Chitral Times

Jan 23, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

چترال کا ایک اور اعزاز -محمد علی الرحمن قاضی چترالی

شیئر کریں:

الحمد للہ چترال ہمیشہ سے مردم خیز رہا ہے۔ چترال کیہونہار سپوت اپنی محنت اور قابلیت سے زندگی کے تمام شعبوں میں چترال کا نام روشن کرتے آرہے ہیں۔ جن پر چترالی عوام کو فخر ہے۔ آج بھی میں اس فرزند چترال کا تذکرہ کرنے لگا ہوں جو تمام چترال کیلئے یقینا قابل فخر ہے۔


دنین لشٹ چترال کے مشہورکاروباری اور سماجی شخصیت حاجی ظاہر خان کے فرزند ارجمند اور چیف آفیسر رحمت کبیر خان(کجو) کے داماد جناب ارشادالرحمن رحمانی بھی چترال کے ان قابل فخر سپوتوں میں سے ایک ہیں، جنہوں نے اللہ کے فضل و عنایت اور اپنی ان تھک محنت کے بل بوتے پر انتہائی کم عرصے میں ترقی کی کافی ساری منزلیں طے کرنے میں کامیاب ہو چکے ہیں۔
ارشاد الرحمن رحمانی نے بہت ہی کم عمری میں قرآن مجید فرقان حمید حفظ کرنے کی سعادت حاصل کی۔ یہاں تک کہ کم عمری کی

chitraltimes irshadur rehman rahmani daninlasht phd scholor 3

وجہ سے کئی سال تک تراویح پڑھانے کی اجازت نہیں ملی۔ اس کے بعد پاکستان کیمشہور دینی ادارہ جامعہ فریدیہ اسلام آباد میں امتیازی حیثیت سے دینی علم حاصل کی۔ اس طرح 2004 میں بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی کے شعبہ قانون اور شریعہ میں داخلہ لینے میں کامیاب ہوگیا۔ اس کے بعد اسی یونیورسٹی سے بین الاقوامی قانون میں ایل ایل ایم کی سند حاصل اور بین الاقوامی اسلامی یونورسٹی کے شعبہ قانون اور شریعہ میں لیکچرر کی حیثیت سے کام کرنا شروع کیا۔ شریعہ اینڈ لا‌ء ڈیپارٹمنٹ میں پہلا چترالی استاد ہونے کا اعزاز بھی انہیں حاصل ہے۔ 2014 میں اکسفورڈ کالج دبئی میں لیکچرر تعینات ہوئے اور ایک سال تک وہاں طلباء کا علمی پیاس بجھاتیرہے۔ 2015 کے اواخر میں پاکستان واپس آئے اور پاکستان کے مشہور ادارہ اسلامیہ کالج یونیورسٹی پشاور کے شریعہ اینڈ لاء ڈیپارٹمنٹ میں لیکچرر کے حیثیت سے پانچ سال کام کیا۔ اسی دوران سیکاس یونیورسٹی پشاور سے بھی وابستہ رہے اور اپنی قابلیت اور علمی صلاحیتوں سیطلباء کو مستفید کرتے رہے۔ اسی عرصے 2017 میں پشاور میں زلمی فٹنس جم کی بنیاد رکھی،جو پنپ کر اب ایک باعتماد ادارہ بن چکا ہے اور رحمانی صاحب اس ادارے کیچیف ایگزیکٹیو ہیں، اور رحمانی لاء چیمبر بھی قائم کیا جو لوگوں کو قانونی تعاون فراہم کرنے میں مگن ہے۔


موصوف نے تعلیمی سرگرمیوں کے ساتھ غیر نصابی میدان میں بھی اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا۔ فٹبال سے شغف رکھنے والے دوست بخوبی جانتے ہیں کہ رحمانی صاحب نے فٹبال کی دنیا میں بھی کافی کامیاب رہ چکے ہیں۔ چھ سال تک اسلامی یونیورسٹی فٹبال ٹیم کے کیپٹن رہے ہیں اور اسلامی یونیورسٹی کی تاریخ میں پہلا پاکستانی فٹبال کیپٹن بننے کا اعزاز بھی رحمانی کو حاصل ہے اور اپنی سربراہی میں ٹیم کو پورے پاکستان میں ابھارا۔ آل پاکستا ن یونیوسٹی فٹ بال ٹیم کا کپتان بھی رہ چکے ہیں۔
اللہ تعالی نے موصوف کو بے شمار صلاحیتوں سے نوازا ہے۔ رحمانی صاحب آٹھ مختلف زبانوں پر عبور رکھتے ہیں جن میں بین الاقوامی زبانیں انگریزی، عربی، فارسی بھی شامل ہیں۔ موصوف چترالی، اردو، عربی اور فارسی میں شاعری بھی کرتے ہیں۔
مختصر یہ کہ موصوف نے زندگی کے مختلف شعبوں میں کسی نہ کسی طرح حصہ لیا اور ہر شعبہ میں کامیابی اپنے نام کرنے میں کامیاب رہے۔

chitraltimes irshadur rehman rahmani daninlasht phd scholor 2


ارشادالرحمان رحمانی ایک بہترین محقق اور سکالر ہیں بیسیوں تحقیقی مقالوں میں کام کیا اور اپنا لوہا منوایا ہے۔ اپنی بے پناہ قابلیت اور محنت کی بدولت حال ہی میں دو کامیابیاں حاصل کی ہیں۔


1۔ چائنا کی حکومت کی طرف سے موصوف کو بین الاقوامی قانون میں چار سال کیلئے مفت تعلیم حاصل کرنے کا موقع دیا گیا ہے۔
2۔ حال ہی میں موصوف کو (Puntland State University) PSU افریقہ کیشعبہ قانون نے اسسٹنٹ پروفیسر کی حیثیت سے تعینات کیا ہے۔ چترال کی تاریخ میں (جہاں تک مجھے معلوم ہے) شاید موصوف چترال کے وہ پہلے سپوت ہیں جو بیرون ملک کسی بڑی سرکاری یونیورسٹی میں اتنے بڑے عہدے پر فائز ہوئے ہوں۔ اللہ تعالی موصوف کیلئے مزید ترقی کی راہیں ہموار کرے۔
عجیب بات یہ ہے کہ اللہ نے موصوف کے وقت میں اتنی برکت دے رکھی ہے کہ بیک وقت پڑہتے پڑھاتے بھی ہیں کھیلتے کھلاتے بھی ہیں، تحقیق اور ریسرچ بھی کررہے ہوتے ہیں، کاروبار بھی کر رہے ہوتے ہیں، چمبر بھی چلا رہے ہوتے ہیں اور محفلوں میں مسکراہٹیں بھی بٹور رہے ہوتے ہیں۔


ایک اور عجیب بات جس سے میں بیحد متاثر ہوں، وہ یہ ہے کہ موصوف اپنی طالب علمی کے زمانے سے لیکر تادم تحریر هذا جن اساتذہ کرام کے لیکچرز سنے، یا خود بحیثیت استاذ لیکچرز دئے، وہ سب Written form میں موصوف کے پاس محفوظ ہیں جو موصوف کی علم دوستی اور تعلیم و تعلم کیساتھ بے پناہ عشق و محبت کی روشن دلیل ہے۔


اللہ سے دعا ہے کہ اللہ موصوف کو ہر قسم کے آفات و بلییات اور حاسدوں کے شر سے محفوظ رکھے اور چترال کے نام کو مزید روشن کرنے کی توفیق عطا کرے۔ آمین یا رب العالمین


محمد علی الرحمن قاضی چترالی
پی ایچ ڈی ریسرچ سکالر
یونیورسٹی آف پشاور


شیئر کریں: