Chitral Times

Nov 19, 2019

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

  • سرینگر،ریڈیو کشمیر کا نام اب آل انڈیا ریڈیو ہوگا

    November 1, 2019 at 4:31 pm

    سرینگر(آئی آئی پی)جمعرات کو جموں و کشمیر اور لداخ کے دو نئے مرکزی خطے وجود میں آنے کے بعد ریڈیو اسٹیشنزکے نام بھی تبدیل کر دیے گئے ہیں۔جموں میں واقع ریڈیو اسٹیشن کا نام بدل کر آل انڈیا ریڈیو، جموں رکھا گیا ہے۔ جبکہ سرینگر اور لیہہ میں بھی اسٹیشنوں کا نام تبدیل کرکے بالترتیب آل انڈیا ریڈیو، سری نگر اور آل انڈیا ریڈیو لیہہ رکھ دیا گیا ہے۔جموں و کشمیر تنظیم نو ایکٹ، 2019 کے نفاذ کا مطلب ہے کہ آرٹیکل 370 کے تحت جموں وکشمیر کو حاصل کردہ خصوصی حیثیت 72 سالوں کے بعد ختم ہوگئی ہے۔

    دریں‌اثنا جموں و کشمیر میں بھارتی حکومت نے دفعہ 370 کے تحت جموں و کشمیر کو حاصل خصوصی حیثیت کو ختم کرنے کے تقریبا تین ماہ بعد ریاست کو سرکاری طور پر دو مرکزی علاقے ‘جموں و کشمیر’ اور ‘لداخ’ میں تقسیم کردیا۔اس اقدام کے خلاف جمعرات کے روز مقبوضہ کشمیر میں مکمل ہڑتال کی گئی۔وادی کے باشندوں نے حکومت پر الزام لگایا کہ حکومت ان کو اپنی خاص حیثیت اور شناخت سے محروم کررہی ہے۔نیشنل کانفرنس نے اس اقدام کو غیر آئینی قرار دیا جبکہ بی جے پی نے اس کا خیرمقدم کیا، اور کہا کہ اس سے جموں و کشمیر اور لداخ میں امن و ترقی کا آغاز ہوگا۔عہدے داروں کا کہنا ہے کہ مکمل ہڑتال کی وجہ سے وادی کشمیر میں عام زندگی متاثر رہی۔دکانیں بند رہیں اور عوام کی آمدورفت بالکل نہیں تھی۔ انہوں نے ساتھ ایشین وائر کو بتایا کہ شہر کے کچھ علاقوں میں صرف نجی کاریں اور کچھ آٹو رکشہ چل رہے تھے۔این سی رہنما جسٹس (ر) حسنین مسعودی نے ساتھ ایشین وائر کو بتایا، یہ پوری مشق غیر آئینی ہے۔ پارلیمنٹ کے پاس جموں و کشمیر پر لاگو ہونے والے آرٹیکل 3 کے مطابق کسی ریاست کو ٹکڑوں میں بانٹنے کا اختیار نہیں ہے۔ ایک نئی ریاست کی تشکیل کا اختیار صرف پارلیمنٹ کے پاس ہے۔ پارلیمنٹ چاہے توکسی ریاست کا ایک حصہ ختم کرسکتی ہے اور ایک نئی ریاست تشکیل دے سکتی ہے۔ رکن پارلیمنٹ نے کہا کہ آرٹیکل 370 کو منسوخ کرنے یا جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کو منسوخ کرنے کے لئے منتخب ریاستی حکومت کا اتفاق رائے ضروری ہے۔تاہم، بی جے پی نے اس اقدام کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے جموں و کشمیر اور لداخ میں امن اور ترقی کا آغاز ہوگا۔بی جے پی کے ریاستی ترجمان خالد جہانگیر نے کہا کہ یہ تبدیلی امن، ترقی اور وقار کے لئے ہے۔وادی کے لوگوں نے ساتھ ایشین وائر کو بتایا کہ مرکز کے فیصلے نے ان کی شناخت اور خصوصی حیثیت چھین لی ہے۔شہر کے سول لائنز ایریا کے رہائشی مزمل محمد نے بتایا کہ انہوں نے ہماری خصوصی حیثیت اور ہماری شناخت چھین لی ہے۔یہ ہمارے مفادات کے خلاف فیصلہ ہے۔ ایک اور مقامی شخص، عمر زرگر نے، الزام عائد کیا کہ، ہندوستان کا فیصلہ غیر قانونی، غیر اخلاقی اور غیر آئینی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہندوستان آرٹیکل 370 کو منسوخ نہیں کرسکتا۔ یہ مسئلہ اقوام متحدہ میں ہے۔ اس پر قراردادیں ہیں۔

  • error: Content is protected !!