Chitral Times

Dec 3, 2021

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

ضلع چترال میں 4300میگاواٹ بجلی پیداکرنے کی استعداد موجود ہے،تاج محمد ترند

شیئر کریں:

ایف ڈبلیواو506میگاواٹ پن بجلی کے تین منصوبوں پر کام کررہی ہے،پیداوارسے صنعتی شعبہ ترقی کرے گا،معاون خصوصی برائے توانائی کو بریفنگ


پشاور (نمائندہ چترال ٹائمز ) وزیراعلیٰ کے معاون خصوصی برائے توانائی تاج محمد ترندنے کہا ہے کہ ضلع چترال توانائی کے وسائل سے مالامال ہے جہاں 4300میگاواٹ سستی پن بجلی پیداکرنے کی استعدادموجود ہے۔فرنٹیرورکس آرگنائزیشن(ایف ڈبلیواو)چترال میں 506میگاواٹ پن بجلی کے تین منصوبوں پر کام کررہی ہے جن کی تکمیل سے صوبے کو سالانہ اربوں روپے کی آمدن متوقع ہے تودوسری جانب سستی بجلی کی پیداوارسے صنعتی شعبہ ترقی کرے گااورروزگارکے نئے مواقع پیداہونگے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایف ڈبلیواوکے پراجیکٹ ڈائریکٹربریگیڈیئر(ر)طارق محمودکی جانب سے ضلع چترال میں جاری توانائی منصوبوں پر کام کی پیش رفت کے بارے میں اعلیٰ سطحی بریفنگ کے دوران کیا۔

اس موقع پر سیکرٹری توانائی وبرقیات انجینئرسید امتیازحسین شاہ،چیف ایگزیکٹو پیڈوانجینئرنعیم خان بھی موجودتھے۔ بریفنگ کے دوران بتایاگیاکہ ایف ڈبلیواوضلع چترال میں پن بجلی کے تین منصوبوں شو غور سین137میگاواٹ،ششگئی زنڈولی144میگاواٹ اورلاسپورمیراگرام 230میگاواٹ پر کام کررہی ہے۔اس دوران منصوبوں کی فیزیبلٹی سٹڈیز،پیداواری لائسنس اوراراضی کے حصولے کے حوالے سے کئے گئے اقدامات اوردیگر درپیش مسائل پر سیرحاصل گفتگوکی گئی۔

اس موقع پر معاون خصوصی تاج محمد ترندنے ایف ڈبلیواوکے حکام کومنصوبوں کے حوالے سے درپیش مسائل کو حل کرنے کے لئے صوبائی حکومت کے بھرپورتعاون کی یقین دہانی کرائی۔ سیکرٹری توانائی انجینئرسید امتیازحسین شاہ نے کہا کہ ضلع چترال میں توانائی کی پیداوارکے بے پناہ وسائل موجود ہیں جہاں سستی پن بجلی پیداکرکے نئے اکنامک زونز قائم کئے جاسکتے ہیں۔چیف ایگزیکٹوپیڈوانجینئرنعیم خان نے کہا کہ چترال میں نئے گرڈاورٹرانسمیشن لائن کے قیام کے لئے صوبائی حکومت نے پلان ترتیب دیا ہے۔


شیئر کریں: