Chitral Times

Sep 16, 2021

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

کالاش تہوار اوچاو اختتام پذیر، معاون خصوصی وزیر زادہ نے چھارسو گروم کا افتتاح کیا

شیئر کریں:

کالاش تہوار اوچاو اختتام پذیر، معاون خصوصی وزیر زادہ نے چھارسو گروم کا افتتاح کیا

چترال ( نمائندہ چترال ٹائمز ) معاون خصوصی وزیر اعلی خیبر پختونخوا وزیر زادہ نے گذشتہ روز آبائی گاوں رمبور کے چھارسو گروم میں کالاش مذہبی تہوار اوچاو(OCHAW) کا افتتاح کیا ۔ اس موقع پر ان کے ہمراہ صوبائی وزیر جیل خانہ جات شفیع اللہ خان ، مرکزی جوائنٹ سیکرٹری پی ٹی آئی مصدق گھمن ،ایم این اے میاں محبوب ، ایم پی اے سردار رنجیت سنگھ ، رہنما پاکستان تحریک انصاف اپردیر انورخان ، رہنما پی ٹی آئی چترال عبداللطیف ، اسرار صبور وغیرہ موجود تھے ۔

فیسٹول کی جگہے پر معاون خصوصی اور دیگر مہمانوں کو کالاش قبیلے کی طرف سے روایتی ڈریس چپان پہنائے گئے ۔ اور ٹوپی پیش کئے گئے ۔ چیف کالاش قاضی شیرزادہ خان نے مہمانوں کو خوش آمدید کہا ۔ اور فیسٹول کے بارے میں تفصیلات سے آگاہ کیا ۔ کالاش خواتین اور لڑکیوں نے معاون خصوصی وزیر زادہ اور مہمانوں کے گلے میں ہار پہنائے اور گلپاشی کی ۔ ڈی پی او چترال سونیہ شمروز خان اور بڑی تعداد میں ملکی اور غیر ملکی سیاح فیسٹول دیکھنے کیلئے موجود تھے ۔

کالاش مردو خواتین نے باہوں میں باہیں ڈال کر ڈھول کی تھاپ پر تہوار کے مخصوص گیت گاتے ہوئے رقص کیا ۔ جس سے مہمان اور سیاح لطف اندوز ہوئے ۔ بعد آزان وزیر زادہ نے مہمانوں کے ہمراہ کالاش مذہبی عمارت جشٹکان اور کالاش ہاوسز کی وزٹ کی۔ اور ٹریڈیشنل عمارات کے بارے میں مہمانوں کو بتایا ۔ کہ صدیوں سے کالاش قبیلے کے لوگ پہاڑوں پر عمارات بناکے رہتے ہیں ۔ جس سے زرعی زمینات متاثر نہیں ہوتے ۔ اور پہاڑوں مکانات کی تعمیر زیادہ محفوظ ہوتے ہیں ۔

بعدآزان معاون خصوصی اور مہمان بمبوریت آئے ۔ اور یونانی این جی او کے تعمیر کردہ میوزیم کالاشہ دور کادورہ کیا۔ میوزیم انچارج اکرم حسین نے قدیم کالاش تہذیب و ثقافت کے حوالے سے مہمانوں کو بریفنگ دی ۔ مہمانوں نے میوزیم کے نوادرات اور قبیلے کے اثاثہ جات کو یکجا کرنے کے عمل کو سراہا ۔ اور اس حوالے سے ڈائریکٹر آرکائیوز ڈاکٹر عبد الصمد کی طرف سے کی جانے والی کوششوں کی تعریف کی ۔ اور بہترین بریفنگ دینے پر میوزیم انچارج اکرم حسین کو شاباش دی ۔


کالاش مذہب میں اوچاو تہوار ہر سال بائیس اگست سے رمبور اور بمبوریت میں شروع ہوتی ہے ۔ یہ تہوار دراصل مال مویشیوں کی گرمائی چراگاہوں میں دودھ سے بنی اشیاء کی گاوں لانے کی خوشی میں منایا جاتا ہے ۔ جس میں پنیر کی مختلف اقسام شامل ہوتی ہیں ۔ وزیر زادہ نے فیسٹول دیکھنے کیلئے آنے والے کئی ملکی اور غیر ملکی سیاحوں کو کالاش فیسٹول میں شرکت پر خوش آمدید کہا ۔ اور ان سے خطاب کرتے ہوئے کہا ۔کہ کالاش تہذیب و ثقافت دنیا کی قدیم تہذیبوں میں شمار ہوتی ہے ۔ اور یہ آج بھی اپنی اصل حالت میں موجود ہے ۔ مذہب کی تبدیلی کے باوجود کالاش آبادی بتدریج بڑھ رہی ہے ۔

قیام پاکستان کےموقع پر کالاش آبادی پندرہ سو افراد پر مشتمل تھی ۔ آج کالاش آبادی چار ہزار سے تجاوز کر چکی ہے ۔ انہوں نےکہا بعض لوگوں کی طرف سے کالاش آبادی گھٹ جانے کی باتوں میں کوئی صداقت نہیں ہے ۔ علاقے میں مسلمان کمیونٹی کی محبت اور بھائی چارہ مثالی ہے ۔ جو محبت اور باہمی احترام کالاش قبیلہ اور مسلمانوں کا آپس میں پایا جاتاہے ۔ شاید ہی کسی دوسری جگہ موجود ہو۔ انہوں نے کہا ۔ کہ میں نے یونائٹیڈ نیشن سے خطاب میں بھی یہ بات کہی تھی ۔ کہ کالاش مذہب کا تحفظ مسلم کمیونٹی کی مرہون منت ہے ۔ اور مسلم کمیونٹی ہماری جان و مال ، عزت و آبرو اور مذہبی عقائد کا احترام کرتی ہے ۔


قبل ازین معاون خصوصی وزیر زادہ نے رمبور میں محکمہ جنگلات کی طرف سے دس درخواست گزاروں کو گھر کی دہلیز پر عمارتی لکڑی کے پرمٹ تقسیم کئے ۔ اس موقع پر ڈی ایف او چترال اور رینج آفیسر عزیزولی موجود تھے ۔ بعد آزان بمبوریت میں بھی پرمٹ تقسیم کئے گئے۔

chitraltimes wazir zada kalash ochall festival
chitraltimes wazir zada kalash ochall festival1
chitraltimes wazir zada kalash ochall
chitraltimes wazir zada kalash ochall festival4

شیئر کریں: