Chitral Times

May 21, 2024

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

شندور پاس روڈ تاحال بند،نوجوان کی لاش کندھوں پراُٹھاکرلاسپورپہنچایاگیا،فوری کھولنے کا مطالبہ

شیئر کریں:

چترال (نمائندہ چترال ٹائمز) اپر چترال کے عوام نے شندور پاس روڈ نہ کھولنے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے اس سے اپر چترال انتظامیہ کی نااہلی قراردیا ہے، یارخون ویلی سے تعلق رکھنے والا چیلاس میں حادثے کاشکار جوان ہسپتال میں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسا، جس کی لاش کو شندور پاس سے کندھوں پر اُٹھاکر لاسپور پہنچایا گیا۔

چترال ٹائمزڈاٹ کام سے ٹیلی فون پر گفتگو کرتے ہوئے سابق یوسی ناظم یارخون اورپی ٹی آئی رہنما محمد وزیر نے کہا ہے کہ شندور پاس روڈ نہ کھولنے کیوجہ سے چترال کے عوام اورخصوصا اپر چترال کے عوام انتہائی مشکلات سے دوچار ہیں، جبکہ بار بار مطالبے کے باوجود انتظامیہ ٹس سے مس نہیں ہورہی جسکا مقصد کورونا وائرس کی وجہ سے مصائب کا شکار عوام کو مذید مشکلات سے دوچار کرنے کا تہیہ کیا گیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ کورونا وائرس سے ملک بھر کے تمام علاقے متاثر ہیں اورمتاثر ہورہے ہیں اوراموات کے ساتھ متاثرین کی تعداد میں چترال کے دونوں اضلاع سے کئی گنا زیادہ ہے مگر اسطرح کی پابندی اورلاک ڈاون ملک کے کسی حصے میں بھی نہیں ہے۔ انھوں نے مذید کہا کہ لواری ٹنل سے آمدورفت جاری ہے صرف شندور ٹاپ کو بند رکھنا کونسی عقلمندی کی بات ہے یہ ہماری سمجھ سے بلاتر ہے۔

انھوں نے بتایا کہ چترال کے عوام قانون کے پاسدار اورمحب وطن ہیں جوبھی حکم ریاستی اداروں کی طرف سے ملک میں نافذ ہوئے ہیں سب سے پہلے ان پر عملدرآمد چترال میں ہوا ہے اوراب بھی لوگ براستہ ٹنل چترال پہنچ کر انتظامیہ کی احکامات کی روشنی میں ایس او پیز کے تحت قرنطینہ ہورہے ہیں۔ اسی طرح شندور پاس روڈ سے بھی یہی قانون کو اپنایا جائیگا۔


محمد وزیر نے انتہائی افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ دنوں یارخون ویلی سے تعلق رکھنے والے مزدوروں کو شندور پاس سے سفر کی اجازت نہ ملنے پربراستہ قراقرم سفر کے دوران بچارہ مزدور چیلاس میں حادثے سے دوچار ہوئے جن میں سے تین زخمی گلگت میں داخل ہیں جبکہ ایک جوان نادر ولد محمد غازی بیگ ساکن ژوپو یارخون زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسا جس کی لاش کو براستہ شندور لاسپور کے عوام کندھوں پر اُٹھاکر لاسپور پہنچائے۔جس پر ہم ان کے شکرگزار ہیں۔


سابق ناظم نے مذید بتایا کہ یارخون اور لاسپور ویلی کے غریب لوگ محنت مزدوری کیلئے سردیوں کے موسم میں گلگت جاتے ہیں اوراب واپس گھروں کو آرہے ہیں مگر شندور ٹاپ پر پابندی کی وجہ سے انھیں بشام اورسوات وغیرہ کے راستے سے آنا پڑ رہا ہے جبکہ درجنوں افراد گلگت ودیگرعلاقوں میں پھنسے ہوئے ہیں۔
انھوں نے انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ فوری طور پر شندور روڈ سے برف ہٹاکر راستہ کھول دیا جائے اور آمدورفت کی اجازت دی جائے۔ جسطرح کا لائحہ عمل لواری ٹنل پر جاری ہے وہی سسٹم شندور پاس پر بھی قائم کیا جائے۔ تاکہ مسافروہیں پر انٹری کرکے انتظامیہ کے احکامات کی روشنی میں اپنے گھروں تک پہنچ جائیں گے۔ لہذا مسافروں کو مذید مصائب سے دوچار نہ کیا جائے۔

shandur a young man from yarkhun died in gilgit accident3
shandur a young man from yarkhun died in gilgit accident2
shandur a young man from yarkhun died in gilgit accident4
shandur a young man from yarkhun died in gilgit accident5

شیئر کریں:
Posted in تازہ ترین, چترال خبریں, گلگت بلتستانTagged
35955