Chitral Times

Oct 19, 2021

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

چترال مدکلشٹ ودیگر میں بین الاقوامی معیار کے سیاحتی مراکز قائم کئے جا رہے ہیں، سیکرٹری سیاحت

شیئر کریں:

جدید سیاحتی منصوبوں کی تکمیل سے صوبہ میں ترقی اور روزگار کے مواقع میسر آسکیں گے، سیکرٹری محمد عابد مجید


انٹیگریٹڈ ٹورازم زونزمنصوبے کے تحت سوات میں منکیال، چترال میں مدکلشت، ایبٹ آباد میں ٹھنڈیانی اور مانسہرہ میں بین الاقوامی معیار کے سیاحتی مراکز قائم کئے جا رہے ہیں،سیکرٹری محکمہ سیاحت


صوبے میں نئے سیاحتی زونز سے سیاحت کو مزید فروغ ملے گی، حکومتی وژن کے مطابق صوبہ میں سیاحت کے فروغ کیلئے اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں، ڈی جی کامران احمد آفریدی


خیبرپختونخوا کلچر اینڈ ٹورازم اتھارٹی اورلینڈ روورکے زیراہتمام11ویں ونٹیج کلاسک کارکا پشاور میں شو،50 سے زائد قدیمی اور کلاسک کار کی شرکت،غیر ملکی سیاح بھی ریلی کا حصہ


پشاور(چترال ٹائمز رپورٹ) کلچر اینڈ ٹورازم اتھارٹی خیبرپختونخوا اور لینڈ روور کے زیراہتمام گیارویں سالانہ ونٹیج اینڈ کلاسک کار ریلی 2020 کا شو کا انعقاد پشاور میں ہوا۔اس موقع پر سیکرٹری محکمہ سیاحت، ثقافت، کھیل،آثارقدیمہ، میوزیم و امورنوجوانان محمد عابد مجید مہمان خصوصی تھے۔ ان کے ہمراہ ڈائریکٹر جنرل کلچر اینڈ ٹورازم اتھارٹی خیبرپختونخوا کیپٹن (ر) کامران احمد آفریدی، ایڈیشنل سیکرٹری محکمہ سیاحت جنید خان، سی پی او آصف شہاب، ڈائریکٹر یوتھ سلیم جان، کلچر اینڈ ٹورازم اتھارٹی کے عہدیداران اور دیگر اہم شخصیات بھی موجود تھیں۔ریلی شو میں پہلی بار سٹریٹ چلڈرنز کو خصوصی طور پر شو میں شرکت کیلئے لایا گیا تا کہ تفریح کے مواقع سے یہ بھی مستفید ہو سکیں۔ اس موقع پر سیکرٹری محکمہ سیاحت، ثقافت، کھیل، آثارقدیمہ، میوزیم و امورنوجوانان محمد عابد مجید نے کہاہے کہ قدرتی حسن سے مالامال صوبہ خیبرپختونخوامیں سیاحت کے بے پناہ مواقع ہیں۔صوبائی حکومت نے چار انٹیگریٹڈٹورازم زونز (ITZ) یا مربوط سیاحتی مراکز کے قیام کا فیصلہ کیا ہے جس کے تحت سوات میں منکیال، چترال میں مدکلشت، ایبٹ آباد میں ٹھنڈیانی اور مانسہرہ میں بین الاقوامی معیار کے سیاحتی مراکز قائم کئے جا رہے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے خیبرپختونخوا کلچر اینڈ ٹورازم اتھارٹی اور لینڈ روور کے تعاون سے پشاور کلب میں منعقدہ ونٹیج اینڈکلاسک کار ریلی شو میں بطور مہمان خصوصی شرکت کرتے ہوئے کیا۔ تفصیلات کے مطابق پشاور میں منعقد ہونے والی ریلی شوپشاور کے بعد مختلف شہروں اسلام آباد سے ہوتی ہوئی ملتان پہنچے گی جہاں کراچی اور دیگر شہروں کے بھی شرکاء ریلی میں شریک ہونگے جبکہ اس کے بعد ریلی لاہور، کشمیر اورگلیات سے ہوتی ہوئی خانپور کے سیاحتی مقام پر اختتام پذیر ہوگی۔اس سے قبل ریلی کا آغازخیبر رائفل میس ہوااورریلی پاک افغان شاہراہ سے ہوتی ہوئی باراستہ باب خیبر سے پشاور پہنچی تھی۔ریلی میں ملک کے مختلف شہروں سے50 سے زائد شرکاء اپنی گاڑیوں سمیت شریک ہوئے جبکہ امسال غیر ملکی بھی اس ریلی کا حصہ رہے۔ریلی میں 1930 سے لیکر 1970 کی پرانی اور قدیمی گاڑیوں کے شوقین افراد نے اپنی گاڑیوں کے ہمراہ شرکت کی جن میں مرسڈیز، فورڈ، شیورلفٹ، مستنگ ایم جی، وی ڈبلیو، مینی اور دیگر قدیمی گاڑیاں اس ریلی میں عوام کی تفریح کا منظر رہیں۔سیکرٹری محکمہ سیاحت محمد عابد مجیدنے گفتگوکرتے ہوئے مزید کہاکہ محکمہ سیاحت خیبرپختونخواکے زیراہتمام چار مختلف پراجیکٹس پر کام کا آغاز ہو چکا ہے اسی پروگرام کے تحت دیر بالا میں کمراٹ، دیر پائیں میں بن شاہی،سکائی لینڈ اور لڑم ٹاپ کے علاوہ الائی، بٹگرام اور شانگلہ میں بھی سیاحتی مراکز قائم کئے جا رہے ہیں۔ ڈائریکٹر جنرل کلچر اینڈ ٹورازم اتھارٹی خیبرپختونخوا کیپٹن (ر) کامران احمد آفریدی نے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ ریلی کا خیبر ڈسٹرکٹ سے شروع کرنے کا مقصد سیاحوں کو ان اضلاع کی جانب بھی گامزن کرنا ہے۔ ریلی میں اس دفعہ خیبرپختونخواسے بھی بڑی تعداد نے شرکت کی ہے۔ ریلی میں غیر ملکی سیاحوں کی شرکت اس بات کا ثبوت ہے کہ خیبرپختونخوا پر امن صوبہ ہے۔ حکومت کے وژن کے مطابق صوبہ میں سیاحت کے فروغ کیلئے اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں۔صوبہ میں سیاحت کے بڑھتے رجحان اور سیاحوں کیلئے نئے سیاحتی مقامات کیلئے ٹورازم زونز پر کام جاری ہے۔

KPCTA secy majeed 1
KPCTA Pic 4

شیئر کریں: