Chitral Times

Sep 23, 2021

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

معاشرے میں بڑھتی ہوئی عدم برداشت ۔ تحریر صوفی محمد اسلم

شیئر کریں:

معاشرے کی عمارت اخلاقیات، برداشت، رواداری اور محبت کے ستونوں پر کھڑی ہوتی ہے اور جب یہ خصوصیات سماج سے رخصت ہوجائیں تو وہ تباہی کی طرف تیزی سے گام زن ہوجاتا ہے۔ ہمارے معاشرے میں عدم برداشت کا رجحان تیزی سے فروغ ہو رہا ہے  اس کے باعث تشدد پسند سرگرمیاں بھی سامنے آرہی ہیں۔ لوگوں میں برداشت کم ہوتی جارہی ہے، محض چھوٹی چھوٹی باتوں پر بھی تشدد کرتے ہیں۔ گھروں میں تشدد،  سکولوں میں تشدد، کھیل کی میدان میں تشدد ،یہاں تک کہ پارلیمنٹ میں بھی ایسے متشدد واقعات اکثر دیکھنے میں آتے ہیں، سوشل میڈیا پر تو اس حوالے سے کئی وڈیوز خاصی تیزی سے وائرل ہورہی ہیں۔ 

انسان ایک سوشل انیمل ہے جو ہمیشہ سے مل جل کر رہتے ہیں اسی طرح ایک معاشرہ تشکیل پاتی ہے۔ معاشرتی ارکیں میں مرد ،خواتیں اور بچے شامل ہیں۔جو الگ الگ شخصیات کے مالک ہوتے ہیں۔بعض اراکیں فطرتاً انتہائی جذباتی واقع ہوتے ہیں اور کسی بھی صورت حال میں اپنے اندر اٹھنے والے غصے کو قابو کرنا ان کے لیے انتہائی دشوار گزار مرحلہ ہوتا ہے۔ اس کے برعکس ایسے شخصیات بھی ہوتی ہیں جو مشکل صورتحال میں جذبات سے ذیادہ صبر ،تحمل اور عقل سے کام لیتی ہیں۔جب یہ دونوں رویے آمنے سامنے آ جائیں تو عین ممکن ہے کہ منفی جذبات رکھنے والا شخص مثبت سوچ رکھنے والے انسان کے رواداری اور درگزر کو بھی اپنے منفی رویے سے ختم کردے اور نتیجتاًعدم برداشت کی وائرس وباء کی طرح ایک سے دوسرے کو لگتے لگتے پورے معاشرے کو اپنی لپیٹ میں لے لیتا ہے۔

معاشرے میں پیش آنی والی پرتشدد اور کردار کشی کے واقعات کی جانچ کی جائے تو بنیادی طور پر ان واقعات کے پیچھے چار طرح کے نظریات پائ جاتی ہیں۔

1 مذہب
2 قومیت
3غیرت
4سیاست
آئیں پہلے مذہب کی بات کرتے ہیں۔ اگر ہم مختلف مذاہب کے بارے میں جاننے کی کوشش کریں تو ہمیں معلوم ہوگا کہ مذہب اہم شخصیات کےکردار گرد گھومتی ہے۔ پیروکاروں کے پاس انہی شخصیات کے افعال و اقوال بطور حوالہ جات موجود ہیں جن سے وہ رہنمائی حاصل کرکے اپنی زندگی گزارنا چاہتے ہیں۔ کوئ بھی اپنے نظریات میں مداخلت برداشت نہیں کرپاتے ہیں۔ اس مداخلت کی وجہ سے ہمارے معاشرے میں عدم برداشت بڑھتی جا رہی ہے۔مداخلت اور عدم برداشت کے سبب مزاہب کے پیروکاروں کے مابین فاصلہ بڑھتی جاری ہیں ۔ یہ حساس پہلو ہے اس  معاملے میں انتہائ سنجیدگی اور تدبر سے کام لینا ہوگا۔ جزباتی رویے سے بلاتر ہوکر برداشت اور رواداری سے پیش انا معاشرے کی اہم ضرورت ہے۔جزباتی اور غیر سنجیدہ تقاریر کی وجہ سے ہم دن بدن فرقہ واریت کے دلدل میں پھنستے جارہے ہیں۔

نسل یا قومیت پرستی 
یہ انسانی فطرت ہے کہ انسان کو اپنے گھر ، اپنے خاندان ، اپنے قبیلے ، اپنی قوم سے زیادہ لگا ہوتا ہے۔ وہ چاہتا ہے کہ اس کا گھر ، اس کا خاندان، اس کا قبیلہ ، اس کی قوم کو لوگوں اچھے الفاظ میں یاد کرے۔یہ فطرت بچپن میں اپنے خاندان تک محدود رہتی ہے وقت کے ساتھ ساتھ ماحول اس کے فطرت پر اثرانداز ہوتا ہےاسے خاندان سے نکال کر قبیلہ اور قوم کی طرف لیجاتی ہے۔ جس سے وہ مختلف قسم کے قوم پرستی یا نسل پرستی میں مبتلا ہوجاتا ہے۔ وقت کے ساتھ ساتھ اس کے رویےمیں بھی تبدیلی اجاتی ہے۔اپنے خاندان اور قبیلے کو افضل اور دوسروں کو حقیر سمجھ کر بے تکے الفاظ استعمال کرتے ہیں۔ دوستی اور قرابت داری میں بھی کردار سے زیادہ قومیت کو اہمیت دی جاتی ہے۔ اس وجہ سے معاشرے میں ایک دوسرے سے دوریاں بڑھتی جارہی ہے ۔ایک دوسرے کو برداشت نہیں کرپاتے ہیں۔ معمولی غلطی سرزد ہونے پر دوسروں کے خلاف اپنی پوری قوت سے ساتھ ٹکراتے ہیں۔ 

تیسری نمبر پر اتی ہے غیرت۔ غیرت کو ہم نمائشی الہ سمجھتے ہیں۔ انا پرستی اور غیرت میں فرق نہیں کیا جاتا ہے۔ انا پرستی کو غیرت کا نام دیکر ایسی کام کرجاتے ہیں جو اسلامی و اخلاقی نظریے سے اکثر ٹکراتی رہتی ہے۔ انا کی تسکین کیلئے معمولی تکرار پر قتل ،عداوت،  جسمانی اور جنسی تشدد کرتے ہوئے نہیں کتراتے ہیں۔ دشمنی نسل در نسل جلتی رہتی ہے۔جو غیرت مندی کے اصولوں کے سراسر خلاف ورزی ہے۔ اخبارات اور سوشل میڈیا پر ایسے واقعات کے انبار لگی ہوئ ہیں۔ جو غیرت کے علامات نہیں بلکہ عدم برداشت اور انا پرستی  کی علامت ہے۔

سیاسی عدم برداشت۔
یہ بھی ایک ایسا پہلو ہے جس کی وجہ معاشرے میں عدم برداشت کو فروعت حاصل ہوتی ہے۔ سیاست سے منسلک لوگوں میں برداشت کی فقدان کا اندازہ بخوبی لگایا جاسکتا ہے۔ بڑے بڑے تعلیم یافتہ لوگ بھی سیاسی عدم برداشت کے دلدل میں پھنس چکے ہیں۔ مختلف پارٹیوں میں منقسم ہوکر اور مخالفت میں ایک دوسرے کو گالیوں سے مخاطب کرتے ہیں۔ ایک دوسرے کی کردار کشی کی جاتی ہے۔مخالفت میں چادر اور چاردواری کی تقدس کا بھی خیال نہیں رکھا جاتا ہے ۔ نازیبا الفاظ سرعام استعمال کرتے ہیں۔ایک دوسرے پر تہمت لگا کر ایک دوسرے کو نیچے دکھانے کی کوشش کی جاتی۔ اس کی اثر سے عام لوگوں میں  بھی ایک دوسرے کیلئے عصہ پائ جاتی ہے۔ 

عدم برداشت پڑھے لکھے لوگوں کو بھی نہیں چھوڑا ہے۔ سوشل میڈیا میں برداشت پر لیکچر دینے والے بڑے بڑے لکھاریوں کے سوچ ایک کمنٹ سے کھل کر سامنے آجاتی ہیں۔ انکی معمولی طبیعت مخالف کوئی کمنٹ کرے یا کوئی ان کے رائے سے اختلاف رائے کرنے کی جسارت کر لے تو اک منٹ میں یہ برداشت کے سبق کو بھول جاتے ہیں قلم چھوڑ کر عدم برداشت کے میدان میں اتر اتے ہیں جوکہ ایک المیہ ہے۔

اسلامی جمہوریہ پاکستان کوریاست مدینہ بنانے کی بات تو ہورہی ہے جو ہمارے خواہش بھی ہے مگر کیا ریاست مدینہ جن ستوں پر کھڑا تھا ان اصولوں پر کاربند رہنے کی ہم میں وہ ہمت و صلاحیت موجود ہیں۔ ریاست مدینہ کی بنیادی اصولوں میں سے ایک برداشت بھی ہے۔ کیا برداشت ،رواداری اور درگزر کا مادہ ہمارے اندر موجود ہے۔  جس کی مثال چودہ سو سال قبل رسول اللہ نے اخلاق ،تہذیب،برداشت اور درگزر سے دی  ہے ۔ طائف کی گلیوں میں لہولہان ہونے ،عزیز چچا کا کلیجہ چبانے والی ہندہ ، مکہ کی عظیم الشان فتح پر عام معافی کے اعلانات فخر سے ہم بیان تو کرتے  کیا عملی ذندگی میں اس پر عمل کرنے کی بھی اہلیت ہے ۔

دوسری طرف سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ہم لوگوں میں سے برداشت کیوں ختم ہوتی جارہی ہے۔اس کی وجہ جاننے کی کوشش کی جائے تو یہ حقائق سامنے آتے ہیں کہ ہمارے عوام کی اکثریت کو گوناگوں مسائل کا سامنا ہے۔ وقت گزرنے کے ساتھ مصائب بڑھتے ہی چلے جارہے ہیں۔ ان میں انصاف کی فقدان، بیروزگاری اور مہنگائ وغیرہ مسائل شامل ہیں۔ پریشانیوں کا سامنا کرتے کرتے ہمارے عوام اذیت میں مبتلا ہوچکی ہیں۔ لوگوں کے ذہنوں پر اس صورت حال نے انتہائی منفی اثرات مرتب کئے ہیں، مسائل کا سامنا کرنا مشکل ہوچکی ہے۔اگر قریب سے دیکھا جائے عدم برداشت مجموعی طور پر ہمارے ہر طبقے کی بنیاد کھوکھلا کرچکا ہے۔اس عدم برداشت کی وجہ سے ہم مختلف گروہوں میں منقسم ہوکر مزید مسائل اپنی طرف مدعو کیے جارہے ہیں۔ عدم برداشت کی طرف ایسے بھاگتے جارہے ہیں کہ اگے نہ گھاٹی نظر اتی ہے نہ سامنے اٹھتی ہوئی طوفان۔

یہ حقیقت ہے کہ ہم اگر اپنے اندر برداشت کا مادہ پیدا کرلیں تو صورت حال خاصی بہتر ہوسکتی ہے۔ صرف برداشت پیدا کرنے سے ہی معاشرے کا امن و چین لوٹ سکتا ہے۔ انسان ہونے کے ناتے کسی پر بھی تشدد کرنا کسی طور مناسب نہیں۔ یہ ہر لحاظ سے قابل مذمت امر ہے لہٰذا بہتری اسی میں ہے کہ تشدد اور عدم برداشت کے رویوں سے جان چھڑائی جائے۔ اعلیٰ اخلاقی اقدار کو فروغ دیاجائے ۔ مساجد،  سکول اور مدارس میں باقاعدہ برداشت پر درس دیا جائے۔ تبہی ہم اس پر قابو پاسکتے ہیں۔
وما علینا الاالبلاع۔


تحریر صوفی محمد اسلم


شیئر کریں: