیٰ ہوں گی.

اس طرح آؤٹ ڈور شادی کے پروگرامز مکمل ویکسین شدہ افراد کیلئے زیادہ سے زیادہ 500 افراد تک جبکہ ان ڈور پروگرامز میں بھی مکمل ویکسین شدہ 300 مہمانوں تک کی جازت ہوگی۔ تمام سرکاری پرائیویٹ محکمے/ دفاتر مکمل ویکسین شدہ اہلکاروں کی 100 فیصد حاضری کیساتھ اپنے فرائض سرانجام دیں گے جبکہ تمام عوامی جگہوں پر ماسک پہننا لازمی ہوگا اسی طرح شہروں کے اندر بین الاضلاعی اور بین الصوبائی پبلک ٹرانسپورٹ 80 فیصد گنجائش کے ساتھ مکمل ویکسین شدہ افراد کے لئے ہفتے کے ساتوں دن سخت احتیاطی تدابیر (Sops) کیساتھ چلے گی۔ مزارات اور سنیماز مکمل ویکسین شدہ افراد کے لئے کھلے رہیں گے اور ہر قسم کھیلوں کی سرگرمیوں اور جیم میں بھی متعلقہ پابندیوں کے ساتھ مکمل ویکسین شدہ افراد کو اجازت ہوگی۔

تمام پارکس، واٹر سپورٹس اور سوئمنگ پولز 70 فیصد گنجائش کیساتھ کھلے رہیں گے۔ اسی طرح صوبے میں سیاحتی مقامات میں مکمل ویکسین شدہ افراد کے لئے سخت ایس او پیز کے ساتھ اجازت ہوگی اسی طرح تجزیہ کردہ متاثرہ علاقوں میں متعلقہ ایس او پیز / پروٹوکول پر مبنی مائیکرا براڈر/ سخت لاک ڈاؤن کے نفاذ کو یقینی بنایا جائے گا۔ اس سلسلے میں این سی او سی باقائدہ طور پر وفاقی اکائیوں کے مابین معلومات کا تبادلہ کرے گی۔ مزید برآں اضلاع کی انتظامیہ اور محکمہ اطلاعات اس سلسلے میں خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف کاروائیوں کی میڈیا اور اخبارات میں وسیع پیمانے پر تشہیر کیلئے اقدامات کریں گے۔ مذکورہ ہدایات/ احکامات پر سختی سے عملدرآمد کے لئے پولیس اور ضلعی انتظامیہ باہمی روابط کے ذریعے کام کریں گے۔ ان امور کا اعلان محکمہ داخلہ و قبائلی امور حکومت خیبر پختونخوا کے جاری کردہ ایک اعلامیے میں کیا۔


شیئر کریں: