Chitral Times

Oct 17, 2021

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

چترال بچاو تحریک – ڈاکٹرخلیل ‎‎

شیئر کریں:

امریکی اور نیٹو ممالک کے افواج افغانستان سے تقریبا نکل چکے ھیں اور افغان طالبان نے افغانستان کے تقریبا نصف حصے پر قبضہ کرلیا ھے ۔ طالبان کو نہ ماننے والوں کی تعداد افغانستان میں طالبان سے کہیں زیادہ ھے۔ اور اپ مغربی ابلاغ عام بتا رھی ھے کہ طالبان کو پسند نہ کرنے والے افغانیوں نے لاکھوں کی تعداد میں اپناملک چھوڑنا شروع کیا ھے ۔

ھم یک اواز ھوکر اپنے نمایندگان ایم این اے عبدالاکبر منسٹر وزیرزادہ   کی نوٹس میں یہ بات لانا چاھتے ھیں کہ ھم چترال کے عوام دوبارہ کسی افغانی کو چترال بطور پناہ گزین یا مہاجر دوبارہ داخل ھونے کیلے کسی بھی صورت اجازت نہیں دے سکتے ۔

ملک کی اقتصادی حالت کو سامنے رکھاجائے تو اج عوام ھر طرح کے مسائل سے دوچار ھے،  مہنگائی سر چڑھ چکی ھے اور ھمارے وسائل اتنے نہیں کہ ھم کسی اور کو یہاں برداشت کر سکیں ۔

چترال نے پہلے ہی افغانیوں کی وجہ سے بڑی مصیبتیں سہی ھے ۔ ھمارا کلچر ماحول جنگلات چراگاھیں افغانیوں کی وجہ سے جو تباہ ھوئیں وہ مسایل ھم اپ بھی سہہ رھے ھیں ۔

چترال بازار میں مقامی دوکانداروں کو جتنا نقصان افغانیوں کی وجہ پہنچا اس کا ازالہ اپ تک نہیں ھوسکا چترال جو کبھی امن کا اماجگاہ تھا جرایم پیشہ عناصر سے واقف ھوا کلشنکوہ کلچر دوکانوں میں ڈکیتیاں پانی کی گندگی جیسے مسایل جو افغانیوں کی وجہ سے شروغ ھوئیں۔ اج تک ھم انکو درست نہیں کر پائے ۔

ھم مزید کسی مھاجر کو برداشت کرنے کے متحمل نہیں ھیں ۔ اس عوامی رائے کا احترام کرتے ھوے ھمارے نمیندگان اس عوامی اواز کو صوبائی اور قومی اسمبلیوں میں بطور ریکارڈ درج کروایں ۔

بصورت دیگر ھم ابھی سے سڑکوں پر اکر اپنا احتجاج ایوانوں تک ضرور پہنچایں گے ۔ اور کسی بھی افغانی کے چترال کے حدود میں داخل ھونے صورت میں بھر پور مزاحمت کیلیے بھی تیار ھیں ۔

افغانستان میں نہ کبھی امن قایم ھوی ھے اور نہ ھوتی نظر ارھی ھے ۔ اسکے زمہ دار خود افغانی ھیں ۔ ھم انکے کرتوتوں کا خمیازہ کیوں بھکتیں ۔ ھم یہ بھی درخوست کرتے ھیں کہ جو افغانی چترال میں موجود ھیں انکو بھی فلفور چترال سے نکال باھر کیا جاے ۔۔


شیئر کریں: