Chitral Times

Aug 13, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

چترال کیلئے منظور شدہ گیس پلانٹس کو ختم کرنے کے حکو متی کوششوں کو پشاورھائی کورٹ میں چیلنج کردیا گیا

شیئر کریں:

چترال ( نمائندہ چترال ٹائمز ) چترال دروش کی معروف سماجی شخصیت رضیت باللہ نے بزریعہ شیر حیدر ایڈوکیٹ پشاور ھائی کورٹ میں ایک کیس دائر کرتے ھوۓ موقف اپنایا ھے کہ سابق حکومت میں جنگلات کی بے دریغ کٹائی کی روک تھام، جنگلی حیات کے تحفظ اور پسماندہ علاقے کے لوگوں کو بہم سہولیات پہنچانے کیلۓ گیس پلانٹس بھاری رقم سے منظور کرکے کام کا اغاز کر دیا گیا تھا جس سے 203 ملین کے رقم سے دروش ۔ بروز ۔ اور چترال میں زمین بھی خریدی گئ تھی اور300 ملین کے خطیر رقم سے بیرون ملک سے مشینری بھی درامد کرکے پاکستان کے شہر رحیم یار خان میں پڑی ھے جبکہ باقی مراحل میں ان پلانٹس کی تنصیب کا کام رھتا تھا مگر بد قسمتی سے موجودہ حکومت نے پلانٹس کو تنصیب کرنے کے بجاۓ ایک مراسلہ بتاریخ 12 جنوری 2021 سوئی ناردن گیس پائپ لائن کے منصوبے کو ختم کرنے کا کہا ہے لہذا ھم معزز عدالت سے درخواست کرتے ھیں کہ اس سے پہلے کہ یہ منصوبہ ختم ھو زمین اور مشینری کو نیلام کرنے سے روک کر دروش ایون اور چترال میں گیس پلانٹس کے تنصیب کے احکامات جاری کرے تاکہ جنگلات ۔ جنگلی حیات کے تحفظ کو یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ عوام کو بھی سہولت پہنچے۔

chitraltimes Razitubillah high court

شیئر کریں: