Chitral Times

Mar 7, 2021

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

سوات انجینئرنگ یونیورسٹی اور یوٹا یونیورسٹی امریکہ کے مابین مفاہمتی یاداشت پر دستخط

شیئر کریں:

پشاور (چترال ٹائمز رپورٹ) سوات یونیورسٹی آف انجنیئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی (پاکستان) اور یوٹا یونیورسٹی (امریکہ) کے مابین مفاہمتی یاداشت پر دستخط کئے گئے، جس کا مقصد دونوں اداروں کے درمیان تعلیم و تحقیق کے سلسلے میں روابط اور تدریسی تعاون کو فروغ دینا ہے۔ اس سلسلے میں گزشتہ روز وزیراعلیٰ ہاوس پشاور میں باضابطہ تقریب منعقد کی گئی، جس میں صوبائی وزیر تیمور سلیم جھگڑا اور وزیراعلیٰ کے معاون خصوصی کامران بنگش کے علاوہ وزیراعلیٰ کے پرنسپل سیکرٹری شہاب علی شاہ، سیکرٹری اعلیٰ تعلیم خیبر پختونخوا داؤد خان،چیئرمین ہائیر ایجوکیشن کمیشن پاکستان ڈاکٹر طارق بونیری، پروجیکٹ ڈائریکٹر یونیورسٹی آف سوات ڈاکٹر نجیب اللہ اور یونیورسٹی آف یوٹاہ کی جانب سے سینئر نائب صدر اکیڈمک افیئرز ڈاکٹر ڈینئل ریڈ، ایسوسی ایٹ چیف گلوبل آفیسر ڈاکٹر سبین،پروفیسر ڈاکٹر اسٹیو برائن اور ریسرچ پروفیسر ڈاکٹر اسلم چوہدری نے شرکت کی۔ ڈاکٹر نجیب اللہ (یونیورسٹی آف سوات) اور ڈاکٹر ڈینئل ریڈ(یوٹاہ یونیورسٹی) نے مفاہمتی یاداشت پر باضابطہ دستخط کئے۔

مفاہمتی یاداشت کے مطابق دونوں اداروں کے درمیان سائنسز اور انجنیئرنگ کے شعبوں میں فیکلٹی اور سٹوڈنٹس کے تبادلہ کے علاوہ ٹریننگ اور تکنیکی معاونت کے لئے پلان وضع کیا جائیگا۔ سوات یونیورسٹی کو مذکورہ شعبوں میں ڈگری پروگرامز کی ڈیزائننگ اور نفاذ میں تکنیکی تعاون فراہم کیا جائیگا۔ اس کے علاوہ تحقیقی مضامین میں معاونت، تحقیقی انفراسٹرکچر کے قیام اور سوات یونیورسٹی کی استعداد میں اضافہ کے لئے معاونت بھی مفاہمتی یاداشت کا حصہ ہے۔ اسی طرح یوٹاہ یونیورسٹی کی طرف سے یونیورسٹی آف سوات کے لئے سیمینارز، شاٹ کورسز اور آن لائن ورک شاپس کا انعقادعمل میں لایا جائیگا۔ صوبائی وزیر تیمور سلیم جھگڑا نے بحیثیت مہمان خصوصی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مذکورہ مفاہمتی یاداشت کو اعلیٰ تعلیم و تحقیق کے معیار کو بہتر بنانے کے لئے ایک اہم اقدام قرار دیا اور امیدظاہر کی کہ دونوں ادارے اس معاہدے کو عملی جامہ پہنانے کے لئے مطلوبہ کردا ر ادا کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ صوبائی حکومت نے تعلیم کے شعبے میں خاطر خواہ سرمایہ کاری کی ہے۔ خصوصی طور پر انجنیئرنگ اور ٹیکنالوجی کے شعبوں میں معیار تحقیق و تعلیم کو بلند کرنے کے لئے کوشاں ہے۔ انہوں نے کہا کہ صوبے میں پہلے سے موجود جامعات کی بہتری کے لئے اقدامات کے ساتھ ساتھ نئے اداروں کے قیام اور جدید رحجانات کے فروغ پر بھی کام جاری ہے۔ صوبے میں آسٹریا یونیورسٹی کے تعاون سے فخہ شولے انسٹیٹیوٹ آف اپلائیڈ سائنسز کا قیام عمل میں لایا گیا ہے، جو موجودہ حکومت کا ایک اہم کارنامہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ نوجوانوں کو جدیدتقاضوں سے ہم آہنگ اور بامقصد تعلیم وتحقیق کے ذریعے روزگار کے مواقع کی فراہمی حکومت کے اہداف میں شامل ہے۔ اس سلسلے میں سوات یونیورسٹی اوریوٹاہ یونیورسٹی کے مابین تعاون اہم کردار ادا کرے گا۔

قبل ازیں وزیراعلیٰ کے معاون خصوصی برائے اطلاعات کامران بنگش نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے دونوں اداروں کے اعلیٰ حکام کو مبارکباد پیش کی اور ان کے لئے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ کامران بنگش نے یونیورسٹی آف سوات اور یوٹاہ یونیورسٹی کے مابین تعاون کے لئے مفاہمتی یاداشت کوخوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا کہ بین الاقوامی سطح پر اعلیٰ تعلیمی اداروں کے ساتھ روابط کے قیام کے سلسلے میں یہ ایک اہم پیش رفت ہے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ صوبائی حکومت وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان کی قیادت میں جدید طرز پر تعلیم و تحقیق کے فروغ کے لئے اقدامات کر رہی ہے، اور اس سلسلے میں بین الاقوامی سطح پر اعلیٰ تعلیم اداروں کے ساتھ روابط کے قیام اور باہمی تعاون پر خصوصی توجہ دی جارہی ہے، سوات یونیورسٹی اور یوٹاہ یونیورسٹی کے مابین مذکورہ معاہدہ بھی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے جو سوات یونیورسٹی میں تعلیم و تحقیق کے معیار کو بلند کرنے میں اہم کردار ادا کرے گا۔


شیئر کریں: