Chitral Times

Feb 2, 2023

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

پشاور شہر میں جعلی پاوڈر ملک کا انکشاف، مائیں محتاط رہیں فیڈر میں تازہ دودھ استعمال کریں

شیئر کریں:

پشاور(چترال ٹائمزرپورٹ) خیبرپختونخوا فوڈ سیفٹی اینڈ حلال فوڈ اتھارٹی نے مارکیٹ سروے کے دوران جعلی پاوڈر دودھ دریافت کرلیا۔ اتھارٹی کے عملے کا کہنا ہے کہ جعلی پاوڈر دودھ مشہور ملٹی نیشنل برانڈ (نیڈو) کی نقل ہے جو شیرخوار بچوں کیلئے مضر صحت ہے۔ ڈائریکٹر جنرل ریاض خان محسود کا کہنا ہے کہ عوام کی صحت کیساتھ کھیلنے والے ملک و قوم کے دشمن ہیں اور خوراک گردی کے منصوبے بنانے والے بے ضمیر افراد کا پیچھا کررہے ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ اشیائے خوردونوش کے جعلی کاروبار سے وابستہ افراد کا ٹولہ سرجوڑ کر بیٹھ گیا ہے کیونکہ فوڈ اتھارٹی نے ان کے گرد گھیرا تنگ کیا ہے۔ ریاض خان محسود کا کہنا ہے کہ عوام محتاط رہیں متعلقہ کمپنی کے حکام سے بھی بات ہوئی ہے جب تک فوڈ اتھارٹی فیلڈ میں ہے عوام کو صاف اور صحت بخش خوراک کی فراہمی یقینی بنائی گی۔ ان کایہ بھی کہنا ہے کہ فوڈ اتھارٹی کا عملہ چوبیس گھنٹے فیلڈ میں رہتا ہے اور ہفتہ اتوار کو بھی کاروائیاں جاری رہتی ہیں، آج کل جعلی مشروبات، ملاوٹی مصالحوں اور دیگر اشیائے خوردونوش پر خصوصی توجہ مرکوز ہے۔ پاوڈ ملک کے جعلی پروڈکٹ پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ڈائریکٹر ٹیکنیکل ڈاکٹرسید عبدالستار شاہ کا کہنا ہے کہ بچوں کو دودھ پلانے والی مائیں محتاط رہیں اور دو نمبر پاوڈر دودھ بچوں کو فیڈر میں نہ پلائیں، ان کا مزید کہنا تھا کہ ماں کا اپنا دودھ ہی بچوں کی صحت کا ضامن ہوتا ہے اور اس کا کوئی نعم البدل نہیں ہوسکتا۔ انہوں نے انکشاف کیا کہ پشاور میں جعلی روزگار سے وابستہ گروہ کی خطرناک بات یہ کہ صرف ظاہری پیکنگ کاپی نہیں ہوتی بلکہ اسکے اندر کچھ بھی ملاکر پیک کرکے عوام کو کھلادیتے ہیں جو کہ انتہائی خطرناک ہے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ پشاور میں کسی بھی انڈستری کے پاس نجی سطح پر ایسی کوئی لیبارٹری نہیں جو ایسے پراڈکٹ میں صحیح کیمیائی اجزا کے مقدار و معیار کو برقرار رکھ سکے۔ جعلی پاوڈر دودھ کی نشاندہی پر اسسٹنٹ ڈائریکٹر فوڈ سیفٹی انیلا محبوب کی سربراہی میں فوڈ سیفٹی افسران احمد علی شاہ اور واصف شاہ پر مشتمل ٹیم تشکیل دی گئی جنہوں نے پیپل منڈی پشاور میں واقع ہول سیل و پرچون دوکانداروں سے ایک ہی روز میں دو سو سے زائد کاٹن جعلی پاوڈر ملک برآمد کیا۔ دوکانداروں کو تنبیہ کیاہے کہ سپائیری کی نشاندہی کرے ورنہ ان کیخلاف قانونی چارہ جوئی ہوگی۔ انیلا محبوب کا کہنا ہے کہ ان کی ٹیم معمول میں دوکانداروں کیساتھ پڑے اور نئے آنیوالے سٹاک کے معیار کی چیکنگ کرتی رہتی ہے جس کے دوران جعلی پاوڈر دودھ کی دستیابی کا انکشاف ہوا۔ ڈائریکٹر آپریشنز خالد خان خٹک نے ہدایات جاری کی ہیں پشاور کے تمام مارکیٹوں میں جعلی پراڈکٹ کو اٹھا لیا جائے تاکہ عوام اور ان کے بچوں کی صحت خطرے میں نہ پڑے۔ مزید برآں متعلقہ کمپنی کے حکام سے بات ہوئی ہے تاکہ وہ متعلقہ ڈیلرز کو بھی متنبہ کرکے چوکنہ رہنے کی ہدایت کرے۔ ان کا مزید کہنا ہے کہ تمام ڈویژنل اضلاع میں بلا تعطیل کاروائیاں جاری ہیں جس سے جعلسازوں کے گرد گیرہ تنگ کردیا گیا ہے۔
nido fake

nido fake2


شیئر کریں: