Chitral Times

Oct 16, 2021

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

داد بید اد۔۔۔۔۔۔۔صو بے کا نواں بورڈ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر عنا یت اللہ فیضی

شیئر کریں:

میٹرک اور انٹر کے امتحا نا ت کو رونا ایس او پیز کے ساتھ جون 2021میں ہونے والے ہیں خیبر پختونخوا کے 8بورڈ ہیں ہر بورڈ کے پا س ایک لا کھ کے لگ بھگ طلباء اور طا لبات ہر امتحا ن میں شریک ہو نگی پشاور بورڈ کے پا س 6اضلا ع کے سکول اور کا لج ہیں، پشاور، چارسدہ، نو شہرہ، خیبر، چترال لوئیر اور چترال اپر کے طلباء اور طا لبات کی تعداد 7لا کھ سے زیا دہ ہو تی ہے مارچ 2020میں پشاور بورڈ کے حکام نے 400ٹر نکوں میں امتحا نی سٹیشنری پر چہ سوالات وغیرہ خصو صی حفا ظت کے ساتھ خیبر، چترال لوئیر اور چترال اپر کے دور دراز پہا ڑی سکو لوں میں پہنچا یا ہر ٹر نک کے ساتھ بورڈ کا عملہ بھی تھا ابھی ایک پر چہ ہوا تھا کہ حکومت نے امتحا نات کو منسوخ کیا بورڈ کا عملہ ٹر نکوں کو اسی طرح بھرے ہوئے اٹھا یا اور بمشکل پشاور پہنچا یا بعض امتحا نی مرا کز بورڈ کے دفتر سے 410کلو میٹر کے فا صلے پر تھے

اس سال پھر وہی سلسلہ ہے، وہی امتحا نی مرا کز اور وہی ٹرنک ہیں وہی عملہ ہے وہی محنت اور خواری ہے ہمارے حکام نے چترال کو بھی نو شہرہ اورچار سدہ کی طرح قریبی پڑو سی سمجھ لیا ہے گذشتہ 20سالوں سے چترال کے لئے انٹر میڈیٹ اینڈ سیکنڈری ایجو کیشن کے الگ بور ڈ کی تجویز گردش میں ہے چترال اُس وقت ایک ضلع تھا اب اس کے دو اضلا ع بن چکے ہیں اپر اور لوئیر چترال میں زنا نہ اور مر دانہ ہائی سکولوں کی تعداد 79ہے اس علا وہ 15ہائیر سکینڈری سکول اور چار کا لج ہیں نجی شعبے میں 36ہا ئی سکول اور 24کا لج ان کے علا وہ ہیں طلباء اور طا لبات کی تعداد میٹرک کی سطح پر 45000اور انٹر میڈیٹ کی سطح پر25000سے متجا وز ہو تی ہے .

گڈ گورننس کا تقا ضا یہ ہے کہ پشاور بورڈ پر امید واروں کا رش اور کا م کا دباؤ کم کرنے کے لئے چترال لوئیر اور چترال اپر کے لئے الگ بورڈ تشکیل دیا جا ئے امتحا نی بورڈ کی خو بی یہ ہو تی ہے کہ اس کے جاری اخرا جا ت سر کاری خزا نے پر بوجھ نہیں ہوتے بورڈ اپنی آمدنی سے تما م اخرا جات پوری کر تی ہے اور بسا اوقات حکومت کی ما لی مدد بھی کر تی ہے 2002میں ضلعی انتظا میہ نے چترال بورڈ آف انٹر میڈیٹ اینڈ سیکنڈ ری ایجو کیشن کی تجویز دی تھی کمشنر ملا کنڈ نے بھی اس پر اپنی رائے دی تھی اس کے بعد چار بار یہ تجویز بھیجی گئی لیکن ان تجا ویز کو پذیر ائی نہیں ملی سابق وزیر اعلیٰ پرویز خٹک نے ستمبر 2017ء میں اس پر حیرت کا اظہار کیا ان کے پا س بیٹھے جہا نگیر ترین اور عمران خا ن نے کہا چترال کے لئے الگ بورڈ ضرور ہو نا چا ہئیے

تجویز کے کا غذات ٹیکنیکل فیزیبلٹی پیش کی گئی لیکن یہ بیل منڈھے نہ چڑ ھہ سکی مو جودہ وزیر اعلیٰ محمود خا ن چترال لوئیر اور چترال اپر کے کئی دورے کر چکے ہیں دو نوں اضلا ع کے چپے چپے سے وا قف ہیں پشاور بورڈ کی انتظا می مشکلات سے بھی واقف ہیں چترال میں قائم کیمپ آفس کی محدود ات (Limitations) کو بھی جا نتے ہیں تاہم پورے صوبے کا انتظام، کویڈ 19کی پریشانیاں، روز روز مختلف گرو ہوں کے جلوس اور دھر نے ایسے حا لات پیدا کر تے ہیں کہ انتظا می سر براہ کو دیگر معا ملات پر تو جہ دینے کا مو قع نہیں دیتے .

پشاور بورڈ کے اعلیٰ حکام اگر مو جو دہ سال کے امتحا نی سیزن میں اپنے عملے کی نگرا نی کے لئے چترال لوئیر اور چترال اپر کا دورہ کرینگے تو ان کو احساس ہو گا کہ چترال کا کیمپ آفس بہت محدود ہے چترال کے 70فیصد طلباء اور طا لبات کو اپنی دستا ویزات کے لئے پشاور کا سفر کر نا پڑ تا ہے جن امور کا تعلق سیکر یسی سے ہو تا ہے وہ امور کیمپ آفس میں حل نہیں ہو تے بورڈ کے اعلیٰ حکام کو اس بات کا بھی اندازہ ہو گا کہ ہر بورڈ سالا نہ امتحا ن میں 20ٹا پ ٹین طلباء طا لبا ت کو سکا لر شپ دیتا ہے چترال کے طلباء اور طا لبات اس سہو لت سے محروم ہیں فیز یبلیٹی رپورٹ میں اس بات کا خصو صی ذکر آتا ہے کہ چترال لو ئیر اور چترال اپر میں ایک الگ بورڈ کے لئے تعلیمی،انتظا می اور ما لیا تی سہو لیات مو جو د ہیں صوبے کا نواں بورڈ قائم کر نے میں کوئی رکا وٹ نہیں۔


شیئر کریں: