Chitral Times

Nov 16, 2018

ﺗﻔﺼﻴﻼﺕ

  • میں اور الواعظ …….ایک مکالماتی سلسلہ……. (قسط سوم)….کریمی

    November 8, 2018 at 6:12 pm

    اس مکالماتی سلسلے کی جس طرح پذیرائی ہو رہی ہے۔ میں اس محبت کے لیے آپ تمام کا سپاس گزار ہوں۔ گزشتہ دونوں اقساط پر آپ کی رائے سر آنکھوں پر۔ خصوصاً آپ کا یہ کہنا کہ کیا وجہ ہے کہ ایک ایسے پاک نبی صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ جس کو ربِ کائنات نے رحمت اللعالمین بنا کر بھیجا اس کی امت آج منزل سے کوسوں دور کیوں ہے۔ کوئی تو وجہ ہوگی۔ ورنہ یہ بات تو عیاں ہے کہ مغرب نے اسی نبی پاکؐ کی سیرت کو اپنا اوڑھنا بچھونا بنایا اور آج چاند تاروں کو تسخیر کر رہا ہے جبکہ ہم۔۔۔۔۔۔ نہ راہ کا تعین نہ منزل کا پتہ۔ آخر ہو کیا گیا ہے ہمیں؟

    میں نے جب یہی سوالات اپنے اندر کے واعظ کے گوش گزار کیے تو وہ مجھ سے کچھ یوں مخاطب ہوا۔

    ’’آپ کا درد بجا، آپ کا شکوہ بھی ٹھیک اور آپ کے سولات بھی حسبِ حال۔ لیکن۔۔۔۔۔۔۔‘‘ میں نے فوراً ان کی بات کاٹ دی۔ ’’لیکن کیا؟‘‘ کہنے لگے ’’کیا عمل کرسکتے ہو؟‘‘ میں نے کہا ’’کوئی شک؟‘‘ کہنے لگے ’’اپنے اندر صبر اور برداشت پیدا کرو۔ ان سارے سوالات کا جواب آپ کو سیرتِ رسول صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ میں ملے گا ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺣﻞ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ ﮐﯽ ﺣﯿﺎﺕ ﻃﯿﺒﮧ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ۔‘‘

    ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﺍﯾﮏ ﺻﺤﺎﺑﯽ رضی اللہ تعالیٰ عنہ ﻧﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ ﺳﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯿﺎ:

    ’’ﯾﺎﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ ﺁﭖ ﻣﺠﮭﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﻮ ﭘﺮﺳﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﺎﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﻓﺎﺭﻣﻮﻟﮧ ﺑﺘﺎﺩﯾﺠﺌﮯ۔‘‘

    ﺁﭖ صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ:

    ’’ﻏﺼﮧ ﻧﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻭ۔‘‘

    ﺁﭖ صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ:

    ’’دﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﻦ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﻟﻮﮒ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻭﻝ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺟﻮ ﺟﻠﺪﯼ ﻏﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺟﻠﺪ ﺍﺻﻞ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﭘﺲ ﺁ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔

    ﺩﻭﻡ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺟﻮ ﺩﯾﺮ ﺳﮯ ﻏﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺟﻠﺪ ﺍﺻﻞ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﭘﺲ ﺁ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ. ﺍﻭﺭ ﺳﻮﻡ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺟﻮ ﺩﯾﺮ ﺳﮯ ﻏﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﺮ ﺳﮯ ﺍﺻﻞ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﻟﻮﭨﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔‘‘

    آپ صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ:

    ’’ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﻟﻮﮒ ﮨﯿﮟ ﺟﺒﮑﮧ ﺑﺪﺗﺮﯾﻦ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﺍﻧﺴﺎﻥ ہیں۔‘‘

    ﻏﺼﮧ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ نوے ﻓﯿﺼﺪ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺻﺮﻑ ﻏﺼﮯ ﭘﺮ ﻗﺎﺑﻮ ﭘﺎﻟﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ نوے ﻓﯿﺼﺪ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﺧﺘﻢ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔

    ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﯼ ﺍﯾﻨﭩﯽ ﺑﺎﺋﯿﻮﭨﮏ ﺍﻭﺭ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﺎ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﻣﻠﭩﯽ ﻭﭨﺎﻣﻦ ﮨﮯ۔

    ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺻﺮﻑ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮐﯽ ﻗﻮﺕ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮ ﻟﯿﮟ ﺗﻮ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﮐﺴﯽﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺎﻗﺖ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﯽ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺍﮐﺜﺮ ﺍﻭﻗﺎﺕ ﺍﯾﮏ ﮔﺎﻟﯽ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖﮐﺮ ﮐﮯ ﺳﯿﻨﮑﮍﻭﮞ ﮔﺎﻟﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﭻ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺑﺮﯼ ﻧﻈﺮ ﮐﻮ ﺍﮔﻨﻮﺭ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺩﻧﯿﺎﺑﮭﺮ ﮐﯽ ﻏﻠﯿﻆ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔

    شعور ویب سائٹ کے مطابق ﺻﺪﺭ ﺍﯾﻮﺏ ﺧﺎﻥ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ کے ﭘﮩﻠﮯ ﻣﻠﭩﺮﯼ ﮈﮐﭩﯿﭩﺮ ﺗﮭﮯ، ﻭﮦ ﺭﻭﺯﺍﻧﮧ ﺳﮕﺮﯾﭧ کے ﺩﻭ ﺑﮍﮮ ﭘﯿﮑﭧ ﭘﯿﺘﮯ ﺗﮭﮯ، ﺭﻭﺯ ﺻﺒﺢ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺑﭩﻠﺮ ﺳﮕﺮﯾﭧ ﮐﮯ ﺩﻭ ﭘﯿﮑﭧ ﭨﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮫ ﮐﺮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﯿﮉ ﺭﻭﻡ ﻣﯿﮟ ﺁ ﺟﺎﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﺻﺪﺭ ﺍﯾﻮﺏ ﺳﮕﺮﯾﭧ ﺳﻠﮕﺎ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺻﺒﺢ ﮐﺎ ﺁﻏﺎﺯ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔

    ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻣﺸﺮﻗﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﮮ ﭘﺮ ﺗﮭﮯ ﻭﮨﺎﮞ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺑﻨﮕﺎﻟﯽ ﺑﭩﻠﺮ ﺍﻧﮩﯿﮟ سﮕﺮﯾﭧ ﺩﯾﻨﺎ ﺑﮭﻮﻝ ﮔﯿﺎ، ﺟﻨﺮﻝ ﺍﯾﻮﺏ ﺧﺎﻥ ﮐﻮ ﺷﺪﯾﺪ ﻏﺼﮧ ﺁﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﭩﻠﺮ ﮐﻮ ﮔﺎﻟﯿﺎﮞ ﺩﯾﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﮟ۔

    ﺟﺐ ﺍﯾﻮﺏ ﺧﺎﻥ ﮔﺎﻟﯿﺎﮞ ﺩﮮ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺗﮭﮏ ﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﺑﭩﻠﺮ ﻧﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮐﺮ ﮐﮯ ﮐﮩﺎ: ’’ﺟﺲ ﮐﻤﺎﻧﮉﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﯽ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﻧﮧ ﮨﻮ ﻭﮦ ﻓﻮﺝ ﮐﻮ ﮐﯿﺎ ﭼﻼﺋﮯ ﮔﺎ، ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽﻓﻮﺝ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﻠﮏ ﮐﺎ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﺧﺮﺍﺏ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﮮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔‘‘

    ﺑﭩﻠﺮ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺍﯾﻮﺏ ﺧﺎﻥ ﮐﮯ ﺩﻝ ﭘﺮ ﻟﮕﯽ، ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺳﯽ ﻭﻗﺖ ﺳﮕﺮﯾﭧ ﺗﺮﮎ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺑﺎﻗﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺳﮕﺮﯾﭧ ﮐﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﻧﮧ ﻟﮕﺎﯾﺎ۔

    ﺭﺳﺘﻢ ﺯﻣﺎﻥ ﮔﺎﻣﺎ ﭘﮩﻠﻮﺍﻥ، ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﻧﮯ ﺁﺝ ﺗﮏ ﺍﺱ ﺟﯿﺴﺎ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﭘﮩﻠﻮﺍﻥ ﭘﯿﺪﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ‘ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﺍﯾﮏ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﺳﮯ ﺩوﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﮔﺎﻣﺎ ﭘﮩﻠﻮﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺮ ﻣﯿﮟ ﻭﺯﻥ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺑﺎﭦ ﻣﺎﺭ ﺩﯾﺎ۔

    ﮔﺎﻣﮯ ﮐﮯ ﺳﺮ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﮐﮯ ﻓﻮﺍﺭا ﭘﮭﻮﭦ ﭘﮍا‘ ﮔﺎﻣﮯ ﻧﮯ ﺳﺮ ﭘﺮ ﻣﻔﻠﺮ ﻟﭙﯿﭩﺎ ﺍﻭﺭ ﭼﭗ
    ﭼﺎﭖ ﮔﮭﺮ ﻟﻮﭦ ﮔﯿﺎ۔

    ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ:

    ’’ﭘﮩﻠﻮﺍﻥ ﺻﺎﺣﺐ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺍﺗﻨﯽ ﮐﻤﺰﻭﺭﯼ ﮐﯽ ﺗﻮﻗﻊ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ۔ ﺁﭖ ﺩوﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺗﮭﭙﮍ ﻣﺎﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺟﺎﻥ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺗﯽ۔‘‘

    ﮔﺎﻣﮯ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ:

    ’’ﻣﺠﮭﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺎﻗﺖ ﻧﮯ ﻧﮩﯿﮟ بلکہ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﻧﮯ ﭘﮩﻠﻮﺍﻥ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﺭﺳﺘﻢ ﺯﻣﺎﻥ ﺭﮨﻮﮞ ﮔﺎ ﺟﺐ ﺗﮏ ﻣﯿﺮﯼ ﻗﻮﺕ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﻣﯿﺮﺍ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﮮ ﮔﯽ۔‘‘

    ﻗﻮﺕ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﻣﯿﮟ ﭼﯿﻦ ﮐﮯ ﺑﺎﻧﯽ ﭼﯿﺌﺮﻣﯿﻦ ﻣﺎﺅﺯﮮ ﺗﻨﮓ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭﺭ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﻟﯿﮉﺭﺯ ﺳﮯ ﺁﮔﮯ ﺗﮭﮯ‘ ﻭﮦ پچھتر ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﺳﺮﺩﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﯾﺎﺋﮯ ﺷﻨﮕﮭﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺋﻤﻨﮓ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﺎ ﺩﺭﺟﮧ ﺣﺮﺍﺭﺕ ﻣﻨﻔﯽ ﺩﺱ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔

    ﻗﻮﺕ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﻐﻞ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻇﮩﯿﺮ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﺑﺎﺑﺮ ﺑﮭﯽ ﺳﻨﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﮈﮬﺎﺋﯽ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯿﺎﮞ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ ﮨﯿﮟ۔

    ﺍﻥ ﮐﯽ ﭘﮩﻠﯽ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺍﯾﮏ ﺍﮊﺩﮬﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮍﺍﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﯾﮏ ﺟﻨﮕﻞ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﺲ ﻓﭧ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﮊﺩﮬﮯ ﻧﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺟﮑﮍ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺑﺮ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﺎﻥ ﺑﭽﺎﻧﮯ کے لیے ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﺎﺭﮦ ﮔﮭﻨﭩﮯ اکیلے ﻟﮍﻧﺎ ﭘﮍﺍ۔

    ﺍﻥ ﮐﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺧﺎﺭﺵ ﺗﮭﯽ۔

    ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﺧﺎﺭﺵ ﮐﺎ ﻣﺮﺽ ﻻﺣﻖ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ، ﺧﺎﺭﺵ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﺷﺪﯾﺪ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺟﺴﻢ
    ﭘﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﭙﮍﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﮩﻦ ﺳﮑﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔

    ﺑﺎﺑﺮ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﭘﮭﯿﻠﯽ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺩﺷﻤﻦ ﺷﺒﺎﻧﯽ ﺧﺎﻥ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻋﯿﺎﺩﺕ کے لیے ﺁ ﮔﯿﺎ۔

    ﯾﮧ ﺑﺎﺑﺮ کے لیے ﮈﻭﺏ ﻣﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﻘﺎﻡ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ کی ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﺷﻤﻦ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺑﺎﺑﺮ ﻧﮯ ﻮﺭﺍً ﭘﻮﺭﺍ ﺷﺎﮨﯽ ﻟﺒﺎﺱ ﭘﮩﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻦ ﭨﮭﻦ ﮐﺮ ﺷﺒﺎﻧﯽ ﺧﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﯿﺎ‘ ﻭﮦ ﺁﺩﮬﺎ ﺩﻥ ﺷﺒﺎﻧﯽ ﺧﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺭﮨﮯ‘ ﭘﻮﺭﮮ ﺟﺴﻢ ﭘﺮ ﺷﺪﯾﺪ ﺧﺎﺭﺵ ﮨﻮﺋﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺑﺎﺑﺮ ﻧﮯ ﺧﺎﺭﺵ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ۔

    ﺑﺎﺑﺮ ﺍﻥ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻭﺍﻗﻌﺎﺕ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺩﻭ ﺑﮍﯼ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯿﺎﮞ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺁﺩﮬﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﻓﺘﺢ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺁﺩﮬﯽ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﮐﮩﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔

    ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ کامیاب لوگوں ﮐﺎ ﺍﺻﻞ ﺣﺴﻦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻗﻮﺕ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟﮐﻮﺋﯽ ﺷﺎﺭﭦ ﭨﻤﭙﺮﮈ، ﮐﻮﺋﯽ ﻏﺼﯿﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﻠﺪ ﺑﺎﺯ ﺷﺨﺺ ﺗﺮﻗﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ۔

    ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ وہی ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﻗﻮﺕ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺑﺪﻗﺴﻤﺘﯽ ﺳﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻠﮏ، ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﻗﻮﺕ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﯽ ﺁﺗﯽ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔

    میرے اندر کے واعظ کی آخری نصحیت یقیناً پلے باندھنے کی تھی۔ کہنے لگے:

    ’’ﺁﭖ ﮐﻮ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﻏﺼﮧ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ صرف نام اور گفتار کے عاشقِ رسول بننے کی بجائے ﻓﻮﺭﺍً ﺍﭘﻨﮯ ﺫﮨﻦ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺭﺳﻮﻝ صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ ﮐﮯ ﯾﮧ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻟﮯ ﺁﺋﯿﮯ اور کردار کے عاشقِ رسول بننے کی کوشش کریں۔ ﺁﭖ صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ ’’ﻏﺼﮧ ﻧﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻭ۔‘‘

    اس مکالمے کے بعد میرے ہاتھ بے اختیار دعا کے لیے اٹھے اور زبان پر یہ جملہ آیا ’’پروردگار ہمیں اپنے حبیب صَلَّی اللَّهُ عَلَیْہِ وَاٰلِه وَسَلَّمَ کی سیرت کے مطابق زندگی گزارنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین!‘‘

    یکے از تصنیفاتِ کریمی

  • error: Content is protected !!