Chitral Times

Dec 7, 2021

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

وزیراعلیٰ‌کی سستاگھرپروگرام کے تحت سکیموں‌کیلئے ماڈل کو جلد حتمی شکل دینے کی ہدایت

شیئر کریں:

پشاور(چترال ٹائمزرپورٹ ) وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے سستا گھر پروگرام کے تحت پشاور اور ہنگو میں سکیموں کیلئے ماڈل کو جلد حتمی شکل دینے کی ہدایت کی ہے انہوں نے کہا کہ ماڈل ہر لحاظ سے قابل عمل ہونا چاہئے اور اس بات کو مدنظر رکھا جائے کہ ہم نے لوگوں کو سہولت دینی ہے ۔ وہ وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں قابل استطاعت ہاﺅسنگ پروگرام( سستاگھر سکیم) کے حوالے سے صوبائی ٹاسک فورس کے دوسرے اجلاس کی صدارت کر رہے تھے۔صوبائی وزیر برائے مواصلات و تعمیرات اکبر ایوب خان ، وزیراعظم کے معاون خصوصی افتحار درانی، سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو فخر عالم، متعلقہ محکموں کے انتظامی سیکرٹریز ، ٹاسک فورس کے دیگر اراکین اور متعلقہ حکام نے اجلاس میں شرکت کی۔اجلاس کو سستا گھر سکیم کے حوالے سے پیش رفت اور صوبائی حکومت کے اس سلسلے میں کردار اور انتظامات کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دی گئی ۔ سیکرٹری ہاﺅسنگ نے اجلاس کو تجویز پیش کی کہ صوبے کے جن شہروں میں اراضی دستیاب ہے وہی سکیم کا اجراءکیا جائے۔ انہوں نے بتایا کہ پشاور میں سوڑیزئی کے مقام پر آٹھ ہزار کنال اراضی موجود ہے ، اس کے علاوہ ہنگو میں آٹھ ہزار کنال اور سوات میں پانچ سو کنال اراضی دستیاب ہے جہاں سستا گھر سکیموں کی تعمیر کی جاسکتی ہے۔ اجلاس میں سستا گھر سکیموں کیلئے مختلف ماڈلز کا بھی جائزہ لیا گیااور مختلف تجاویز پیش کی گئیں۔وزیر اعلی نے پشاور ، ہنگو اور دیگر شہروں جہاں اراضی دستیاب ہے ، ان میں سکیموں کی اجراءکیلئے مضبوط اور قابل عمل تجویز پیش کرنے کی ہدایت کی اور کہا کہ ہم نے اس سلسلے میں تیز رفتاری سے آگے بڑھنا ہے جس کیلئے بر وقت اور ٹھوس فیصلے کرنا ہونگے۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ ہاﺅسنگ سستے گھروں کے تعمیر کے حوالے سے اپنی مکمل استعداد اور تجاویز سامنے لائے۔ انہوں نے پشاور اور ہنگو میں سستا گھر سکیموں کے اجراءکیلئے ماڈل کو جلد حتمی شکل دینے کی ہدایت کی انہوں کہا کہ اس مقصد کیلئے صوبے میں پہلے سے موجود خپل کور ماڈل سمیت دیگر وفاقی اور صوبائی ماڈلز کا بغور جائزہ لیا جائے اور ایک بہترین اور قابل عمل ماڈل پیش کیا جائے وزیراعلیٰ نے واضح کیا کہ اس مجموعی عمل میں یہ امر ہر سطح پر ذہن نشین رہے کہ ہم نے لوگوں کو سہولت دینی ہے ۔

دریں اثنا وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے ٹیکسلا میں فاسٹنگ بدھا کی مجوزہ نمائش میں صوبائی حکومت کی طرف سے تعاون کا یقین دلایا ہے ۔ اُنہوں نے سوات میں مذہبی و ثقافتی سیاحت کے فروغ کیلئے منصوبے سے بھی اُصولی اتفاق کیا ہے اور کہا ہے کہ اُن کی حکومت صوبے میں سیاحت کو تیز تر فروغ دینے کیلئے کوشاں ہے ۔ مقامی و بیرونی سیاحوں کو سہولیات دی جارہی ہیں ۔ سوات میں 13 نئے سیاحتی مقامات کی نشاندہی کی گئی ہے ، جنہیں جدید سیاحتی خطوط پر ترقی دی جائے گی ۔ ان خیالات کا اظہار اُنہوںنے گندھار اآرٹ اینڈ کلچر ایسوسی ایشن اسلام آباد کے نمائندہ وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ گندھارا آرٹ اینڈ کلچر ایسوسی ایشن اسلام آباد سے ڈاکٹر ایسٹر پارک ، ڈاکٹر شاہین اور دیگر نمائندوں نے وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں وزیراعلیٰ سے ملاقات کی ۔ وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے میڈیا افتخار درانی ، سیکرٹری سیاحت ، ڈائریکٹر آرکائیوز اور دیگر متعلقہ حکام بھی اس موقع پر موجود تھے ۔اجلاس میں گندھارا تہذیب ، فاسٹنگ بدھا سمیت صوبے میں مذہبی و ثقافتی سیاحت کی استعداد اور دیگر اُمور پر تبادلہ خیال کیا گیا ۔ وفد نے وزیراعلیٰ کو آگاہ کیا کہ وہ ٹیکسلا میں فاسٹنگ بدھا کی ایک خصوصی نمائش کرنا چاہتے ہیں جس کیلئے صوبائی حکومت کے تعاون کی ضرورت ہے ۔وزیراعلیٰ نے مجوزہ نمائش کیلئے ہر ممکن سہولت فراہم کرنے کا یقین دلایا ۔ علاوہ ازیں وفد نے سوات میں مذہبی و ثقافتی سیاحت کے فروغ کیلئے ایک منصوبے کی بھی پیشکش کی اور انکشاف کیا کہ اس سلسلے میں سوات پرکشش مقام ہے ۔ وزیراعلیٰ نے اس تجویز سے بھی اُصولی اتفاق کیا اور کہا کہ متعلقہ صوبائی حکام کے ساتھ بیٹھ کر طریقہ کار وضع کرلیں اور ایک مکمل تجویز بنائیں ۔ اُنہوںنے گندھارا آرٹ اینڈ کلچر ایسوسی ایشن کے ساتھ رابطے اور تعاون کیلئے سیکرٹری سپورٹس و آرکیالوجی کو فوکل پرسن نامز د کیا اور کہاکہ سیاحت اور ثقافت کے فروغ کیلئے ہر ممکن سہولت فراہم کریں گے ۔


شیئر کریں: