Chitral Times

Jan 23, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

میری کوشش ہے کہ پسماندہ علاقوں کو اپنے دور حکومت میں سب سے زیادہ ترقی دی جائے: وزیراعظم

شیئر کریں:

میانوالی(سی ایم لنکس)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان کے فیصلے عوامی امنگوں کے مطابق کئے جائیں گے، مسائل کے حل کیلئے سب سے بات کرنے کو تیار ہیں، قانون کی بالادستی کے بغیر قومیں تباہ ہوجاتی ہیں، ملک کو لوٹنے والوں کو این آر او دیں گے نہ مفاہمت کریں گے، مہذب معاشروں میں چوروں سے ڈیل نہیں کی جاتی، وقت ثابت کرے گا کہ میں قوم کو مایوس نہیں کرونگا، ماضی میں کسی حکومت نے کبھی غریبوں کے بارے میں نہیں سوچا، ہمارے پانچ سالہ دور حکومت میں پسماندہ علاقوں کی سب سے زیادہ ترقی ہوگی، مہنگائی پوری دنیا کا مسئلہ ہے ، مہنگائی کی سب سے بڑی وجہ کورونا کی عالمی وبا ہے، کورونا کے باعث تجارت کم ہوگئی اور اشیاء کی قیمتیں بڑھ گئیں لیکن آج بھی پاکستان دنیا میں سب سے سستا ملک ہے، تین سے چار ماہ کے دوران اشیاء کی قیمتیں کم ہونا شروع ہوجائیں گی،

مارچ تک پنجاب میں ہرخاندان کو صحت کارڈ کی سہولت دستیاب ہوگی، گھرکی تعمیرکیلئے بلاسود قرضے دیئے جارہے ہیں، 62 لاکھ سے زیادہ نوجوانوں کو اعلیٰ تعلیم کیلئے 47 ارب روپے کے وظائف فراہم کئے جارہے ہیں،نوجوان آئندہ بلدیاتی الیکشن کی تیار ی کریں اور انتخابات میں بھرپور شرکت کریں، ماضی کی حکومتوں نے بجلی کے مہنگے منصوبے لگائے، ہمارے دور حکومت میں میانوالی میں ریکارڈ ترقی ہوگی، میانوالی کے عوام کی خدمت کرکے ان کا احسان اتاروں گا، میانوالی میں تعمیرہونے والی نمل یونیورسٹی پاکستان کی آکسفورڈ یونیورسٹی ہوگی جس میں پورے ملک سے طلباء تعلیم کیلئے آئیں گے۔ ان خیالات کا اظہار وزیراعظم عمران خان نے ہفتہ کو میانوالی میں عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر انہوں نے جلسہ گاہ میں اپنے اورکارکنوں کے درمیان فاصلہ پر گلہ بھی کیا۔ انہوں نے کارکنوں کا خصوصی شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ آج اگرمیں وزیراعظم ہوں تو اس میں سب سے زیادہ کردار میانوالی کے کارکنوں کا ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ جب ہماری حکومت کے پانچ سال مکمل ہونگے تو پسماندہ علاقوں میں سب سے زیادہ اور تاریخی ترقی ہوگی جو ماضی میں نہیں ہوئی۔

انہوں نے کہا کہ میں نے میانوالی کے عوام سے وعدہ کیا تھا کہ جب بھی اللہ تعالیٰ موقع دیں گے تو میں اپنی کارکردگی اورخدمت سے ان کا احسان اتاروں گا۔ وزیراعظم نے کہا کہ میں نے انتخاب سے قبل وعدہ کیا تھا کہ بھکر، ڈیرہ اسماعیل خان، میانوالی اور قبائلی علاقوں سمیت پاکستان کے پسماندہ علاقوں کو ترقی دی جائے گی کیونکہ سہولیات نہ ملنے کی وجہ سے پسماندہ علاقوں کی عوام غریب سے غریب تر جبکہ امیر طبقہ امیر ترین ہوگیا۔ انہوں نے کہا کہ میری کوشش ہے کہ پسماندہ علاقوں کو اپنے دور حکومت میں سب سے زیادہ ترقی دی جائے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ میں تعلیم پر سب سے زیادہ توجہ دے رہا ہوں تاکہ سکولوں میں تعلیم کا معیار بہتر ہو اورخواتین کو بھی بہترین تعلیم حاصل ہوسکے۔ انہوں نے کہا کہ نمل یونیورسٹی اقتدار میں آکر نہیں بلکہ حکومت سے قبل پیسے اکھٹے کرکے تعمیر کی جس کا مقصد ملک کے نوجوانوں کو معیاری تعلیم کی فراہمی تھا۔ انہوں نے کہا کہ نمل یونیورسٹی میں پورے ملک سے نوجوان تعلیم حاصل کررہے ہیں اور مستقبل میں بھی کریں گے یہاں پر اعلیٰ تعلیم عالمی معیار کے مطابق دی جاتی ہے اور نمل یونیورسٹی ملک کی آکسفورڈ یونیورسٹی بنے گی۔

وزیراعظم عمران خان نے میانوالی، بلکسر اور مظفرگڑھ سڑک کے حوالے سے کہا کہ ٹریفک زیادہ ہونے کی وجہ سے اس پر حادثات ہوتے تھے لیکن اب اس کی تعمیر سے سفر کی بہترین سہولیات حاصل ہونگی اور یہ منصوبہ ڈیڑھ سال میں مکمل ہوگا۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان سمیت دنیا کا سب سے بڑا مسئلہ مہنگائی ہے جس کی وجہ کورونا کی وبا ء اورلاک ڈاؤنز ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عالمی سطح پر کورونا کے باعث کاروبار بند ہوئے اورتجارت میں بھی کمی آئی جس سے پیداوار بھی متاثر ہوئی اور قیمتوں میں اضافہ ہوگیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ صرف ہمارا مسئلہ نہیں ہے بلکہ پوری دنیا کا مسئلہ ہے۔ وزیراعظم نے امریکہ کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ 1982ء کے بعد کورونا کی وجہ سے امریکہ میں سب سے زیادہ مہنگائی ہوئی ہے لیکن پاکستان اب بھی سب سے سستاملک ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئندہ تین سے چار ماہ کے دوران قیمتوں میں کمی ہوگی۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ قیمتوں میں اضافہ سے عوام کو ریلیف دینے کیلئے50 ہزار روپے ماہانہ سے کم آمدنی والی پاکستان کی آدھی آبادی کو آٹا، گھی اوردالوں وغیرہ پر30فیصد سبسڈی دیں گے، احساس راشن پروگرام کے تحت ان کیلئے قیمتیں کم ہونگی۔ وزیراعظم نے مزید کہا کہ حکومت کامیاب پاکستان پروگرام لا رہی ہے جس کے تحت 20 لاکھ کمزور ترین خاندانوں کو پانچ لاکھ روپے تک بلا سود قرضے فراہم کئے جائیں گے، اس کے علاوہ کسانوں کو دیہات اور شہر میں کاروبار کیلئے بلا سود قرضہ اور گھرکی تعمیر کیلئے 27 لاکھ روپے تک کا بلا سود قرضہ دیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ آئندہ سال مارچ تک پورے صوبہ پنجاب میں ہرخاندان کو انصاف صحت کارڈ کی سہولت حاصل ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ صوبے کے ہرخاندان کے پاس دس لاکھ روپے کی ہیلتھ انشورنس ہوگی اور وہ نجی اور سرکاری ہسپتالوں سے مفت علاج کراسکیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اگر غریب گھرانے میں بیماری ہوتو وہ مقروض ہوجاتا ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ نوجوانوں کی تعلیم کیلئے پاکستان کی تاریخ کی سب سے بڑی سکالر شپ لا رہے ہیں اور نوجوانوں کو 47 ارب روپے کے وظائف میرٹ پر دیئے جائیں گے تاکہ اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کے خواہشمند غریب گھرانوں کے 62 لاکھ نوجوانوں کو سکالر شپ مل سکے۔ وزیراعظم نے کہا کہ میں نے اپنی انتخابی مہم کے دوران وعدہ کیا تھا کہ پاکستان کسی کے سامنے سر نہیں جھکائے گا ہم ایک آزاد ملک میں اور کبھی بھی کسی کی غلامی نہیں کریں گے، اپنے پاؤں پرکھڑے ہوکر اپنے فیصلے خود کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ ماضی میں آزادانہ فیصلے نہیں کئے جاسکے لیکن اب پاکستان میں عوام کی بہتری اور فلاح وبہبود کے فیصلے ہونگے۔ وزیراعظم عمران خان نے واضح کیا کہ ہم سب سے بات چیت کیلئے تیار ہیں اور مختلف نظریات رکھنے والوں سے بھی مذاکرات کیلئے آمادہ ہیں ہم مل بیٹھ کر پرامن طریقے سے مسائل کا حل چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بلوچستان، وزیرستان اورسابق قبائلی علاقوں کے مسائل بھی بات چیت سے حل کریں گے۔ وزیراعظم نے کہا کہ ملک کے عوام کا پیسہ چوری کرنے اور اسے بیرون ملک منتقل کرنے والوں سے مفاہمت نہیں کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے نبی کریم ﷺنے کہا تھا کہ جس قوم میں قانون کی حکمرانی اوربالادستی نہ ہو وہ تباہ ہوجاتی ہے کیونکہ بڑے بڑے ڈاکوؤں کو این آر او دینے والی قومیں کبھی ترقی نہیں کرسکتیں۔ انہوں نے کہا کہ سب سے مفاہمت کیلئے تیار ہیں لیکن اقتدارمیں رہ کر کرپشن کرنے، پیسہ چوری کرنے اور اس کو باہر لے کر جانے والوں سے حکومت کبھی بھی مفاہمت نہیں کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ جب چوری کو برا نہ سمجھے جائے تو کوئی بھی محنت نہیں کرتا جس سے ملک ترقی نہیں کرسکتا۔ وزیراعظم نے کہا کہ ہر مہذب معاشرے میں چوروں کو جیلوں میں ڈالا جاتا ہے اور ان سے ڈیل نہیں کی جاتی، خوشحال ملکوں میں قانون کی بالا دستی ہے جبکہ غریب ممالک میں طاقت ورکیلئے علیحدہ اورغریب کیلئے علیحدہ قانون ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہمارے نبی کریم ﷺنے واضح کیا تھا کہ اگرمیری بیٹی بھی چوری کریگی تو اس کو بھی سزا ملے گی۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ہمیں حضور نبی کریمﷺکی زندگی سے سیکھنا چاہئے کہ آپﷺنے کن اصولوں پر مدینہ کی ریاست قائم کی، اس میں ہی ہماری بہتری ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ریاست مدینہ کے اصولوں پرچلیں گے، قانون کی حکمرانی اور فلاحی ریاست کے بنیادی نظریوں پر عمل پیرا ہوکر ملک کو اوپر اٹھائیں گے اور پاکستانیوں کو ایک عظیم قوم بنائیں گے۔ اپنے خطاب کے آخر میں وزیراعظم عمران خان نے مزید کہا کہ اگر آپ لوگ میرے ساتھ نہ ہوتے تو آج میں یہاں کھڑا نہ ہوتا، آپ نے ہمیشہ میرا ساتھ دیا ہے اور میرا وعدہ ہے کہ آپ کو کبھی مایوس نہیں کرونگا، پاکستان ایک عظیم خواب کی تکمیل کا نام ہے اسی خواب پرقوم کو ایک عظیم قوم بناؤں گا۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ مہاڑ کیلئے نہر کی تعمیرکے علاوہ سولر ٹیوب ویلز سمیت پانی کی دستیابی کے دیگر وسائل کا جائزہ لے رہے ہیں تاکہ کاشتکار مہنگی بجلی سے بچ سکیں۔

انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے مہنگی بجلی کے تمام معاہدے ماضی کی حکومتوں نے کئے۔ وزیراعظم عمران خان نے نوجوانوں پر زوردیا کہ آئندہ بلدیاتی الیکشن کی تیاری کریں اور انتخابات میں بھرپور شرکت کریں۔ قبل ازیں میانوالی پہنچنے پر وزیراعظم عمران خان نے عوامی فلاح وبہبود کے اربوں روپے کے مختلف میگا ترقیاتی منصوبوں کا فتتاح کیا اور سنگ بنیاد رکھا۔جلسہ سے وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار اور رکن قومی اسمبلی امجد علی خان نے بھی خطاب کیا۔ جلسہ میں میانوالی سمیت علاقے کے عوام اور بالخصوص نوجوانوں نے بھرپورشرکت کی۔


شیئر کریں: