Chitral Times

Dec 1, 2022

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

بچوں کے پیٹ میں کیڑوں کا مسئلہ ملک کے 44 اور صوبے کے 19 اضلاع میں زیادہ پایا گیا

Posted on
شیئر کریں:

پیٹ کے کیڑے بچوں کی جسمانی و ذہنی صحت کو متاثر کرتے ہیں۔ ڈاکٹر فاروق جمیل
ڈی وارمنگ پروگرام کی آٹھویں سٹیئرنگ کمیٹی کا اجلاس
بھرپور آگاہی مہم، کمپئین سے قبل ہفتہ صحت منانے کا فیصلہ
.
پشاور(چترال ٹائمزرپورٹ )خیبرپختونخوا میں سکول جانے والے بچوں کے پیٹ کیڑے ختم کرنے کے حوالے سے آٹھویں ملٹی سیکٹورل سٹیئرنگ کمیٹی کا اجلاس اسپیشل سیکرٹری صحت ڈاکٹر سید فاروق جمیل کی زیر صدارت ہیلتھ سیکریٹریٹ پشاور میں منعقد ہوا۔ اجلاس میں آئی آر ڈی پروگرام کے ڈائریکٹر یوتھ قدیر بیگ، محکمہ ایلمنٹری و سیکنڈری ایجوکیشن کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر فرید خٹک، محکمہ بلدیات، پلاننگ و منصوبہ بندی، پرائیویٹ سکولز ریگولیٹری اتھارٹی، ضم اضلاع کے محکمہ صحت و تعلیم کے افسران اور دیگر سرکاری حکام نے شرکت کی۔ آئی آر ڈی نمائندے نے اجلاس کو گزشتہ ملٹی سیکٹورل سٹیئرنگ کمیٹی کے فیصلوں پر عملدرآمد اور صوبے میں ہونے والی بچوں کے پیٹ کے کیڑے ختم کرنے کی بڑی کمپئین کے نتائج سے آگاہ کیا۔ اجلاس میں بتایا گیا کہ سکول جانے والے بچوں کے پیٹ میں کیڑوں کا مسئلہ ملک کے 44 اضلاع میں زیادہ پایا گیا ہے۔ ان میں خیبرپختونخوا کے 4 ڈویڑنز کے 19 اضلاع شامل ہیں۔ پیٹ کے کیڑوں کے خاتمے کی دوا دینے کی گزشتہ مہم کے دوران 44 فیصد بچوں کو ڈی وارمنگ دوائی دی گئی جبکہ آئندہ مہم میں 75 فیصد بچوں تک رسائی کا ہدف رکھا گیا ہے۔ اس مہم کے لیے 23 ہزار اساتذہ کو ٹریننگ دی گئی تھی۔ آئندہ مہم کے لیے اقدامات کا جائزہ لیتے ہوئے فیصلہ کیا گیا کہ والدین اور بچوں کی آگاہی کے لئے بھرپور کمپئین چلائی جائے گی۔ اس مقصد کے جامع کمیونیکیشن پلان تیار کرنے پر اتفاق کیا گیا۔اسی طرح پرائیویٹ سکولز ایسوسی ایشنز اور دیگر متعلقہ محکموں کو بھی مشاورتی عمل میں شامل کیا جائے گا۔ آئندہ ماس ڈی وارمنگ مہم میں نئے ضم شدہ اضلاع کے ضلع خیبر، باجوڑ اور مہمند کو شامل کیا جائے گا جس سے خیبر پختونخوا میں ٹارگٹ اضلاع کی تعداد 22 ہو جائے گی۔ بچوں کے پیٹ کے کیڑے ختم کرنے کی بڑی مہم سے قبل ہفتہ صحت بھی منایا جائے گا۔ ٹارگٹ اضلاع کے تمام بچوں کی ڈی وارمنگ کے لیے مدارس، کمیونٹی سکولز اور مہاجرین کیمپوں تک رسائی کے لیے اقدامات کا جائزہ بھی لیا گیا۔ گزشتہ مہم کے دوران ڈیوٹی سرانجام دینے والے اساتذہ کے معاوضوں کی ادائیگی کے حوالے سے اجلاس میں بتایا گیا کہ ادائیگی کا عمل شروع کردیا گیا ہے جو کہ اگلے 2 ہفتوں کے دوران مکمل کرلیا جائے گا۔ ماس ڈی وارمنگ مہم کے لیے کمیونٹی ہیلتھ ورکرز کو بھی ٹریننگ دینے پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اس موقع پر اسپیشل سیکرٹری صحت ڈاکٹر سید فاروق جمیل کا کہنا تھا کہ تمام محکموں کو مشترکہ حکمت عملی کے تحت اقدامات اٹھانے ہوں گے تاکہ ہمارے بچے ٹھیک طریقے سے پل بڑھ سکیں اور اپنی تعلیم پر توجہ دے سکیں کیونکہ پیٹ کے کیڑے بچوں کی نہ صرف جسمانی صحت بلکہ ذہنی صحت کو بھی متاثر کرتے ہیں۔ انہیں نے کہا کہ آئندہ کمپئین کے لیے شفاف اور قابل عمل پلان تیار کیا جائے تاکہ ٹارگٹ اضلاع کے ہر بچے تک پہنچا جا سکے۔ ڈاکٹر فاروق جمیل نے گزشتہ مہم کو کامیاب بنانے پر تمام متعلقہ محکموں کے تعاون کو سراہتے ہوئے امید ظاہر کی کہ آئندہ بھی ان کی طرف سے اس طرح کا تعاون جاری رکھا جائے گا۔


شیئر کریں: